ISA KHEL DAUR TA NAI – PART 5

عیسےا خیل دور تے نئی.قسط–43
اے سی امان اللہ اور اس دور کے تمام اے سی مالک کل تھے…..تھانے ڈاریکٹ ان کے انڈر تھے….ڈی ایس پی کی Annual Confidential Report……جسکو مختر الفاظ میں A.C.R کہتے ھیں وہ اے سی صاحب لکھتے تھے…..بڑے بڑے سماجی .پھنے خان ….اور بڑی مچھلیاں انکی ملا قات کو ترستی تھی……….اور آج بھی ترستی ھیں….چند سال میں انہیں ڈپٹی کمشنر بن جانا تھا……دفتر ٹائم میں……اسکی جلوہ گری دیکھ کے …….یہ نہیں لگتا تھا….. ……کیا یہی بندہ ……..کل.شام …کو….مجھے گھر سے اٹھانے آیا تھا…. تو ایک بد حال چارپائی…….پر سیدھا لیٹ گیا……سرھانہ نہیں تھا……تو اپنے دونوں بازو اپنے سر کے نیچے رکھ لئے…..اور گھنٹہ بھر گپ لگاتا رھا…….او ر اسی بندے کو میں کھگلانوالہ……………بلا مقصد لے کر …………ضیا کے پاس پہنچ گیا………………….اور ایک دفعہ…….میں نے اسے کہا کہ کیا کسی غریب…..اور بہت اچھے شاعر کو یہ اعزاز دے سکتے ھیں……کہ اس کے دروازے……..پر ………..ڈب ڈب. .. ..nock at کریں اور جب وہ دروازے…..کھولے….. تو سا منے تحصیل عیسےا خیل کا اسسٹنٹ کمشنر کھڑا ھو……….اور پھر ھم اگلے گھنٹے ممتاز گھلو……..کے دروازے پر………کھڑے تھے……. ممتاز گھلو پچھلے دنوں بھی اسی بات کو یاد کر رھا تھا…………
بس سارا مسلہ یہ تھا…….اس کی کیمسٹری کہیں نہ کہیں سے………میرے ساتھ……ٹچ…….کرتی تھی………یا پھر اللہ جانتا ھے…کہ اسکے اندر کیا چل رھا تھا………………………………….اس نے ایک بہت ھی نامی گرامی….سیاسی کے متعلق مجھے بتایا تھا……کہ وہ اس سیاسی کو ایک منٹ بھی برداشت نہیں کر سکتا تھا…………..اگر میں اس سیاسی کا نام لوں تو
آپ حیرت زدہ رہ جائیں گے……………
بلدیاتی الیکشن……کے سلسلے میں کسان منمبر کیلئے……صلاح الدین خان نے اے سی صاحب کو فون کیا…..
غلام عباس شاہ آٹو سٹور والے……..کو ھر گز کسان منمبر نہیں بنانا…………….باقی جس کو بھی بنا دیں…………..اور صلاح الدین خان کئی مرتبہ………….. صبح کے ناشتے پر …اسے ……بلا………. چکا تھا………………………
پھر غلام عباس شاہ ماموں ضیا ء اللہ کے. …….ساتھ…… پورے عیسےا خیل میں……مجھے………..گھںنٹوں ڈھوںڈتے رھے..تھک ھار کے بیٹھ گئے………قیوم کو زمیں نگل گئی ھے ………..یا آسمان…….پھر ضیاءاللہ خان……………..نے ماتھے پہ زور سے ھاتھ مارا………..او………یار چلو ھو سکتا ھے….وہ ڈاکٹر میاں صاحب……کے پاس……….. بیٹھا ھو………. ………میں پچھلے دو گھنٹوں سے بلا مقصد. . ……ڈاکٹر میاں صاحب …..کے پاس گپیں…. ھانک رھا تھا………….کیا سہانا دور تھا جب …..ڈاکٹر…………..اتنی زیادہ حرص……..میں مبتلا نہیں تھے…….ڈاکٹر طارق اور میاں صاحب سے…….کھانے……پینے….اور ھنسی مزاق چلتے تھے……..
مجھے معلوم تھا کہ اے سی صاحب کسی صورت نہیں مانے گا……… . …وہ مجھے وھاں لے گئے اور میں نے اے سی صاحب ……کو کہہ دیا……..آس نے حسب معمول مجھے کہا……..ڈرامہ نہ کرو………آرام سے ادھر بیٹھ جاو……….بڑا آگیا ھے سیاسی……………..
میں بہت مایوس بو کر تھوڑی دیر…………وھاں بیٹھا…….اور کوٹھی کے باھر……………..ڈیڑھ دو سو بندے اور ببلی خان بھی فیصلے کے لئے ……………….شدید انتظار میں بیٹھے تھے……………انکو دیکھ کر سوچا کہ میں کس لئے ………..کس ناک سے یہاں بیٹھا ھوں………..بات تو اس نے مانی نہیں………….اسے پتہ نہیں چلا اور میں چھپ چھپا کے گھر آگیا………….باھر نکل کر میں نے ماموں اور غلام عباس شاہ کو کہا………………….میں نے تو کہہ دیا ھے..اب اسکی مرضی ھے……..
گھر سے گھنٹے ڈھیڑ گھنٹے بعد………………. پھر تحصیل………کی طرف چل دیا……..کہ چلو نتیجے کا تو پتہ کریں……..جیسے ھی واپڈا کے دفتر……سے آگے نکلا…….غلام عباس شاہ….کے ساتھ ڈھول….اور کم از کم تیس چالیس بندے………ناچتے …….. نعر ے لگاتے………شور مچاتے……سڑک پہ آرھے تھے………اس نے صلاح الدین خان کی بات ٹھکرا کر…………………
مجھ جیسے…………….عام آدمی ……کی بات مان لی تھی…حالانکہ……..میں نے……کبھی اسے اپنا دوست نہیں سمجھتا تھا…………….نا !…مجھے اپنی اوقات کا پتہ تھا
غلام عباس شاہ ..نے کہا………………یہ منمبری تمہارا کمال ھے……..اگرتم نہ ھوتے………تو سوال ھی ہیدا نہیں ھوتا…..مجھے یہ کسان ممبری…..مل سکتی……..شام کو وھی اے سی میرے گھر کی بدحال چارپائی پر لیٹا ھوا….تھا …..اور
….میرا بابا اس کو گھر بیٹھ ……..کر گالیوں کی گردان…….نکال رھا ھوتا……تھا…….کہ رات کو…………..
اسی چارپائی پر بابا……….نے سونا ھوتا تھا………..بابا میرے چھوٹے بھائی غفوری…………..کو بار بار باھر بیٹھک پر بیجھتا……………………….یار اس بیغیرت …….کا پتہ کرو وہ گیا ………یا پڑا ھے……….غفوری کہتا………..بابا.. . ….. ……… وہ………………………..پڑا ھے
اوئے یار…..یہ کوئی خاص بیغیرت آدمی ھے………………

میں نے .پندرہ ھزار روپیئے کی…….ایک……… کار خریدی……….اور اسکا ایک نام رکھا……………………….بلیلا……………..اور اے سی صاحب کے…………..دفتر کے باھر کھڑی کی اور دفتر میں اے سی صاحب……………… کو ملا اور بیٹھ گیا………….تھوڑی دیر میں انہیں کہا…….بادشاھو……………… میں نے ایک بڑی مہنگی اور نایاب کار خریدی ھے……….آپ لفٹ ھی نہیں کرا رھے……..
کار ھے کہاں……….؟ اس نے دریافت کیا…….
کمال ھے آپکے دفتر کے باھر کھڑی ھے…………اور کہاں کھڑی ھے……..وہ دفتر سے باھر نکلا………………اس نا یاب کار کی حالت………….بڑی……..پتلی تھی…………….اس نے شاید دس سیکنڈ لگا ئے ھونگے…………کہ وہ دفتر کے اندر آگیا………
….اس نے کہا کار میں……..کوئی شک نہیں ھے………..
لیکن آپ اگر اس میں دو……..بہت چھوٹی چھوٹی………….تبدیلیاں کرا دیں………….پھر تو اسکے ساتھ کی کار……………… کہیں مل ھی نہیں سکتی…………….سوال ھی پیدا نہیں ھوتا……
میں نے پوچھا کونسی تبدیلیاں……………؟
ایک تو اسکی………باڈی………..اور دوسرا اسکا………….انجن …….چینج….کرادیں….

بازار کی ٹینکی ……………پر ایک خاتون کو ملنے کے بعد……….اے سی صاحب……………کو میں نے پہلی دفعہ…………ایک پر اسرار………….خاموشی اور کچھ کچھ…………..افسردگی………….کی حالت میں دیکھا………….پھر اچانک کہا مجھے معلوم نہیں……….کہ یہ بات مجھے………….تم سے کرنی چاھیئے یا نہیں……….میں نے ……..کہا….وہ آپکی مرضی ھے………..البتہ میں ……..
آپکا بھروسہ…………کبھی نہیں توڑونگا………
باقی اگلی قسط میں…آپکا مخلص ناچیز عبدالقیوم خان.

عیسےا خیل دور تے نئی..قسط-44
اے سی صاحب….بہت شارپ اور agressive tone والا بندہ تھا…..اس کے کئی معا ملات پر اسرار رھتے تھے…مجا ل ھے کہ کبھی سیدھی بات ھی کی ھو…. ..ھم بھی چپ رھتے تھے……اور اس کے پیچھے بھی…..بہت کچھ تھا………….پورے علاقے کی نگاھوں……میں کھٹک……رھے تھے………ایک پاور گیم کا حصہ…..بنے ھوئے تھے…. ……………آپ کبھی کسی اے سی کی کار میں….ھفتہ گھوم کے دیکھیں……….پھر اپنی…….گردن….کو….ٹٹولیں….ھو سکتا ھے آپکو……اپنی ….گردن….میں….دو چار سریئے مل جائیں……. ایک دفعہ اسکی کار ….رات کو میرے گھر کی طرف….مڑی………پپو قریشی……میرے گھر والی گلی میں رھتا تھا……وہ بدنام زمانہ آدمی تھا……سارے برے اعمال اسکے اندر تھے……اللہ جنت نصیب کرے…..اس کے ساتھ پانچ اور ……..اپنے جیسے بندے تھے…. جیسے ھی کار مڑی اس نے کہا……اے سی قیوم خان کے گھر…..آرھا ھے….لیٹ جاو………سب لیٹ گئے…….میرا گھر بہت پہلے آتا تھا….اے سی کو کچھ پتہ نہ چلا………حالانکہ پپو قریشی نے اتنی……….ھوشیاری……خوامخواہ دکھائی……اے سی نے انہیں کیا کہنا تھا…..لیٹنے والوں میں میرا سگا بھائی عبداللہ بھی…….موجود تھا….جو جرائم پیشہ نہیں تھا………میں نے اس سے پوچھا………تم کیوں لیٹے تھے…..آس نے کہا اس وقت تو ھم سب پکڑے جاتے…نا……..آپکا تو ھمیں پتہ تھا …آپ نے تو اے سی کو کہنا تھا….سب کو بند کردو…………

میں نے اے سی صاحب کو کہا مجھ پر بھروسہ رکھیں…..سب کہہ دیں………………………………….کھوہ کھاتہ ……..ھو جائے گی…….بات
اس نے میری طرف….دیکھا….اور کہا…..بات کو صرف سمجھ…..ھی تم سکتے ھو…..
بات کچھ اس طرح سے ھے……….کہ vigilance کے طور پر کالج اور ھسپتال جاتا رھتا ھوں………وہ روٹین بھی ھے……………اور بہت ضروری ڈیوٹی بھی……..ھوتی ھے

میں گرلز کالج عیسےا خیل میں……..گیا……وھاں وزٹ کے بعد……….کالج کی طرف سے…………………چائے اور بسکٹ serve ایک…..فیصل آباد کی لیکچرر نے کی…… چائے پلانے کے دوران……..اسنے میرے ساتھ……گپ شپ لگائی..اور میرا bio data بھی پوچھا…..اور باتوں کے دوران اس کے چہرے پر……..عجیب قسم کی……. مسکراھٹ ……اپنائیت تھی……اور……معصومئیت تھی……………میں جب وھاں سے نکلا……تو مجھے اللہ حافظ کہا………..اور ایسا لگ ……رھا تھا………جیسے کہہ رھی ھو…….نہ جاو سر !!!!!
میں نے ھر ھفتہ دس دن بعد کالج کا وزٹ کیا…………….
لیکن اب میں اسی کو دیکھنے جاتا تھا…………
اب ………………….. .کی بار وہ پیرئڈ پر تھی…….پیرئڈ سے باھر نہیں نکلی……… . ……..حالانکہ میں کلاسوں کی صفائی………کے بہانے سے………کلاسوں میں بھی گیا…………………قیوم مجھے بتاو وہ کیوں نہیں آئی…..
اتنا…………………پتھر دل………..اور…….سخت مزاج
بندہ……… ایک..چھوٹے بچے …………..کی طرح
لگ رھا تھا……
کیا اس نے میرے ساتھ……………..فلرٹ کیا تھا…….اس نے مجھ سے……….پوچھا
یا پھر مسکرانا………………..اور اپنایئت دینا اس کی صرف عادت تھی…….
ادھر وہ اپنی روداد پیش کر رھا تھا……………….اور ادھر میں سوچ رھا تھا………….
محبت ……….ھو جاتی ………….ھے………کی نہیں جاتی..
محبت ………………….تو…….گئی ….ھے……اسکو…………..ھو

اور محبت بڑی ظالم چیز ھے………اسکا تو کچومر ھی نکال دے گی………کیونکہ………….وہ بہت نازک پوزیشن پر تھا………پوری تحصیل کا ایڈ منسٹریٹر تھا…………محبت میں…………بعض اوقات بہت نیچے جانا پڑتا ھے….
اور وہ نہیں جا سکتا تھا……
اسں نے کہا ان حالات میں اگر……..تم نہ ھوتے تو میرا کیا ……..بنتا……….تم میرے لئے ایک blessing ھو…

اس کے بعد ھر مرتبہ …………..ایک ھی ٹاپک رھتا………اور میرا صرف ایک ھی کام رہ گیا……………..ھر مرتبہ یہ ثابت کر دینا…………….کہ….وہ بھی اسکو برابر چاھتی ھے……اور وہ ھر دفعہ قائل ھو جاتا………محبت کی چاپی اور … ..امان اللہ کی جان………….ایک استاد کے ھاتھ میں آگئی..
اسکی کار ……..مجھے لیکر……………. دور دراز……….کونوں..کھدرون…………….میں جانے لگی……..صرف ایک ھی ٹاپک …………….کے لئے….سکول سے فارغ ھونے کے بعد رات گیارہ بارہ بجے تک………….مجھے جدا نہیں ھونے دیتا……تھا…………….وہ لڑکی صاف ظاھر ھے…………ایک 46/47 سال کے …………..اچھے خاصے سانولے بندے کو …………..جو شادی شدہ بھی تھا…….وہ صرف افسر سمجھ………..کر………..پرٹوکول دیتی رھی……………..پھر جیسے ھی……..اسے………….. اس کے زیادہ جھکاو کا علم ھوا……وہ بالکل ڈر گئی…………….

اور پھر امان اللہ خان کو…………شدید صدمے سے بچانے کے لئے……………..مصنوئی آکسیجن……. … . ..پر میں نے رکھا…ایک دن مجھے گھر سے کار میں لیکر………..بنوں روڈ پر درہ تنگ پہنچ گیا………..کار کو سڑک سے اتار کے…….کار کی بیک سائڈ کو پہاڈی پر اونچا کرکے ……….
انجن کو آف کر دیا…………….مجھے فرنٹ پر چھوڑ کر….خود پچھلی سیٹ پر چلا گیا….اور بس لیٹ ھی گیا…
……..کی پیڈ کام کرنا چھوڑ گیا ھے….sorry.
باقی پوسٹ بعد میں…انتہائی معزرت–مخلص نا چیز عبدالقیوم خان-

عیسےا خیل دور تے نئی.قسط 45
یہ کار درہ تنگ پولیس چوکی….سے بالکل نزدیک……کھڑی تھی…..پولیس کے ایک سپاھی کے نوٹس میں نہیں آسکی…………پولیس والے نے نزدیک آتے ھوئے….آواز ماری……..او بھائی ….یہاں..کس لئے کار کھڑی کی ھے……………کیامسلہ ھے….بڑے درشت لہجے میں آواز ماری…….اس غریب ….کو کیا پتہ تھا…….میرے اختیارات کتنے ھیں…. ایک پورا اے سی میرے رحم وکرم پر پچھلی…….سیٹ پر .. ..ختم شد حالت میں….پڑا تھا…………میں نے اسی کے لہجے میں کہا…اگو تے آ…اگو تے
پولیس والے نے میرے لہجے پر حیرت ….سے سوچا ھو گا………کوئی بدمعاش…..سمگلر ھے …….؟ آخر یہ ھے کون……خاصہ نزدیک آکر کہا……ھاں….کیوں کھڑے ھو یہاں……..میں نے پھر وھی بات…….کی…..اگو تے آ نا ذرا…
بلکل کار کی سٹیرنگ والی….سیٹ کے بالکل ساتھ آکے اندر منہ ڈال کے پوچھا….کون ھو تم….؟
میں نے کہا……پچھلی سیٹ سے رابطہ کریں….
اے سی صاحب…..خاموشی سے انجائے کر رھے تھے…..
جیسے ھی بندے نے پچھلی سیٹ کی طرف دیکھا تو اے سی نے بڑے کرخت لہجے میں.اسے کہا ….اندھے ھو؟
نہیں نہیں سر…….معزرت …..سر یقین کریں …..میں نے آپکو نہیں دیکھا….سر …….سر
کیا سر سر……بکواس بند کرو اور چائے لے آو……….جی بالکل ضرور سر…..ابھی آئی چائے…….
پولیس والا ادھر مڑا…..اے سی صاحب نے کہا….بڑی بری خبر ھے…….. میں دل میں سوچ رھا تھا……..آج وہ اسے ………………………………..
…..صحیح معنوں میں ٹکر گئی ھے….چلو یہ ٹاپک تو ختم ھو گیا……..
اللہ خیر کرے….میں نے سرگوشی کے عالم میں کہا…..
میرا ٹرانسفر ھو گیا ھے……….کل سامان پیک ھو گا .کل ھی شاید چلا جاوں….
بالکل سکتہ طاری ھو گیا……ایک بہت بڑے آدمی…..بڑے افسر سے……تعلقات……زندگی میں اتنا بڑا پاور شو……اتنا گلیمر…
کم ازکم ھر روز کی …….دو تین گھنٹے کی کار کی ڈرائیو……..بدحال چارپائی…..پر……..ایک بڑے بیوروکریٹ کو…………….باقائدہ………لٹا دینے……کی ………مشقیں………..
بڑے بڑے بدمعاشوں کو…….زمین پر لٹا دینے ……کی سہولتیں……..
میں بہت پریشان ھو گیا…………میں نے کہا مزاق نہ کریں…..ورنہ……….میں سچ مچ رو پڑونگا……..
ڈرامہ نہ کرو….تم….میرے لئے پریشا ن نہیں ھو سکتے…………جو shoot چلتی رھی ھے کتنے دنوں…..سے…………اسکا……..ذکر بار بار کرنے کی……..اسی کی offshoot کی وجہ سے تم پریشان ھو صرف…….
میں نے کہا اسکا مطلب کیا ھے……….مطلب یہی ھے کہ تمہیں بھی ….. ……اسکی باتیں سن سن کر اس سے محبت ھو گئی……
میں بڑا حیران ھوا اسکا فلسفہ سن کر…………
میں نے کہا واقعی…………….آپ ٹھیک کہتے ھیں…..اس بات کو لمبا کرنا فضول تھا…….
دوسرے دن اسکا سامان پیک کرنے میں درجہ چہارم کے ملازموں نے رول ادا کیا……بڑا اداسی کا ماحول تھا… …محکمہ کے کلرک لوگ خوش تھے…….. اسکی سختیوں کی وجہ سے……
حقیقی ادسی………تین بندوں پر تھی……کھانا کھانے سے اس نے معزرت کر لی…………ایک محکمانہ ریفریشمنٹ کا انتظام تھا………….
وہ کار میں بیٹھا…….بہت پریشان نظر آرھا تھا…………اس کی وجہ شاید وہ خاتون تھی……….صبح میں اپنے سکول کو ٹائم دینے کے ………..بہت دیر بعد……..یعنی سکول بند ھونے سے چند منٹ پہلے……اے سی صاحب کی طرف آتا تھا
سکول …………میری ……حقیقی مجبوری تھی……
مجھے یقین ھے……… .عیسےا خیل چھوڑنے سے پہلے اس نے کالج کا آخری چکر لگایا ھوگا….
….بہرحال سچی بات ھے……….اس کے جانے سے میں اپنے آپ کو بہت اکیلا محسوس کر رھا…….تھا
بہت ادسی کے ماحول میں اسے کار میں ھاتھ ملایا….
اور کہا کہ تین دن بعد اتوار ھے…….ھم دو چھٹیاں لیکر آپکے پاس تین دن گزارنے آئیں گے……………….آپ ھم سے پیچھا نہیں چھڑا سکتے……..
فضل الرحمن ……شفا اور میں وھاں اسکے پاس پہنچ گئے…

شاھپور میں اس کا تبادلہ ھوا تھا…..شام کو اپنی گاڑی میں سارے علاقے میں ..ھمیں ……لے……….جاتا تھا…..
گلابی رنگ جو سابقہ اے سی نے چند دن پہلے کرایا تھا……….دفتر اور کوٹھی کو……….اس نے فوری طور پر سفید رنگ کر ا دیا…….دفتر میں بہت سے نقشے لگے کھڑے تھے…..فوری اتروائے………….اور کہا کہ تحصیلیں نقشوں سے نہیں چلتیں……
پہلی رات جیسے ھی ھوئی……….اس نے جوڑے بنا دئے……. …..شفا اور فضل الرحمن کو دوسرے کمرے میں بھیج دیا…..وہ بھی آپس میں بہت خوش رھتے تھے……
رات کو اس نے مجھ سے پہلا سوال کیا………..کہ تم کس طرح کہہ سکتے ھو کی وہ بھی مجھ سے واقعی محبت کرتی تھی….
توبہ توبہ………….یا اللہ مجھ پر رحم کھا……..میں. نے. دل ھی دل میں کہا..
میں نے کہا آپ ایک دفعہ………..پھر…….. سارے حالات مجھے سنائیں……….
وہ لگ گیا اور ایسا لگا……کہ درمیان میں خود بخود وہ مانتا گیا………ھا ں واقعی اسے بھی اے سی صاحب سے محبت تھی…….
تین دن شام کو مختلف سائیڈوں کا چکر…………….اور رات کو………………love سٹوری دوبارہ الف سے ی تک….
ھم اے سے صاحب کے پاس تینوں لوگ پورا سال جاتے رھے…..
پھر وہ وقت بھی آیا……جب اس لیکچرر کا فیصل آباد میں تبادلہ ھو گیا.
پھر……………..یہ………..آیڈ ونچر اکثر زیر بحث …….رہتی تھی………………ھم میں سے کون اس خاتون کے پاس اے سی صاحب کی طرف سے…….. ………چکن کڑھائی ……اور پھل فروٹ لیکر جا سکتا ھے……..پہلے تو کوئی تیار ھی نہیں ھوتا تھا…..انہیں یہ یقین نہیں آتا تھا………..کہ اگر پکڑے گئے تو یہ ھمیں چھڑوا لے گا…..بلکہ وہ کہے…. گا. کہ میرا انکے ساتھ کوئی واسطہ نہیں…
اور وہ اگر تیار ھو جاتے تو خود کہتا نہیں یار ……………اس میں بڑا risk ھے……کیونکہ انکے درمیان ابھی….محبت کا پہلا جملہ ھی ادا نہیں ھوا تھا……ھو سکتا ھے وہ برا مان جائے……..وہ……..ھر وقت سو دلیلوں میں گھرا رھتا

پھر ادھر نوکری کے سلسلے……………اور زندگی کے مسائل زیادہ گھنمبیر ھوتے گئے…کبھی چھ ماہ بعد ایک چکر لگا……….پھر میرا مڈل سکول سے تبادلہ ھو گیا….انکا شاھپور سے تبادلہ ھو گیا……….پھر ان تعلقات پر……….دھند چھاتی گئی…………
میری آخری ملاقات…………..بہت سالوں بعد لاھور سیکٹریئٹ میں ان سے ھوئی…….ایک پانچ چھ کلو میٹر انہوں نے مجھے کار پر بلا مقصد اپنے ساتھ رکھا………کاش وہ موبائیل کا دور ھوتا………….یا آج کہیں سے انکا نمبر مل سکتا
.
عیسےا خیل کا ایک ٹاوں کمیٹی کا ملا زم نصراللہ مراسی یہ کہتا ھے……..وہ امان اللہ کی کوٹھی پر کھانا بناتا تھا…….اور کئی مرتبہ وہ نصراللہ امان اللہ خان کے ساتھ انکے لاھور والے ………………….. گھر میں بھی جاتا تھا وہ بتاتاھے

کہ آج سے چند برس پہلے………..وہ لاھور انکے گھر گیا

تو امان اللہ خان کی بیوی نے اسے بتایا…..کہ ایک نرس کے ساتھ شادی کرکے……وہ………امریکہ چلا گیا ھے کافی عرصہ پہلے…………………آج اس قصے کو 28 سال ھو چکے ھیں..

کبھی کبھار وہ بہت یاد آتاھے………….اور………یہ offshoot زندگی کے بے شمار سالوں سے چل رھی ھے…
اللہ حافظ…………مخلص ناچیز عبدالقیوم خان-

عیسےا خیل دور تے نئی…قسط–46
عیسےا خیل ھائی سکول میں … .جب میں سرگودھا گورنمنٹ کالج اور……….پھر سینٹرل کالج لاھو ر کالج سے بی ایڈ کرنے…….کچھ بھٹو کی سپاہ دانش……….کی نوکری…..اور پھر ……کمرمشانی سے ھوتے ھوئے……..عیسےا خیل ھائی سکول میں ….آیا …….اور…..رچ بس گیا………تو میری کل کائینات سائینس کا کمرہ تھا….طلبا تھے………..موسیقی تھی…… ….کچھ بہت دلچسپ لطیفے تھے…..مخصوس قسم کی……..ٹیبل ٹاک تھی……

سوشل لائف بالکل زیرو………. شادی …غمی …..خوشی…بہت محدود…..
سکول کے اندر……اچھے اور لائق طلبا……فزکس….کیمسٹری….میتھ….جیومیٹری…..اور بیالوجی……… … اور بہت تھوڑے سے لوگ زندگی میں ……………اور کچھ رشتے دار…
بس میری شخصیئت کا سارا display طلبا کے سامنے تھا………….زیادہ پڑھنے والے لڑکے ھمیشہ…..زیادہ نمایاں رھتے ھیں…..شیخ محمود سے ایک لڑکا بہت ھی…..چھوٹے قد کا……بہت ھی نفیس…….روشن ………اور کچھ کہتی …..کچھ……..بولتی آنکھوں… والا لڑکا…..ظفر بھی بالکل … ………اگلی سیٹوں میں ….ایک سیٹ پر ھمیشہ……….بیٹھنے والا……….ظفر………توجہ طلب نظروں. ..سے دیکھتا رھتا…
وقت تیزی سے گزرتا رھا……بے شمار لڑکے …..آتے جاتے رھے……..میرا بھی کئی سکولوں میں تبادلہ ھوتا رھا………عیسےا خیل…….سے تبی سر…… . ..تبی سر سے کھلانولہ……..کھلانوالہ سے… ..کلور شریف…….کلور شریف سے سلطان خیل………..زندگی میں بے شمار تبدیلیاں آتی گئیں….
بہت سالوں بعد …..پتہ چلا………… .ظفر…….نے کمال کر دی……وہ ڈاکٹر بن گیا…..ھے…..بڑی خوشی ھوئی

زمانے کا سبق تو یہی رھا…..خوش قسمت ھوتے ھیں وہ استاد…….جنکے شاگردوں کی کامیابیاں………استاد کے حصے میں بھی….آتی ھیں…………اور وہ شاگرد بھی بڑے نصیبوں والے…….ھوتے ھیں…….جو بڑے عہدوں پر پہنچ کر استادوں کی بڑی عزت کرتے ھیں…..اور جان نچھاور کرتے ھیں………………………….
ورنہ تو وہ بد نصیب اولادیں بھی ……….دیکھنے میں آتی ھیں جو اپنے ماں باپ……..کو ساری زندگی زلیل کرتے ھیں……اور انکے ساتھ انتہائی بدتمیزی سے پیش آتی ھیں….

2008 میں اچانک ظفر کمال بطور ایم ایس..تحصیل ھیڈ کواٹر ھسپتال عیسےاخیل میں……تبادلہ ھوا……
میں یقین کے ساتھ………..نہیں جانتا تھا کہ اب وہ میرے ساتھ کیسا برتاو کریگا………صاف ظاھر اب وہ ایک بڑے عہدے پر تعینات تھا….. …میں سلطان خیل ھائی سکول میں ھیڈ ماسٹر تھا……….
مجھے گھر سے فون ھوا……..چچا عبدالروف کی طبیعت بہت ھی تشویش ناک حد تک خراب ھے……آپ فوری طور واپس …………آ کر عیسےا خیل ھسپتال کے کسی ڈاکٹر سے رابطہ…. …..کریں………اسے بہت جلدی اپنے ساتھ لائیں

میں فوری طور پر وھاں سے روانہ ھو گیا…..لیکن پھر بھی…………

مجھے آتے آتے گھنٹہ لگ گیا……….میں ھسپتال سیدھا ظفر کمال کے سامنے جا بیٹھا ……….سارا قصہ اسے سنایا……مجھے اس نے کہا……سر EDO ھیلتھ کا وزٹ ھے…..وہ آکے گزر جائے تو میں فوری آپکے ساتھ جاوںگا………..
میں نے سو بار کہا ھم صرف پانچ منٹوں میں واپس آجائیں……..گے……لیکن اس نے توجہ نہیں دی…ایک ھی بات کہتا رھا….Edo ھیلتھ کے جانے کے بعد جائیں………….گے

پورا گھنٹہ گزر گیا…..گھر سے ھر دس پندرہ منٹ بعد گھر والے پوچھتے………..کیآ آ رھے ھو…. …….نہیں …ڈاکڑ نہیں مان رھا……
وقت بڑی تیزی سے گزر تا گیا………. اسکا جواب ایک ھی رھا …..

مجھ پر …بے بسی …..اور بیچارگی چھا رھی تھی….میں نے ساری زندگی ….اپنے آپ کو اسقدر بے بس کبھی نہیں ….دیکھا تھا…..میرے سامنے بیٹھا شخص میرا ھی شاگرد تھا…

گھر سے انتہائی پریشان کن فون آرھے تھے…..اور میں مکمل طور پر ……

بے بسی کی تصویر بنے اسکے سامنے……بار بار اسکی منت کر رھا تھا……..
مجھے پورا یقین ھو چلا تھا….چچا مر جائے گا….یہ نہیں جائیگا……..اور پھر …….
……………………………اتنے میں گھر سے رونے کی آوازیں آنے لگیں……………………..عبدالروف چچا بالکل بے ھوش ھو چکا تھا……….اور وہ میرا father in law تھا ……اسکی ایک ھی اولاد تھی………….اور وہ میری بیوی تھی……..جو رو رھی تھی………میں نے دوبارہ صورت حال کی نزاکت اس کے سامنے ہیش کی ……اسے کہا بندہ مرنے کے قریب پہنچ گیا ھے….. صرف پانچ منٹوں کی بات ھے…..

وہ نہیں مانا……..پیچھے زور دار چیخنے کی آواز اآئی

اور پھر……….. عبدالروف چچا
مر گیا……..اور میں گھر واپس آگیا……………..اسکے مرنے کے بعد ڈاکٹر ظفر آگیا………

او…..ھو……ساری سر…………
میں نے دل میں کہا………………اب کیا فائیدہ اسکے آنے کا……………………………………اس نے بالکل میرے ساتھ ٹھیک کیا…………………………….اب اسکا میرے ساتھ کیا تعلق ھے…….وہ 35 سال پہلے کی بات تھی……………. جب وہ میرا شاگرد تھا……….
اب وہ ھسپتال کا ایم ایس ھے….ای ڈی او ھیلتھ اسکا کیا کر لیتا…….کچھ بھی نہیں………ایک…………ڈاکٹر کی بنیادی……ڈیوٹی اور ھوتی کیا ھے….انسان کی جان بچانے کے سوا………….
بندہ مر گیا…..ھسپتال کی صفائیاں چلتی رھیں……..

انسان کے پیٹ سے پیدا ھونے والی اولادیں….بھی…..بڑی ھو

کر انسان کے لیئے بعض اوقات فتنہ ثابت ھوتی ھیں……تو

استاد اور شاگرد کتنا طاقتور ھو سکتا ھے………….

ھاں البتہ ……نصیبوں والی اولادیں….اور بختوں والے

شاگرد بھی ھوتے ھیں………………

….چچا…کی وفات کا …ڈاکڑ کے چہرے پر غم………
…….ندامت……….اور افسوس کا کوئی تاثر میں نے نہیں………دیکھا….اس نے برف سے جما ھوا بس ایک فقرہ

کہا…..او ھو…..sorry sir …….یہ expire ھو چکا ھے
..
باقی اگلی قسط میں…مخلص……………. نا چیز عبدالقیوم خان-

عیسےا خیل دور تے نئی..قسط 47
جب آپکا والد مرض الموت کا شکار ھو…..پیچھے سے گھر والے ……رو پیٹ….رھے……….ھوں
..اور ڈاکٹر آپکا شاگرد ھو…….
اور آپکی تمام منتوں…..اور ترلوں کے با وجود…….ڈاکٹر نہ آئے………….
تو آپکا رد عمل بالکل الٹا ھو گا…….ڈاکٹر کا اپنا والد…….اسی صورت حال سے گزر رھا ھوتا…..اور ڈاکٹر کا بھائی اسکے سامنے بیٹھا ھوتا…….اسے بتا رھا ھوتا….بھائی ابو کی حالت بہت………..سیریئس ھے…….وہ……..کومے…..میں جا چکا ھے……تو ڈاکٹر اگلے منٹ….میں …..ای ڈی او کے لئے ایک مسیج چھوڑ کر……کسی دوسرے ڈاکٹر کو ذمہ داری سونپ کر…………..گھر نکل جاتا……….
استاد کا مطلب…….یعنی روحانی باپ ……….ڈاکٹر کے سامنے بیٹھ…کر…… صرف پانچ منٹوں…….کی بھیک ……کسی انسان کی زندگی بچانے کے لئے……. ڈیڑھ گھنٹے تک مانگتا رھا….اور وہ بھی اپنے سسر……..کیلئے….
ڈیڑھ گھنٹے تک ای ڈی او تو نہ آیا…….لیکن ڈاکٹر اپنے روحانی باپ …..کے سامنے ………اڑا رھا……حتی ا کہ وہ بندہ فوت ھو گیا…………
اور میرے نہائت عزیز اور پیارے دوستوں…کو یہ فکر لگ گئی….یہی تو.. ………..خاص موقع ھے……ڈاکٹر کی فوری favour کرنے کا…….
یہ واقعہ ھے 2008 کا…….اور ڈاکٹر نے وہ ٹائم بھی میری آنکھوں کے سامنے گزارہ….جب وہ ایک بچہ تھا………..پھر 2008 سے اب تک….میری اسکے ساتھ روزانہ …….اور …….ھفتے وار ….سینکڑوں ملاقاتیں…….ھزاروں فون……….صبح شام …. ھوئے ھیں…..

اور صبح کو ..ھر روز اسکا پہلا فون………….بہت early time میں …..مجھے نہ آئے تو….ایسا لگتا ھے….جیسے میری کوئی چیز گم ھو گئی ھے……..
اب مجھے …میرے…..انتہائی پیا رے اور ھمیشہ احترام کربے والے عزیز….. یہ بتائیں گے کہ وہ ایک اچھا ادمی ھے…
پہلے دن کے بعد دوسرا …تیسرا…..سوواں دن بھی…………………………..مجھے تو معلوم تھا…..کہ بے شک وہ غلطی تو اس سے ھو گئی تھی….لیکن وہ…..ھر گز لا پرواہ………بے ادب ….مغرور آدمی نہیں تھا…..
جب عطاءاللہ اور منصور ملنگی …..کا میوزک شو ھوا تھا…. تو کیا……..پانچ قسطوں تک آپکو پتہ چل سکا تھا… کہ عطاءاللہ
بھاگ جائے گا…پہلی قسط میں………………میں نے کیا تاثر دیا تھا….اور

روزانہ کی بنیاد میں کیسے اس میں تبدیلی آتی گئی….
عطاءاللہ اور منصور ملنگی کا واقعہ…1978 میں ھوا تھا….
اور اسے میں نے لکھا تھا… 2017 میں…..مجھے سب کچھ پتہ تھا لیکن……………آپ کو میں نے آخری قسط تک….hanging حالت میں رکھا……… قسط پڑھ کر آپ نہایئت بے چینی سے.سوچتے رھے……آگے کیا ھو گا….
ڈاکٹر ظفر کمال سے میری وہ سخت ……مصیبت والی ملاقات ھوئی تھی….آٹھ سال پہلے…….قسط لکھ رھا ھوں میں 2017 میں……..
کیا مجھے اس ساری حقیقت کا علم نہیں تھا…… کہ…..یہ اسکا اصل چہرہ نہیں تھا…..وہ صرف ایک انسانی غلطی تھی………………لیکن ماشاءاللہ……..بڑی تیز دوڑ لگائی……
میرے کچھ دوستوں نے……………
اپنے سسر کی تجہیز و تکفین کے بعد ….دس ……
پندرہ دنوں تک…….گھر میں سوگوار ماحول رھا….لوگ آتے جاتے رھے……….میرے……………دل میں بہت……ملال رھا….میں ساری زندگی ڈاکٹر لوگوں سے……بہت قریبی تعلقات میں رھا……
اور زندگی میں پہلی مرتبہ…..ایک اپنے ھی شاگرد ڈاکٹر ……کو مریض تک نہ لا سکا……
پھر ایک دن………..

ایک فون آیا……..سر اگر آپ محسوس نہ کریں…..تو میں انتہائی ادب کے ساتھ گزارش کرونگا…..
سر اگر آپ ….. مجھے شوکت میڈیکل پر…..کمپنی دے سکیں…..تو مجھے سر انتہائی خوشی ھوگی…سر یقین کریں……یہا ں عیسےاخیل میں ……..آپ کے سوا ایسا کوئی بندہ نظر نہیں آتا……جس کے ساتھ میں گپ شپ لگا سکوں………سر اگر اجازت دیں گے تو میں ابھی بندہ بھیجتا ھوں………
جواب فوری دینا تھا…..میں نے کہا بھیج دیں بندہ……..
تھوڑی دیر میں……ایک موٹر سائیکل والا …….آگیا…..اگلے تین منٹوں میں …..میں شوکت میڈیکل پر تھا.

پھر دوسرے دن………پھر تیسرے دن……………پھر مہینہ…………..اور پورا سال…….

گفتگو……….مزاق….. خیالات….جذبات…….زندگی کا نظریہ…….قہقہے……..ڈیلنگ……..قابلیئت……………….سب کچھ استاد قیوم کی مکمل…………….فوٹو سٹیٹ کاپی….تھی…

سر آپ ھی………..آپ .ھیں….سب …………………اس نے انتہائی
عاجزی کے ساتھ کہا……
اف میرے ……….خدا….یہ میں ……کیا دیکھ رھا ھوں……..رات کے 9 بج گئے…….اس نے کہا…….سر ھسپتال کے کواٹر ………میں چلتے ھیں……کھانا….کھائیں گے……اتنی
جلدی گھر کیا کریں گے….بندہ آپکو چھوڑ آئیگا گھر….

کھانا کھانے کے بعد …….اس نے کہا …….سر ایک اور سرپرائز……….دینا ھے آپکو…..
اس نے بیڈ کے نیچے سے …………………………………………
ھاارمونیئم نکال لیا …….
یہ کیا ……..؟؟؟
سر آپ سکول کے فنکشنوں میں کبھی کبھار گاتے تھے…مجھے بہت اچھا لگتا تھا…….ھم نے ان یادوں کو بھی….. ابھی تک اپنے ساتھ رکھا ھوا ھے……

کبھی کبھار بچے کس حد تک آپکو اپنا آئیڈیئل بنا چکے ھوتے ھیں…..اساتذہ کو یہ بات نوٹ کرنی چاھئیے….

سر میرے لئے ………….مجبور عیسےاخیلوی کے بعد……..ایک اللہ ورسول……..اور دوسرے آپ ھیں…
کل جب میری پہلی پوسٹ…46 آئی………تو ظفر کمال نے جو فون مجھے …………..کیا وہ کیا تھا؟؟
سر وہ بلا شبہ مجھ سے غلطی ھو گئی تھی…..اور اس پر بہت شرمندہ ھوں…………لیکن اللہ پاک کی قسم…….مجبور عیسےا خیلوی کے………………بعد……………… اگر کوئی ھستی ھے……تو میرے لئے صرف آپ ھیں….
..
ظفر کمال تم کتنی مرتبہ یہ بات مجھے باور کراو گے……..تمہیں تو پتہ ھے……..میں پہلے کہانی میں ایک سسپینس……..دیتا ھوں……پھر کئی ٹوئسٹ اس کہانی کے اندر آتے ھیں…..اور آخری نتیجہ بالکل کچھ اور ھوتا ھے

ظفر کمال کیا تم سوچ سکتے ھو……کہ میں تمہارے خلاف پوسٹ لکھ سکتا ھوں؟؟؟؟؟؟؟؟
نہیں……..کبھی نہیں………

تو اسطرح سے میری زندگی میں شامل ھے
جہاں بھی جاوں یہ لگتا ھے تیری محفل ھے
میرے عزیز دوستو یہ پوسٹ….بڑی لمبی چلنی تھی……..لیکن شاید مجھے اسے ادھر ھی روکنا پڑے….

میرے ایک انتہائی عزیز ……نے جسکی قابلیئت کی میں اپنے قریبی حلقوں میں مثالیں دیتا تھا…….اس کی پریشانی…………اور باتیں سنکر……..میرے…….اندر……………… ایک آئیڈئل …….تصویر……………………ٹوٹتے ٹوٹتے………………..
بس بچ گئی……
اللہ حافظ….آپکا مخلص نا چیز…… عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی.قسط48
اپنی قسط 47 جب میں نے خود دو تین مرتبہ پڑھی..تو ایک خلا سا محسوس ھوا….جو میرے مہربان دوستوں نے ………صرف …….میرا لحاظ .. .کرتے ھوئے….نہیں اٹھایا……..وہ یہی تھا….کہ ایک ڈاکٹر نے آپ کا شاگرد ھونے ……کے باوجود……اتنی بڑی …….negligence کی….اس کے ساتھ میں دوبارہ ……کیسے یک جان ھوا…….
دوستو……….
کسی کو معاف کرنا…..انتہائی مشکل ھوتا ھے…….. اور زندگی…….میں
یہ ایک بہت بڑا امتحان……ھوتا ھے………سب سے مشکل امتحان…..
میں اپنی زندگی کے پہلے دور میں…. اس حوصلے کا ……قطعی طور پر حامل نہیں تھآ…………

معاف کر دینے والے…….کیا لوگ… .ھوتے ھیں….شاید لفظ اسکا… … ……احاطہ نہیں کر سکتے….اور
میں اللہ سے دعا کرتا ھوں…….اے اللہ میں اس قابل تو نہیں ھوں……..لیکن یا رب العزت مجھے ھمیشہ معاف کرنے والوں …….میں رکھنا… …..
یہ اللہ کے نزدیک بہت پسندیدہ فعل بھی ھے……لیکن…….ھم کہاں ……..اتنے نیک…..اور …..تقوی ا رکھنے والے بندے ھیں……
عاجزی…………..اور معاف کرنا……….یہ ایسے دو سبق ھیں……..کہ مشرق و مغرب کی تما م یونیورسٹیوں…….کی ساری زندگی……..خاک چھان مارنے سے……..بھی نہیں مل سکتے……………….
بس یہ ایک معجزہ مجھ…………نا چیز سے ھو گیا…….اور میں نے اسے معاف کر دیا….

ڈاکٹر ظفر کمال……کو معاف کرنے ………کے بعد میں نے دیکھا…….تو حیران رہ گیا……کہ اسکے اندر تکبر.. .اور…. غرور کا ………………….نام و نشان ھی …کہیں………نہیں تھا……..
بس اس سے یہ غلطی ھو گئی……………بالکل اسی طرح ……..جس طرح آج بھی ھم سے بے شمار غلطیاں ھوتی ھیں……….اور قدرت بغیر…….کسی نوٹس کے…….روزانہ کی……….بنیاد پر ھمیں معاف کرتی رھتی ھے…..

چچا عبدالروف ……….تو اپنی تقدیر کے ھاتھوں دنیا سے ……….رزق سے….زندگی کی خوشیوں سے… ..اور خونی رشتوں سے………………….گیا………..یا زمین پر رھنے والے انسانوں کی……….سنگدلانہ……..کوھتائیوں سے …….گیا….یہ تو ایک ……..الگ علمی……بحث ھے…….علیحدہ debate …………ھے…..اگلی صدیاں شاید اسکا فیصلہ کر سکیں…..یا شاید … …… نہ کر سکیں….
میرے لئے تو یہ سوال ……..بالکل فرنٹ ……..پر موجود تھا……..معاف کرنا ھے…….یا نہیں…..اور معاف نہ کرنے کی صورت میں……..میں نے اسے کوئی توپ نہیں مارنی تھی……صرف تعلق توڑنا تھا………….ایک پڑھے لکھے بندے کی……………………….ناراضگی کی آخری حد………….اور کیا…………. ھو سکتی ھے……..
اور معاف کرنا……….. ….ایک بہت بڑا کارنامہ تھا……اللہ نے توفیق دی دی…………………….اور یہ بس اسی کا کرم تھا…..
کہ میں ایک………….
بہت مزیدار آدمی سے……………کٹ آف…….ھونے سے بچ گیا.

اگر ظفر اہک متکبر اور سر پھرا انسان ھوتا…..پھر مجھے اپنے اس فیصلے پر………..ضرور ملال ھوتا.

2008 کے بعد سے اب تک ھم نے استاد شاگرد کے روپ کو…………بھر پور طریقے سے انجائے کیا….بےشمار دفعہ مل کر سفر……..کئے…….کھا نے کھائے……ھنسی مزاق کئے………
محب الرحمن کے گھر………موسیقی کے بے شمار پروگرام کئے…..جس میں ھسپتال کے سارے ڈاکٹر شریک ھوتے رھے…..میں اور ظفر…………گاتے تھے…….
ڈاکٹر ظفر نے بےشمار دفعہ مجھے…..شوکت ……قطب ……ڈاکٹر ساجد …..ڈاکٹر عزیز اللہ کو چکن کڑھائیاں کھلائیں…….
میرے گھر میں……………آج سے دو مہنے پہلے…….ایک کھانے میں……..مجھے…..ڈاکٹر ظفر ……ڈاکٹر محب…….اسسٹنٹ کمشنر عیسےا خیل سعید خان………سابق ٹی ایم اور محبوب عالم نے………نے میری عزت افزائی کی اور کھانا کھایا…..میرے بیٹے کی شادی میں معروف گلوکار علی عمران اعوان نے……..اعزازی طور پر گایا……اس میں ڈاکٹر محب…..ڈاکٹر ستار……اے سی عیسےا خیل بھی تھے………..

اور اس شادی کی خوشی میں ڈاکٹر ظفر کمال نے بھی گایا…
اس پوسٹ سے دو دن پہلے میں ڈاکٹر ظفر کمال کے پاس دانت کے مسلے میں ھسپتال گیا……تو اس نے کمر مشانی کے ڈینٹل ڈاکٹر کو فون کیا………کہ میرے استاد محترم عبدالقیوم خان کو میں اپنے ڈرائیور کے ساتھ …………… کار میں بھیج رھا ھوں…….انکے دانت کا مسلہ بھی حل کریں اور انہیں پورا پروٹوکول بھی دیں………….
…….تعلق کو توڑنے …………………..کا عمل اسلامی تعلیمات میں بھی………..اور
ایک صحت مند معاشرے کے لئے بھی بہت برا ھے
ایک انسان ھونے کے ناطے……………
ڈاکٹر ظفر میں کچھ خامیاں بھی ھیں…….لیکن ایسا کون ھے ………………. جس کے اندر خامیاں نہ ھوں…
اس پوسٹ کے حوالے سب دوستوں نے بہت مناسب ریمارکس دیئے….. ملک مظہر اقبال کی جان کامسلہ تھا…….وہ ویسے ھی حق پر تھا……….عامر ھاشمی نے بہت اصولی بات کی……..حفیظ ارشد ھاشمی بہت پڑھا لکھا لڑکا ھے………اس نے ھمیشہ بہت پیار اور گہرائی سے بات کی…میں ھمیشہ سے اسے قدر کی نگاہ سے دیکھتا ھوں …لیکن پرسوں کی پوسٹ میں وہ مجھ سے تو مخاطب نہیں تھا………لیکن اسکا بیانیہ سمجھ نہیں آرھا تھا

ڈاکٹر ظفر ھاشمی کی اگر کوئی دل آزاری ھوئی ھو….تو معذرت……………کریم خان……….شاید اشرف کلیار بہت سمجدار لوگ ھیں……….عارف خان………………….سچ پر زور دیتا دکھائی دیا.
سب دوستوں کا شکریہ-آپکا مخلص نا چیز…… عبدالقیوم خان-

عیسےا خیل دور تے نئی..قسط-49
یہ 1996کا زمانہ تھا….جب میں گورنمنٹ ھائی سکول عیسےا خیل میں………………………………… کھگلانوالہ ھائی سکول سے ٹرانسفر کرا کے…..آناچاھتا تھا……
اس وقت عیسےاخیل ھائی سکول کی شہرت یہ تھی…..شرابت خان یہاں ھیڈماسٹر بن کے آیا…..تو ایک سال کے اندر ……..سکول کے سارے اسا تذہ نے اسکا سوشل بائیکاٹ …….کرکے اسکا تبادلہ کرا دیا تھا……پھر ایک اور ……..نہایئت قابل ھیڈماسٹر کمر مشانی سے غلام رسول آیا………..وہ پڑھا ئی اور ڈسپلن کے حساب سے ……………..
بہت سخت ایڈمنسٹریٹر تھا……اس نے سکول کو……………بالکل فٹ کر دیا………
ادھر سٹاف کی یہ صورت حال بن گئی تھی…… کہ بڑا آسان ………فارمولا ان کے ھاتھ آچکا تھا…….سب اکٹھے ھو جاو اور…….بائیکاٹ کر دو…..ھم اس ھیڈ ماسٹر کے ساتھ کام نہیں کر سکتے…..ھم سب کا ٹرانسفر کسی اور…….سکولوں میں کر دیا جائے……..

ایک بہت ھی قابل اور سکول کو کامیابی سے چلانے والے ھیڈماسٹر …….کے خلاف استاد لوگ اکٹھے ھو گئے…….اور کلاسوں…….کا بائیکاٹ کر دیا……….اور نیچے چٹایوں پر بیٹھ گئے……ھیڈماسٹر بالکل بے بس ھو گیا….

ببلی خان کا دور تھا……ببلی خان سکول پہنچ گیا……
سب ساتذہ ایک طرف بیٹھے تھے……ھم اسکے ساتھ قطعی طور پر……………………..کام نہیں کر سکتے

ببلی خان نے ھیڈماسٹر کو کہا……….ھیڈ ماسٹر صاحب میں ذاتی طور پر …………….جانتا ھوں کہ آپ سکول کو ………..بہت آگے لے گئے ھیں………..کیا ڈسپلن….کیا پڑھائی…… سب کچھ ……….ٹھیک …………..ھے…………لیکن……اب آپ خود بتائیں….اگر آپکا تبادلہ……یہاں سے نہ ھوا……تو ان استادوں کے ساتھ…….آپ سکول چلائیں گے کیسے…….
ھیڈماسٹر خاموش…………..پورے پچیس اساتذہ ایک سائیڈ پر تھے…….
اور یہ صرف ………………..ایک فارمولہ تھا……کہ اگر ھیڈماسٹر….بہت سختی کر رھا ھے پڑھائی کے معاملے میں…….. کسی کوہتائی پر کمپرومائیز نہیں کرتا …….اساتذہ کی مرضی پر نہیں چلتا. .. . تو بہت آسان مسلہ ھے………..آپس میں میٹنگ کرکے …..بائیکاٹ کا فیصلہ کرو…………
.اور ھیڈماسٹر …………………….فارغ !!! کسی اور سکول میں……..
غلام رسول نے ببلی سے کہا………اگر انصاف یہی کہتا ھے…..تو
بے شک جدھر مرضی ھے………ادھر ھی تبادلہ کرادیں…
نئی……….آپکی مرضی کا سکول ھو گا……اور وھاں بھی آپ ھیڈماسٹر ھی ھونگے……ببلی خان نے کہا…
بہر حال اسکی مرضی کے سکول میں اسکا تبادلہ ھو گیا…..

دوسرے دن اساتذہ میں……..جشن کا سا سماں تھا……
اب ھمارے سامنے کوئی نہیں ٹک سکتا……ایک کھڑپینچ………………………….استاد نے شان بے نیازی سے……………….فخریہ انداز میں کہا.. ان کے اندر چار پانچ استاد………….مین……. انجن….. … ..کا کا م کرتے تھے….اور باقی اساتذہ……….پچھلے ڈبوں……….کا کام کرتے تھے
انجن جو ڈائیریکشن………….دیتا………..باقی بیس اساتذہ ………..ھو بہو اس …………ڈائریکشن کے مطابق…….اس کو………………..follow کرتے…………25 بندوں کی………یہ ایک بہت کامیاب………..تنظیم تھی….
غلام رسول کے بعد……..جو بندہ سکول کا انچارج بنا…… وہ ضلع کے یونیئن صدر……جو کہ ضلع کا حقیقی ڈان تھا……………………..right hand تھا……….وہ…………پورے ضلع بلکہ پورے ڈوثزن division کا……………ایک سپر ڈان تھا…..ضلع کے سارے افسروں کی تقرریاں……وہ کراتا تھا……..کوئی افسر اسکے سامنے پر نہیں مار سکتا تھا……..وہ یوں تو میرا کلاس فیلو تھا………..
لیکن اب .. وہ …..صرف اپنی تنظیم………کے لوگوں کی سنتا تھا
میں 1992 سے کھگلانوالہ سکول میں بطور ھیڈ ماسٹر پڑا تھا………………..تین چار سال میرے پاس سوزوکی کار تھی…..پھر وہ نہ رھی………………اور موٹر سائیکل چلانا میرے بس کا روگ نہیں تھا…سکول کے ملازم مجھے سکول جانے اور آنے میں………سپورٹ کرتے تھے……..میری یہ ایک فطری خواھش تھی……..کہ گھر کے سکول میں………………….. آرام سے نوکری کروں………….لیکن مجھے اس کمانڈو گروپ کا بھی پتہ تھا………کہ وہ دو مہینوں …..کے…….اندر……. میرا……………………تختہ دھڑام کریں گے………
ادھر ایک ………..اور………غلطی بھی چل رھی تھی…….

ببلی خان اور الطاف خان کے…………….. …عیسےاخیل میں دو مخالف رھڑے بن گئے تھے……..اور میرا فطری دھڑہ ببلی خان تھا………..لیکن ببلی خان ……..کی ………………..طرف.. …….سے…….. ایک دل شکنی کی وجہ سے
میں نے احتجاج کے طور پر MPA کے الیکشن پر الطاف خان پارٹی کا کیمپ………..جائن کیا تھا…….اور الطاف خان ایک انتہائی کمزور امیدوار ثابت ھوا اور وہ الیکشن ھار گیا…

نہ صرف وہ الیکشن ھارا………………تھا………………بلکہ معلوم ھوا وہ ھر لحاظ سے………………صرف ….
ایک …..سیدھا سادہ…………….شریف………. انسان تھا………….اور سیاست………..اثر رسوخ………..پاور گیم ……سے مکمل طور پر باھر………………اور اسکا احساس جب ھوا……….تو بہت ……سا… …پانی پلوں کے نیچے سے گزر چکا تھا.

باقی اگلی قسط میں……مخلص………….نا چیز عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی.قسط–50
غلام رسول ھیڈماسٹر کے تبادلے کے بعد…………………گل حسین اعوان نے…………………………………..گورنمنٹ ھائی سکول کا چارج سنبھال لیا…………………………………………..

…وہ سکول کے……….ان…….. پانچ کھڑپینچ استادوں میں سے ……..ایک تھا……جو ملکر …….کسی بھی………………ھیڈماسٹر ……کا ……….تختہ …الٹ .سکتے…………….تھے……..یعنی غلام رسول کے خلاف بائی کاٹ کرانے……..میں خود اسکا بھی بڑا…….ھاتھ تھا…

گل حسین اعوان…….. کے …….چارج سنبھالنے کا ………….
ایک اور مطلب بھی تھا.
کہ اب اساتذہ اپنی ………….من مرضی…….کریں گے
اور گل حسین اعوان………کو بھی………… پتہ تھا……اب کوئی بائی کاٹ ……..نہیں ھوگا ……….پھر…………….ضلع کے…….. . .ڈان. . کی طرف سے…بھی
یہی اشارے چل رھے تھے………کہ گل حسین……..عیش کرو ساری زندگی تمہاری طرف……کوئی میلی آنکھ سے نہیں دیکھ سکتا…………
ضلع کا ڈان تمہارے ساتھ ھے….
ادھر میں بالکل ……..ھر سوشل لنک…….سے پاک….. کسی بھی……..طاقت ور سیاسی ………..تعلق سے مکمل طور پر……….
ناواقف…… بس صرف ایک معصوم سی خواھش…..کہ میں مستقل اور گزیٹڈ ھیڈماسٹر ھوں…….اور میرے گھر سے بالکل … . ….نزدیک ایک ھائی سکول میں یہ سیٹ خالی …….پڑی ھے……..
میں نے اپنی کوشش سے……..سرگودھا ڈاریکٹر سے مل کر اپنا تبادلہ….کرالیا…
ابھی مجھے تین دن بھی نہیں گزرے تھے کہ میرا تبادلہ کینسل ھوگیا…….یعنی میں دو دنوں کے اندر واپس کھگلانوالہ ھائی سکول میں پہنچ گیا……

میں بڑا حیران………..کہ مسلہ کیا ھے …..سیٹ خالی ھے….اور یہ سب کیوں ھوا . … کس نے کرایا…….
میرے موجودہ پی ٹی آئی کے تحصیل صدر جناب علی خان کے والد جناب مشتاق خان جو کہ سرگودھا میں……ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر تھے……….. سے تعلق تھا………انہوں نے سرگودھا ڈائریکٹر ایجوکیشن سکولز………کو تعلق کی بنیاد پر فون کیا……اور میرا تبادلہ…………
پھر ھائی سکول عیسےا خیل میں ھو گیا……….میں نے دوبارہ چارج سنبھال لیا.
ابھی چار دن نہیں گزرے تھے……کہ گل حسین اعوان….میرے پاس دفتر میں آیا……………..اور کہا قیوم بھائی……….
میں اور آ پ بھائی بھائی ھیں……ھماری کوئی دشمنی نہیں………آج ھی آپ زکیہ شاھنواز سے رابطہ کریں…ورنہ کل تک آپکا تبادلہ ھو جائے گا……میں پیشگی آپکو بتا رھا ھوں……..پھر مجھ سے ناراض نہ ھونا…….
حالانکہ تبادلہ اسکی جیب. ………میں موجود تھا……………….اس نے سکول کے ملازم کو کہا …….دو کپ دودھ پتی لے کر آو…… چائے پینے کے دوران اس نے………..مجھے اپنے بے قصور ھونے کے متعلق بتایا……….

اچھا…………دوسرے دن اس نے کسی ملازم کو میرے تبادلے کا لیٹر دے دیا…..

میں پھر کھلانوالہ میں…………. پتہ یہ چلا کہ …یہ….وھی سیاسی مخالفت تھی……….جو علاقے میں موجود تھی……الطاف خان کا ساتھ …….دینے کی سزا……….
پھر ایک تیسرا تبادلہ بھی کینسل ھوا……
اور بالا خر ھائی کورٹ کے stay order پر بات ختم ھوئی….اور پکا پکا اس سیٹ پر بیٹھ گیا….

گل حسین اعوان…… …سارے کھڑپینچ ………….اور بقایا اساتذہ ………..ششدر رہ گئے……یہ کیسے گھس آیا ھے….
تین دن کے بعد…….میں نے میٹنگ کی ………..میرے عزائیم بہت سخت تھے………مارننگ اسمبلی میں حاضری لازمی……ٹیچر ڈائیری لازمی…..ھر روز سارے سکول کے ایک شیڈول کے تحت…. .کلاس ورک کسی ایک مضمون کی کاپیاں لازمی چیک ھونگی…… اور بہت سارے سلسلے …….

یہ ھیڈماسٹر تو………وارہ…………………نہیں…….کھاتا.

مختلف آوازیں……سائیڈوں سے آنے لگیں..
ھیڈما سٹر کی زبان ……………میٹھی گولی…………… اور باپندی پوری…………..
جب بھی آرڈر بک ………………کیا جاتا…….تو وہ اسکی مختلف……….تشریحیں کرتے…….قہقہے لگاتے…………
اور اپنی………………..unity کو شو کرتے….
اور سارے پچیس اسا تذہ کا اتحاد. ….. .بہت خوفناک بات تھی……………..پہلے چھ بندے……….اس لڑی……….سے ٹوٹے… مثال کے طور پر

ضیاءاللہ خان…….مشتاق ھاشمی…….رحمت اللہ پی ٹی ماسٹر ……نصیر چستی……….ثناءاللہ اوٹی ٹیچر…….
(جو کہ کمر مشانی سے آتا تھا ) بشیر نواز استاد.. ..

اور پھر………………………

یہ ٹیچر دس ھو گئے جو اس پریشر گروپ سے الگ ھو گئے….
اس طرح سکول کے اندر ایک کاونٹر counter گروپ بھی سامنے آگیا………………………………………………………………………….جو ھیڈ ماسٹر کی سائیڈ پر تھا…..
سکول چھ مہنے تک……….کسی نہ کسی طریقے سے چل گیا……جو ایک بڑا کارنامہ تھا….. لیکن اندرونی طور پر وہ……………..پوری تیاری میں تھے
باقی اگلی قسط میں….آپکا مخلص.عبدالقیوم خان-

عیسےا خیل دور تے نئی..قسط–51
سکول کے تمام اساتذہ بڑی مصیبت میں مبتلا تھے…. ٹھیک وقت پر……….مارننگ اسمبلی میں آنا پڑتا ھے…………..ھیڈماسٹر……………روزانہ کاپیاں بھی چیک کرتا ھے……..کلاسوں……….میں………آکر ٹیسٹ……بھی لیتا ھے……….پیرئیڈ بھی مس نہیں کر سکتے…..ھر وقت راوںڈ ……پر رھتا ھے…. …..بریک ٹائم کے بعد……کبھی کبھار….غائیب ھو جاتے تھے……وہ شغل….میلے بھی……..گئے….ھیڈماسٹر نہیں……..ایک……….عذاب ….ھے……..اس کا کچھ تو کرنا پڑے……………..گا
………………………………..

پھر یونین………کے انتخاب کا ضلع بھر میں آغاز ھو گیا…..جو بندہ میرے سکول سے کھڑا ھوا…..اس کے ساتھ کچھ کچھ میری بھی……سپورٹ تھی…. مجھے یہ غلط فہمی تھی………..کہ اگر یہ بندہ عیسےا خیل اساتذہ کا صدر بن جائے تو………….ٹھیک رھے گا..
انتخابات ھو گئے………ھمارے سکول کا وہ بندہ تحصیل عیسے خیل کا ………………………..صدر بن گیا
………………………………

چند دن بعد………میں نے ایک عام سا آرڈر بک کیا……کہ………………
معزز اساتذہ کرام ……جیسا کہ آپ جانتے ھیں…کہ سا لا نہ امتحانوں میں دو مہینے …….رہ گئے ھیں…اب ذرا تعلیمی سرگرمیوں میں تیزی………اور باقائیدگی لایئں ….اس کے علاوہ …………. طلبا پر سختی………بھی کریں….
پھر……..
میں کیا دیکھتا ھوں……..کہ………..آرڈر بک……صدر صاحب ……کے ھاتھ میں ھے………اور میری طرف ……..آ رھا ھے…

نہ یہ کس قسم کا آرڈر بک……..کیا ھے آپ نے…..
اس کا مطلب…….ھے وہ پہلے نہیں پڑھا رھے تھے……..

اساتدذہ اور کھڑپینچ گروپ نے………اسے …….پمپ …..کر کے میرے اوپر پھنکا……یہ پہلی باضابطہ………………………تخریبی کاروائی تھی….
اور صدر مجھے ……….انڈر لائن……..یہ پیغام دے رھا تھا…..

اب آپ میرے ماتحت کام کریں گے…..آرڈر بک بھی صدر سے پوچھ کر………کرنا پڑے گا…
اب آپ صدر بن چکے ھیں……اور میرے ماتحت نہیں ھیں…
میں نے کہا…….

آرڈر بک مجھے آپ سے پوچھ کر کرنا پڑیگا…..
صاف ظاھر ھے………میں مجبور ھوں…….مجھے ٹیچروں…….نے ووٹ دئے ھیں…میں انکا نمائیندہ ھوں…..
انکا تحفظ ……….تو میں نے کرنا ھے…اس ے جواب دیا.

مجھے اتنا غصہ آیا کہ اسکو ابھی فارغ …………کر کے………..

میانوالی ھیڈ آفس بجھوا دوں………لیکن مجھے اگلے نتیجے کا بھی پتہ تھا…..ادھر میانوالی میں بیٹھا ھوا ڈان اسے اگلے دن……..واپس کرادیگا…………………..
دوسری بات اگر میں غصے میں آتا ھوں………تو یہی تو وہ سارے ٹیچر چاھتے تھے……..کہ ایک دفعہ کھڑاک ھو جائے……بعد میں اس میں ……….
نیا سے نیا مصالہ ڈالتے جائیں گے…….اور………….پھر آخری………………………….آئیٹم ………بائیکاٹ…..پکا پکا
میں نے اسے کہا میں تو تمہیں اہنا نمائیندہ سمجھتا ھوں…..
بہرحال …..بات آئی گئی ھو گئی………….لیکن میں الرٹ ھو گیا….
ایک زمانہ تھا…….صدر اور میں …….. بچپن ………میں ایک دوسرے کے گھروں میں کھیلتے تھے…….اور کافی گہرے دوست تھے………….
میٹرک کے بعد………………….وہ اگلی تعلیم کے لئے لکی مروت چلا گیا…….اور میں سرگودھا گورنمنٹ کالج…..اور پھر لاھور……..
لیکن وہ تعلیم سے جلدی ھٹ گیا اور کسی پرائمری سکول میں… . . …..
پی ٹی سی ٹیچر لگ گیا………….
پھر ھم دونوں میں ………..فاصلے بہت بڑھ گئے….
وہ…….ادب…….شعر ……موسیقی………..لچک……….. اور مہذب رویوں سے…….بہت دور… . ..
……………………………….
صدرارت اس کے دماغ پر چھا گئی………..اور ضلع کے ڈان کو………….وہ……..نعوذوبااللہ خدا……سمجھتا تھا…
باقی اگلی قسط میں…آپکا مخلص عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی..قسط–52
حالات………کا مطالعہ یہ بتا رھا تھا…..کہ……صدر صاحب…اور اسکی کمانڈو ٹیم…….. …بہت گہرائی سے…ھر چیز پر نگاہ رکھے ھوئے ھیں…
اور بظاھر دیکھنےمیں……..سکول نارمل طریقے سے….چل رھا تھا…
ھیڈ ماسٹر……نے….پیار سے بات کرنے ……کا…ھتھیار اپنے ھاتھ میں ……….پکا رکھ لیا……
جب مخالف…….کمانڈوز……کو……..اگر چھٹی کی ضرورت پڑتی…..تو قانون……..کے اندر…….رھتے ھوئے……..مسکراتے ھوئے ……………اپنائیت کے ساتھ چھٹی….دیتا……..لیکن تھی……….یہ ساری……………………….. ایکٹنگ

میں انکا دوسرا چہرہ بھی…………ساتھ……….. ساتھ پڑھ رھا تھا
پھر……..ایک اور ڈیویلپمنٹ…….ھوئی…..

ڈائر یکٹر ایجو کیشن سرگودھا….جلیل فاروقی صاحب ..کا عیسےا خیل ھائی سکول کا وزٹ visit ھو گیا…

انکے ساتھ…….ایک ھیڈماسٹر….صبغت اللہ خان اور..دوسرا ڈسٹرکٹ ایجو کیشن آفیسر…..نور خان صاحب موجود تھے

سکول کے مختلف پہلووں کو چیک کرنے …….کے بعد ……… جب کھانا …………کھانے کے لئے ……چار بندے میز ….کے گرد………….بیٹھے……
تو صبغت اللہ خان نے ڈائر یکٹر صاحب کی طرف دیکھتے ھوئے………..کہا….قیوم خان کے متعلق……..میری ایک شکائیت ھے….. ………کیا ؟ سب نے ھم آواز ھو کر اس سے پوچھا….
سر……..یہ سا لانہ گیموں کے ٹورنا منٹس پر طلبا……کو میانوالی ………..نہیں بھیجتا……اور نہ ھمیں مالی طور پر سپورٹ ………کرتا ھے……….اس نے میری طرف اشارہ کرتے ھوئے کہا…….

پہلے بھی طلبا نہیں بھیجتے تھے…………اور اب بھی نہیں بھیجیں گے…………..میں نے صبغت اللہ خان کی طرف دیکھتے ھوئے کہا…….لڑکوں کو الف……ب تو آتی ………نہیں. ………….میں انکی تعلیمی حالت …………..کو درست کروں……..یا انہیں الٹا……………کھیلوں پر……………….سکول کا فنڈ ……ضائع کرکے … ……. میانوالی بھیجوں
صبغت اللہ خان…………..بہت سینئر ھیڈ ماسٹر تھا…اور……………………ڈائریکٹر کے ساتھ آیا تھا………..
میرا جواب سن کر بہت حیران ھوا…..
ٹھیک کہہ رھا ھے…… ڈا ئر یکٹر نے کہا……پہلے تعلیم ……….پھر کھیلیں…..
ڈسٹرکٹ ایجو کیشن آفیسر بھی…………..میرے ساتھ مل گیا………….
قیوم خان کی بات تو ………………وزنی ھے…..
اچانک میں نے ……..
ڈائریکٹر صاحب کی طرف ………..دیکھتے ھوئے کہا..

سر ایک گزارش ھے…. سکول کی اکیڈیمک ایکٹیو ٹی کا انحصار تو مجھ پر ھے………..چتنی بھی چاھوں ……اتنی………………کرا سکتا ھوں……..لیکن سکول میں پلانٹیشن plantation کا انحصار تو سکول کی چاردیواری……………..پر ھے…..جو کہ……………..بہت چھوٹی ھے……اور اتنی ……….لمبی دیوار ھے……کہ سکول کے فروغ تعلیم فنڈ میں……………….اتنی جان نہیں ھے…..کہ یہ دیوار بن سکے

میں نے جس confidence &tone میں بات کی… ……..ڈائرریکٹر صاحب نے اپنے دونوں ساتھیوں کی طرف دیکھتے ھوئے کہا……………….
یہ بندہ …………………..دانشور ھے…..
ڈسٹرکٹ ایجو کیشن افسر نور خان نے کہا……..واقعی جی بہت……………………………ذہین ھے….
نہیں ………………..میں نے دانشور کہا ھے………ذہین چھوٹا لفظ ھے….
میں نے ابھی کھلانوالہ ھائی سکول میں جانا ھے……..آپ دونوں یہیں پر ٹھہرو گے………………میری جیپ میں صرف ……قیوم خان ھو گا…..
میں حیران………….یا اللہ………میں کہاں سے اتنا دانشور آگیا……………..اصل مسلہ یہ ھے……………
کہ تو جسے عزت دے………..اسے ذلت کون دے سکتا ھے….

پل پل کی رپورٹ………..سکول کے……………. کمانڈو ز ملازموں سے لے رھے تھے………..
سکول کے چوکیدار جس نے یہ سارا کھانا arrange کیا تھا……
کمانڈوز کے سامنے آخری فقرہ بولا……ادھر گیم ساری الٹ گئی ھے….ڈائریکٹر صاحب پر قیوم خان چھا گیا ھے………اور …………………………… ڈائرریکٹر اپنے دونوں ساتھیوں کو ادھر ھی چھوڑ کر قیوم خان کو اپنی……………..گاڑی میں بٹھا کر……..کھلانوالہ سکول میں جا رھا ھے….
صدر صاحب اور کمانڈوز کی حالت دیکھنے والی تھی…

ایک کمانڈو نےکہا…………..ابھی کہا ں جب کھلانوالہ جا کر واپس آیئں گے………….تو پتہ نہیں ………..ڈائریکٹر کی حالت ……….کیا ھو گی
باقی اگلی قسط میں . آپکا مخلص عبدالقیوم خان….

یسےا خیل دور تے نئی.قسط–53
ڈائرئکٹر ایجوکیشن سرگودھا ….جناب جلیل فاروقی صاحب کے ساتھ…..
میں کھلانوالہ ھائی سکول پہنچا…..سکول کی چھٹی ھو چکی تھی….ھیڈ ماسٹر ظفر اللہ شیخ کو بلوایا گیا………..
ڈائریکٹر صاحب سکول کی …….کچی اور بوسیدہ دیوار………….دیکھ کر….حیران رہ گیا….
یہ دیوار آپ نے بنوانی ھے….اور مجھے پتہ ھے آپ بنوا سکتے……ھیں……….سر نے مجھے مخاطب کیا
بالکل ………جی تعمیل ھو گی انشاءاللہ
بس یہی باتیں ……..کر رھے تھے…..کہ سکول کا انچارج ھیڈماسٹر……ظفر اللہ آ گیا….

ھفتے …..دس دن کے اندر….یوم والدین مناو اور اس بندے کو پہچانتے ھو…….ڈائریکٹر صاحب نے…..میری طرف اشارہ…….کیا…
جی سر……..یہ ھمارے ساتھی ھیں …..کھلانوالہ میں کافی عرصہ رھے ھیں…..
ظفر اللہ نے میری طرف دیکھتے ھوئے کہا..

فنکشن میں والدین….کو دیوار کے فنڈ کے لئے قائل کرنا اس کا کام ھے……..یہ دیوار مجھے … ….
ھر حال میں نئی اور پختہ…..چاھئیے….اگلے وزٹ……پر مجھے…………یہ دیوار نظر…..نہ آئے…اور جو فروغ تعلیم فنڈ …….سکول کا موجود ھے….وہ بھی دیوار پر استعمال کریں…………….
ظفراللہ نے……….تعمیل کرنے کا یقین دلایا….. اور وہ حیرت سے…………بار بار……….. میری……………طرف دیکھتا…………………..کہ ڈائریکٹر صاحب کا……قیوم خان………سے کیسے لنک بن گیا….
ظفر اللہ نے کھانے ……..چائے پانی کا پوچھا…….
ڈائریکٹر نے……..بات کو کوئی لفٹ نہیں …..کرائی ….وہ اٹھا اور جیپ……..کی طرف …….
چل پڑا……دس پندرہ منٹ …….بعد ھم عیسےاخیل ھائی سکول میں تھے….
ڈائریکٹر صاحب ……..نے جیپ سے اترتے ھی …..اپنے ساتھیوں…..سے کہا……….چلیں واپس چلیں …………پہلے ھی بہت دیر ……ھو گئی ھے…

اسطرح یہ …….ایک بڑے افسروں کا وزٹ……..مکمل طور پر
میری…………..favour میں …..چلا گیا

ڈائریکٹر سرگودھا……میری ٹرانسفرنگ transferring اتھارٹی بھی تھا…..
ساری رپورٹ صدر حاحب کے تھرو………through ضلع کے سپر ڈان…….
کو چلی گئی..
چاروں سمت بہت اداسی چھا گئی… ڈان نےکہا کہ جب مسلہ اسکا بنے گا……..
تو ڈائریکٹر…………..اسکے نزدیک بھی نہیں آئیگا….

گرمیوں کی چٹھیا ں ھو گئیں…….سکول بند ھو گئے …..
دونوں فریقین……..نے سکھ کا سانس لیا…
ھیڈما سٹر ……….کلرک…..اور ملازمین کچھ دیر کے لئے سکول…….آنے کے پابند تھے……
بہرحال مین….main ٹینشن ختم ھو گئی….. اور صدر صاحب نے بھی……….
سکھ کا سانس لیا……..توبہ…. بڑا عجیب……..ھیڈماسٹر ھے…

ایک ھی وقت میں …… ….دو افسر……ڈسٹرکٹ ایجوکیشن افسر سیکنڈری.اور………..ڈائریکٹر ایجوکیشن سرگودھا….
دونوں…….اس کے ھاتھ میں آگئے……
پورا ڈرامہ ھے……….صدر صاحب…….نے……..اپنے ایک کمانڈو سے بات………………….. شئیر کی…..
چٹھیاں بڑے سکوں سے گزرنے لگیں….
مجھے اپنے کسی بزرگ نے.. … .مشورہ دیا…. چٹھٹیوں میں
تم نے ایک ٹاسک پورا کرنا ھے…….
جی کونسا ٹاسک…….؟
بزرگ نے مجھے کہا……..دیکھو……صرف ایک ھی بندہ ھے…….

جسکو اگر چٹھیوں کے آخری ھفتوں……..میں تم اپنے ساتھ ملا لو…………………..
تو اس پورے غبارے میں سے………..ھوا نکل جائے گی…. کسی کمانڈو کی کوئی……..ھمت نہیں کہ تمہارے ساتھ…
پنگا……………لے سکے..

جی کون ھے وہ بندہ……….صدر کو ملا لوں یعنی……
لیکن وہ تو دماغ سے ………
مکمل طور پر فارغ ھے…. ……اگر یہ کو شش الٹی پڑ گئی………………………میں نے سرگوشی کے عالم میں….ھلکی آواز میں اپنا ردعمل……ظاہر کیا

او کچھ نہیں ھو گا یار….. دوچار استاد لیکر اسکے گھر پہنچ…………جاو……..اورکہو………..صدر صاحب چائے پینے آئے ھیں………
کوئی اندھا تو نہیں ھے………اسے ہتہ ھے……تم اسکے ھیڈماسٹر ھو……بس وہ خوش ھو جائے گا بیچارہ…..
اسکی انا………………..کی تسکین ھو جائے گی…
شرط یہ ھے……..اگر تم ان فضول جھگڑوں……..کو واقعی ختم کرنا……….چاھتے ھو….تو اسکا حل تو موجود ھے….
تو ان چھٹیوں کے آخری ھفتے میں …….
اس ٹاسک کو پورا کر سکتے ھو… ……………ھاں اگر خود تمہیں بھی………پنگوں میں مزا آتا ھے…..تو پھر شاباش ………………..جاری رکھو….

بزرگ کی نفسیات ایسی تھی…..کہ اسکے منہ سے نکلی ھوئی بات پوری نہ ھوتی….تو….اس کے دو نتیجے نکلنے تھے …….

اسنے میری بات کو………..بالکل ضرب ھی نہیں دی
اور……………یہ خود بھی دراصل…………….. الو کا پٹھہ ھے

سکول میں اگر فساد نہ ھو……تو اسے بھی سکون نہیں آتا ……. . .
اور تیسری بات……….صدر تو سیدھا سا بندہ ھے………
.میں نے کہا…………… معاملہ تو سارا بالکل الٹ ھو جائے گا
لیکن……..اب مجھے صدر کے گھر کا خیر سگالی دورہ کرنا پڑیگا….چاھے جو کچھ بھی ھو جائے…..

چھٹیاں گزرتی رہیں…………….زندگی پر سکون جا رھی تھی

اخبار…………..موسیقی………….چند دوستوں سے گپ شپ…..لطیفے………………اور ٹی وی….وغیرہ
اور صبح سکول کا ایک ھلکا سا چکر……………وہ بھی اگر ضروری ……………….ڈاک ھوتی تب ………
پھر وہ…………
آخری ھفتہ آگیا………..چار پانچ ٹیچروں کو بڑی مشکل سے…..قائل کر کے میں دن کے 10 بجے کے قریب …….صدر صاحب کے گھر لے گیا…
باقی اگلی قسط میں……….آپکا مخلص ناچیز عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی..قسط–54
جب میں صدر صاحب کے گھر….چار پانچ …..اساتذہ کے ساتھ انکے پاس…..پہنچا……..تو صدر اور اسکے کمانڈوز…..کا میرے ساتھ کوئی خاص…..issue نہیں چل رھا تھا……صدر اور انکے کمانڈوز …..کی تمام جائز خواھشیں…..پوری ھو رھی تھیں….صدر تو تین مرتبہ short leave لیکر کسی نہ کسی بہانے……سکول سے ھر دوسرے تیسرے دن….جاتا رھتا تھا…..باقی اساتذہ کے……ساتھ بڑی شاندار….ھلکی پھلکی….گپ شپ….اور ڈیلنگ…….ھو رھی…..تھی..

میں اپنی کوئی کمزوری….رو ئیوں…… behaviour کے لحاظ ….سے نہیں دے رھا تھا……یعنی کوئی……چخ چخ ….
.
.نہیں تھی…….سکول بالکل نارمل phase میں چل رھا تھا…..البتہ…..صرف

صدر………………
…..کھڑپینچ …….بینچ………………
..اور انکے followers کا ……………
……تختہ دھڑام…..کرنے کا ……….انتہائی ……..پیچیدہ……………شوق…………….پورا ….نہیں ھو رھا تھا…..ان کے لئے یہ بات ناقابل ھضم ……..
تھی….کہ………..میں سال سے زیادہ کا ٹائم کیسے گزار گیا..
بلکہ سچی……بات یہ ھے…..یہ انکے لئے بہت صدمے…..کی بات تھی
عیسےا خیل کے اصل طاقت ور سیاسی بھی انکے ساتھ تھے…….جنہوں نے ……….بیس دنوں کے اندر میرا تین ……مرتبہ……..تبادلہ کرا کے……..مجھے سبق سکھایا تھا

ضلع کا سپر ڈان بھی……انکے ساتھ ھر وقت….لینڈ لائن….پر تھا….میں اکیلا …..
تن تنہا……..آدمی….
یہ بڑی بیغیرتی……کی بات تھی……..انکے لئے…. لیکن انکی زندگی…..بھی آسان تھی….اس لئے……بظاھر یہ نظر آرھا تھا…………………..کہ…………….سب کچھ ٹھیک ھے.

صدر صاحب کے گھر ……..
ھم پانچ چھ آدمی….10 بجے دن کو انکے پاس پہنچ گئے…
جیسے ھی وہ گھر سے باھر نکلا…….اور اسکا ھم سب سے آمنا سامنا ھوا…….اسکے چہرے پر……..

پہلا ناگوار تاثر ……ابھرا…….اس نی بیٹھک کا دروازہ کھولا….ھم سب کمرے کے اندر جا کے بیٹھ گئے….
میں نے اسے مخاطب…..کرنے…….. کے لئے…….ابھی اسکا نام ھی لیا تھا……. کہ اس نے کہا
ھیڈماسٹر صاحب….آپ مجھے ذرا ان سے بات کرنے دیں….
اس سے پہلے کہ میں ……..کچھ کہتا ………..اس نے ضیاءاللہ کی طرف منہ کرکے……اپنی کچھ نیکیاں گنائیں….اور پھر کہا…..کہ افسوس آج تم مجھے اسکا یہ صلہ………دے رھے ھو……
ضیاءاللہ خان نے کہا…لیکن ھم نے آپ کے ساتھ ………..آپکے گھر آکے زیادتی کیا کی ھے….
لیکن صدر صاحب…….دوسرے ٹیچر کو نیکیاں گنانے لگ گیا……
حتی ا کہ وہ پورا 40 ….منٹ ھر ایک کو کہتا رھا…آج تم نے میرے ساتھ بڑی زیادتی کی ھے…

میری طرف تو اس نے دیکھنا بھی……گوارا نہیں کیا….نہ میری بات سننے …….کے لئے وہ فارغ ھوا…
نہ چائے نہ پانی……………..
جتنا میں نے اس کے بارے سوچا تھا…….. اس سے دس گنا

زیادہ وہ احمق نکلا……..مکمل طور پر اخلاق باختہ….
تمام اساتذہ کی جب………پوری پوری بے عزتی ھو چکی ………
اور اسکی نیکیاں……….جب…………سب………ختم ھو گئیں تو وہ …..سب ………مجھے…….گھر جانے کا………
اشارہ دینے لگے….ھم اسے ھاتھ ملائے بغیر وھاں سے اٹھ آئےمجھے کیا پتہ تھا ……اتنا بیوقوف ھو گا….بزرگ نے حیرت کے ساتھ ساری بات سنی……. اور اپنا رد عمل دیا…….. واقعی اس عزت کے قابل نہیں تھا…..
چلو فکر نہ کرو………….اخلاقی فتح تمہاری ھوئی ھے….. اللہ کی ناراضگی……………اسکے حصے میں آئی ھے…….انشاءاللہ منہ کے بل گریگا….
میرے ساتھ ایک ٹیچر احسن بھی گیا تھا……سکول ٹائم کے بعد وہ ٹینٹوں……..شامیانوں……کا کام کرتا تھا
صدر صاحب نے شام کے وقت اسکی دکان پر جاکر اسکی………..
مزید بے عزتی بھی کی….اور اسے اپنے چھٹیوں کے بعد …..کے لائحہ عمل سے بھی…………………آگاہ کیا
صدر نے کہا اب ھم دیکھیں گے……یہ سکول کو کیسے چلاتا ھے……
میرے اوپر صدر کی ساری بکواس…….کا بہت برا اثر تھا…..وہ………………..کوئی……..ھانگ کانگ کا رھنے والا تو تھا………..نہیں ……..کہ میں اسے غیر معمولی بندہ سمجھتا…..
سوائے ضلع ڈان کے……….اسکی ذاتی کیا اوقات تھی……
مجھے معلوم تھا………….اگر جھگڑا چلا تو ھر انکوائری صدر…………
کے حق میں ھو گی….
چلو………………… ٹھیک ھے………….میں نے کوئی اس سکول کا ٹھیکہ لیا ھے…..میں کسی اور سکول میں چلا جاونگا……
میں نے دل……………ھی دل میں سوچا
چھٹیاں بند ھو گئیں…..سکول کھل گئے……..
صدر اور کمانڈوز کے………………چہروں پر روشنیاں تھیں…..

صدر نے مصالہ لگا کر………….پندرہ ٹیچروں کو بتایا…..

ھیڈماسٹر چار دن پہلے میرے پاوں پکڑنے آیا تھا… .بڑی بے عزتی کے ساتھ ………..میں نے انکار کر دیا….
صدر صاحب کو بڑی داد ملی…خامخواہ………………بغیر کسی وجہ کے
سکول کا ماحول اکھڑ…………گیا
……………………………….

میں نے آرڈر بک کیا……….
.درج ذیل ھدایات پر سختی سے عمل کیا جائے
نمبر –1 بغیر کسی کام کے میرے دفتر میں کوئی ٹیچر نہ بیٹھے…
نمبر….2 آج سے ھر قسم کی شارٹ leave بند ھے…..جس

نے شارٹ لیو……………..کی ………اسکی غیر حاضری mark ھو گی…… اور کچھ ایک دو نارمل باتیں………لکھیں
……………………………..

سکول پر سکتہ چھا گیا……………دفتر پر سکون ھو گیا

صدر نے کمانڈوزکو……………..اور سپر ڈان کو بتایا………
.یہ سب آرڈر بک…………….صرف میرے لئے نکالا ھے

ھفتہ گزر گیا کوئی نہیں آیا…….صدر جو دن میں ……..تین چار چکر………………………..سکول سے باھر کے لگاتا تھا
کسی حوالات میں اپنے آپ کو بند محسوس کرنے لگا
وہ پورا ھفتہ سپر ڈان سے باتیں کرتا رھا….لیکن شارٹ لیو مانگنے نہ آسکا.

انہیں دنوں میں عیسےا خیل کے……………..نوجوان سیاسی لیڈر جمال خان کو خدمت کمیٹی کا چئیرمین بنایا گیا تھا
میں نے اسکے ساتھ صرف پانچ منٹ کی مختصر ملاقات کی……….
…. جمال خان اگر میں استادوں کے ساتھ انکی مرضی کے مطابق رھوں…..یعنی وہ پیرئیڈ پر نہ جائیں………
سکول سے غائب رھیں……………لڑکوں پر توجہ نہ دیں……

محنت نہ کرائیں………اور میں انہیں نہ روکوں……….یعنی انہیں خوش رکھوں………….تو میں ساری زندگی ادھر ھیڈماسٹری کر سکتا ھوں……..لیکن……..بچوں کا بہت نقصان ھو گا لیکن اگر میں
قائدے اور قانون کے مطابق سکول چلاوں تو بچوں کا بہت فائیدہ ھو گا….لیکن اس میں مجھے آپکی بہت سپورٹ کی ضرورت ھو گی…
نہیں آپ قائدے اور قانون پر عمل کریں اور بچوں کا بھلا کریں….جو کوئی استاد رکاوٹ بنتا ھے….اسے میں دیکھ لونگا

قیوم خان میری رپورٹ سیدھی…………شہباز شریف کو جاتی ھے……….اور میں ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر کے خلاف بھی رپورٹ لکھ سکتا ھوں …….اس نے وضاحت کی….

دوسرا ھفتہ گزر گیا ……….. .وہ سکول کی حوالات میں بند رھا…..اور سارے ٹیچروں کے سامنے……… تماشہ بنا رھا….
پھر تیسرا ھفتہ گزر گیا…….وہ نہیں آیا………
سپر ڈان بھی اسکی باتیں سن سن کر تنگ آگیا

سپر ڈان نے اسے رات کو لمبی گفتگو…………میں فیصلہ دیا……….
کل قیوم خان سے جاکر شارٹ لیو…………….مانگو اگر وہ انکار کر دے
تم تب بھی سکول سے چلے جانا…………وہ زیادہ سے زیادہ
تمہاری رپورٹ ڈی-ای-او میانوالی کو بیجھے گا……… ادھر میں سب سنبھال لونگا……..
لیکن کل اگر تم چھٹی مانگنے قیوم خان کے پاس نہ گئے تو آئیندہ میرے ساتھ یہ ٹاپک……..نہ چھیڑنا…..

ٹھیک بیسویں دن صدر صاحب…………… میرے دفتر میں ………اچانک نمودار ھوا
باقی اگلی پوسٹ میں….. آپکا مخلص نا چیز عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی..قسط–55
میں نے جب اپنا تبادلہ ذھنی طور پر قبول کر لیا… …تھا پھر میں…..ھر خوف سے آزاد ھو گیا……صدر صاحب ………….سپر ڈان کے …ذرئیے مجھے…..یہی توپ مار سکتا تھا…. اب ان کے پاس ……مکمل بائیکاٹ….کی طاقت تو پہلے جیسی…….رھی نہیں تھی…اب وہ پچیس کی بجائے…..پندرہ رھ گئے تھے…..
اور سوشل بائیکاٹ ……کی خاص وجہ ….بھی انکو نہیں مل سکتی تھی…. ٹرانسفرنگ اتھارٹی……بھی…..ڈائریکٹر سرگودھا تھا……….لہذا………..

میں تو صدر صاحب کے انتظار میں تھا….کہ کب آتا ھے…………شارٹ لیو…..لینے……لیکن وہ ایمان ……سچ….اور

حق سے …….بالکل خالی تھا…اس نے آتے آتے……20 دن لے لئے….
وہ آیا…..اور اس نے کہا…

ھیڈماسٹر صاحب… ایک استاد باھر سے آیا ھوا ھے….اس کا ڈپٹی ڈی ای او عیسےا خیل کے دفتر میں کوئی…..کام میں نے کرانا ھے…مجھے…………….شارٹ لیو چاھئیے….

اگلا پیرئڈ…….اردو کا….آپکا ھے….وہ کون پڑھائے گا ؟؟
وہ آپکا مسلہ ھے….اس نے بہت بھونڈا سا جواب دیا…

بالکل کھوکھلا…….
اچھا…..آپ نے اپنا اردو کا پیرئڈ نہیں پڑھانا …….اب وہ میرا مسلہ ھے !
تو آپ تنخواہ کس چیز کی لیتے ھیں…استاد ھونے کی………..
.
یا صدر ھونے کی ؟

میں بحث کرنے نہیں آیا…….آپ ایسا کریں میری غیر حاضری رپورٹ…..
ڈی-ای-او میانوالی کو کردیں…

نا……نا تم سکول سے باھر قدم رکھ کر دکھاو میں رپورٹ ……….تمہاری میانوالی نہیں بھیجونگا….. میں خود تمہارا بہت کچھ کر لونگا..

وہ جیسے ھی دفتر سے نکلا……میں نے فوری طور پر 285117 ……جمال خان کا نمبر ملایا….اسوقت …..لینڈلائن کے ……..عیسےا خیل میں اھم نمبر ھمیں زبانی یاد ھوتے تھے…
اس نے کہا ……جی
نہ میں نے کوئی تعادف کرایا……نہ اس نے پوچھا آپ کون ھیں…
ایک استاد……میرے منع کرنے کے باوجود…..سکول سے یہ کہہ کر نکل گیا ھے….میں جارھا ھوں آپ نے جو کچھ کرنا ھے…کر لیں…..
میں اسکی absent لگا رھا ھوں…میں نے ایک ھی سانس میں بات ……کر دی
نہیں نہیں………….آپ اسکی غیر حاضری نہ لگائیں……….میں بس دو منٹوں میں پہنچ رھا ھوں….
اسکی غیر حاضری میں خود لگا و ں گا….

صدر صاحب سکول سے نکل تو گیا…..ا ب اس نے بہت جلدی واپس آنا تھا……میرا فقرہ اس کے دماغ میں…….feed ………ھو چکا تھا…
اور جب بندے کے …….ھاتھ میں……کوئی اخلاقی گراونڈ نہ ھو……. تو وہ…….. زندگی کے ھر میدان میں …

ایک کھوکھلی ……اور بے جان لڑائی ………لڑ رھا ھوتا ھے

جمال خان نے رجسٹر اپنے ھاتھ میں لے لیا……..ایک کلرک بھی اس کے ساتھ آیا ھوا تھا
وہ سٹاف روم میں گیا…..سلام کرکے…………ایک ایک استاد کی حاضری لگائی….
پھر کلاسوں میں گیا……سلام کرکے استاد کی حاضری لگائی…
پھر حاضری رجسٹر پر…………….صرف ایک خانہ رہ گیا

اچھا یہ استاد ھے ؟جمال خان نے مجھ سے پوچھا

جی………یہی استاد ھے……میں نے جواب دیا
اتنے میں………..صدر صاحب سکول کے گیٹ میں in ھوا ……….سکول کے دفتر کے سامنے…..ایک گاڑی دیکھی ………جب دفتر میں داخل ھوا تو رجسٹر حاضری………………….جمال خان کے ھاتھ میں تھا
جیسے ھی جمال خان نے اس سے سوال جواب شروع کئے…

اس ……… اللہ کے بندے نے فوری رد عمل ریا…..جمال خان آپ درمیان میں نہ آئیں …….یہ میری رپورٹ ھیڈآفس میں بھیجے….
جمال خان نے صدر صاحب کو کہا…..میں خدمت کمیٹی کے چئیرمین کی حیثیئت سے آیا بیٹھا ھوں..اس نے صدر کو کہا آپ سب سے پہلے استاد ھیں…….بعد میں یونیئن کے صدر ….

میں آج وارننگ دے کر جارھا ھوں….اگر ھیڈماسٹر اجازت نہ دے……تو استاد کو چھٹی نہیں کرنی چاھئیے..
ورنہ پھر میں ….. میری رپورٹ سیدھی…….شہباز شریف سیل ………میں جائے گی….
وہ بہت سخت ناراض ھو کر…….وارننگ دے کر چلا گیا….
ادھر استاد لوگ …..
سارا تماشہ……دائیں بائیں سے سن رھے تھے….
کہ صدر صاحب…..
کو وارننگ مل گئی ھے….کہ آئیندہ ھیڈ ماسٹر کی اجازت کے بغیر سکول سے باھر نہ جانا اور ….

عیسےا خیل کی ایک تیسری سیا سی قوت….ایک خان ..

قیوم خان کی ………فیور…..میں باقائیدہ اعلان کر گیا ھے

صدر صاحب دفتر سے انتہائی پریشانی کے عالم میں نکلا…

صدر…..کھڑہینچ بینچ……اور پندرہ استاد سر پکڑ کر بیٹھ گئے…….اس کا مطلب ھے………
اب صدر صاحب کا سکول سے نکلنا بالکل بند….
اب یہ سکول صدر صاحب کے لئے ایک ……..

بہترین …….حوالات ھے…….
شام کو مکمل ڈائری سپر ڈان کو گئی…. وہ ڈی ای او کو رپورٹ نہیں بھیجے گا.
.اس نے ایک بہت ھی ضدی اور نیو سیاسی…………

مقبول خان ایم این اے کا بھانجہ…..درمیان میں کھڑا کر دیا ھے

سپر ڈان سنتا رھا….. اچھا چلو میں کچھ سوچتا ھوں

سکول کچھ دنوں کے بعد…..نارمل فیز……..کی طرف لوٹنے لگا…ایک مہینہ گزر گیا…..صدر صاحب نے نکلنا چھوڑ دیا…………………….
سکول کی جو جنرل حاضری رپورٹ …….روزنامچہ…….10 بجے تک میرے پاس آتا تھا ……….اس میں ……میں نے دیکھا کہ ساتویں کلاس کی حاضری رپورٹ ……خراب آرھی تھی..
ھر روز آٹھ……نو…….دس لڑکے غیر حاضر آرھے تھے

کلاس کا انچارج…….محمددین خان کا بیٹا تھا….وہ صدر صاحب کا کمانڈو تھا….حالانکہ بہت ذھین بندہ تھا ……..

لیکن مخالف گروپ میں……..بہت شغل میلہ تھا ………

بڑے ڈائیلاگ چلتے تھے…. ھیڈماسٹر کا تختہ دھڑام کرنے کا مزا ھی……….
کچھ اور تھا….میں نے سوچا کلاس انچارج سے ملکر اسکا کوئی حل سوچتے ھیں…
میں نے ایک ملازم سے کہا ذرا خالد کو بلانا…

جی خالد آرھا ھے…….نوکر نے کہا
بیس منٹ گزر گئے….خالد نہیں آیا
میں نے پھر ملازم سے کہا جاو خالد سے کہو ذرا جلدی آئے

جی وہ آرھا ھے…..ملازم نے خالد سے ملنے کے بعد رپورٹ دی
پھر بیس منٹ گزر گئے….خالد نہیں آیا.
میں نے ایک سفید کاغذ پر لکھا….

خالد خان ….میں نے ساتویں کلاس کے بارے میں ایک مسلہ …….
ڈسکس……کرنا ھے…..دفتر تشریف لائیں…

خالد نے کاغذ پر ………..لکھا……..آپ کو اگر مجھ سے کوئی کام ھے…….تو آپ خود یہاں آئیں ….

سر میں عیسےاخیل ھائی سکول سے ھیڈماسٹر عبدالقیوم خان بول رھا ھوں
ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر وھی صبغت اللہ خان تھا جو ڈائریکٹر سرگودھا کے ساتھ آیا تھا
جی قیوم خان…..اس نے جواب دیا….
میں نے اسے انتہائی مختصر انداز میں مسلہ پیش کیا …..

ڈی او صاحب نے متعلقہ استاد کے متعلق بہت گندے الفاظ استعما ل کئے……اور مجھے حکم دیا اسے ابھی فارغ کر کے میری طرف بھیج دو…
باقی اگلی قسط میں.آپکا مخلص ناچیز عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی..قسط–56
خالد خان کے والد …محمد دین خان کے ساتھ میرا بہت اچھا ٹائم گزرا تھا…… میرے گھر اسکا آنا جانا بھی تھا…اور وہ صدر کی نسبت….کافی ذھین استاد تھا….میں نے اسے اپنی طرف………کھنچنے کی بہت کوشش کی…لیکن دوسری طرف…..کچھ اساتذہ…..ایسے تھے….جن کے ساتھ………..
اسکی کیمسٹری ………بہت ملتی تھی…
اسے اپنے ساتھ ملانے کی …….میری……………….
ھر کوشش نا کام ھوئی
اور اب تو وہ کھل کے میرے سامنے……..آچکا تھا ………..اور یہ میرے ساتھ……..اسکا ……کھلا مقابلہ تھا….بغیر کسی ……وجہ اور تکلیف کے…….
وہ سب کمانڈوز…..کو یہ میسیج دے رھا تھا ….. کہ دیکھو ……میں اعلانیہ ………..disobey کر رھا ھوں …… ھیڈماسٹر بیچارہ…………..
کیا کر سکتا ھے…وہ صدر……اور تمام کمانڈوز سے……اپنے آپکو……….
زیادہ طاقت ور ثابت کر رھا تھا…….اور ساتھ ساتھ مجھے………………بھی ایک نمونہ بنا رھا تھا..

جیسے ھی ڈی او میانوالی نے مجھے اسے فوری ….ریلیز کرکے………دفتر بھیجنے کا آرڈر…..کیا تو …..
میں نے….اگلا فون….امیر عبداللہ خان پرنسپل جامع ھائی سکول میانوالی کو ……ملا کر یہ سارا واقعہ اسے سنایا……..اور guide line ……مانگی…

انہوں نے کہا…..خبر دار…..خالد کو …….ریلیز ….ھر گز نہ کرنا…….بلکہ خو د کل …….آکے اسکا ٹرانسفر …..کراو اور اسے وہ ٹرانسفر…..اس کے ھاتھ پر رکھو…..تاکہ وہ تیسرے دن……کسی اور سکول میں جارھا ھو…..

خالد مجھے اچھا لگتا تھا… لیکن اب اسکا کسی اور سکول میں جانا بہت ضروری تھا.
انہوں نے مزید کہا……تم پہلے میرے پاس آو گے…..
میں صبغت للہ خان کو فون کرونگا…..ھم دونوں روزانہ شام…….کو نہر والے ……ھوٹل پر چائے وغیرہ پیتے ھیں…. میں ……آج اسکا ذھن بناونگا…….تمہا را کام ھو جائے گا…یہ

خالد اب عیسےا خیل میں نہیں رہ سکتا…..فکر نہ کرو

یہ اللہ تعالے ا کی طرف…….سے ایک غیبی امداد تھی…
کیونکہ میں …..
مکمل طور پر ………حق اور سچ…….کے ساتھ بچوں کی ہڑھائی چاھتا تھا…اور……….
دوسری طرف …………..یہ ….. ذھنی …..بیماری….اور

پیچیدہ شوق تھا……………کہ ھیڈ ما سٹر کو بےبس کرنا ھے……..اور
اپنے آپ کو…….بڑا ھیرو ثابت کرنا ھے……… اب خالد اسی اخلاق باختہ……..سوچ کا شکار تھا…
میں سیدھا امیر عبداللہ خان کے پاس پہنچا…..اس نے صبغت اللہ خان کو کہا….قیوم خان کو اسی کام کے لئے آپکے پاس بھیج رھا ھوں….
اگلے آدھے گھنٹے میں خالد کا تبادلہ کالا باغ ھو چکا تھا…
شام کو ٹرانسفر لیٹر …….خالد کے گھر پہنچ چکا تھا

تیسرے دن وہ کالا باغ ھائی سکول میں تھا…
اللہ کے کام دیکھیں…..کہ

سپر ڈان اور صبغت اللہ خان ایک دوسرے کے یار غار تھے……..خالد کی واردات سے …..ھفتہ پہلے ان دونوں کے سخت اختلافات ………….
شروع ھو چکے تھے…..اور سپر ڈان……………. صبغت اللہ خان کے ……….دفتر میں نہیں جا سکتا تھا…
خالد مکمل صفائی کے ساتھ…….عیسےا خیل ھائی سکول سے ………..آوٹ ھو چکا تھا…صدر…..کمانڈوز……اور سپر ڈان ……..
بس دیکھتے رہ گئے……..طاقت کا توازن ھیڈ ماسٹر کی طرف ……….جھک گیا…سکول سنبھل گیا …..
صدر صاحب ….اور کمانڈوز کی غلط فہمیاں دور ھونے لگیں…………اور سکول کے ھر ٹیچر کو یہ خاموش پیغام گیا

یہ زیادہ ڈرامے بازی نہ کرو اور چپ کر کے اپنی نوکری کرو………اور
اہنے پیرئیڈ پڑھاو اور………….گھر کی نوکری کی خیر مانگو

سکول …………..بالکل نارمل فیز میں آگیا لیکن………..
سپر ڈان اور صدر نے……..اس چیز کا زیادہ صدمہ لیا….سپر ڈان نے………اسے اپنی توھین سمجھا ………………..البتہ عیسےا خیل ھائی سکول کی………..

ھر چیز…………..بجوں کی پڑھائی کی……….طرف مڑ گئی.

دو ماہ کے بعد صبغت اللہ کو سپر ڈان نے ھٹوا دیا… اور اسکی جگہ پر ……..
امیر عبداللہ خان کے آرڈر ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر کے نکلوا دئے…
مجھے میانوالی کوئی اپنا ذاتی کام تھا……میں نے سوچا…………
….کہ چلو امیرعبداللہ خان کا شکریہ بھی ادا کروں….خالد کے ٹرانسفر کے حوالے سے…..اور ڈی او شپ …………کی مبارک باد بھی پییش کروں
میں امیرعبداللہ خان کے پاس پہنچا……..تو انہوں نے کہا کہ
..
… شکر ھے آپ آگئے ھیں….
جی حکم کریں………کوئی کام تھا ؟

یار وہ جو خالد کو ٹرانسفر کروایا تھا….ڈائریکٹر ایجوکیشن تین بار کہہ چکا ھے…..اس بندے کو……کسی طریقے سے واپس کرنا ھے…
میں سمجھ گیا….ڈائریکٹر کا صرف نام کیا جا رھا ھے

اصل میں صبغت اللہ خان کو ھٹوانے…………..اور امیر عبداللہ خان کو لگوانے کا مطلب ھی یہی تھا …………………………. خالد کے ٹرانسفر میں…………سپر ڈان نے اپنی………..بہت توھین سمجھی تھی

میں نے کہا…..جناب آپ میرے افسر ھیں……آپ حکم کریں

خالد کو سبق پڑھانا تھا………….جو اسے مل گیا ھے…میری اس سے کوئی دشمنی تو نہیں ھے……البتہ

سر یہ کام اسطرح کرنا ھے….کہ ھیڈماسٹر عیسےاخیل کی عزت ………………اور اسکا وقار کم نہ ھو…………….بلکہ اور بڑھے.
میرے عزیز……………میں خود بھی آوں گا………شپر ڈان کو بھی………….آپ کے پاس لے کر آوں گا..
آپکو بہت وزن دیں گے…..آپکی عزت کا میں خیال نہیں کرونگا………تو اور کون کریگا……………………….
.
ڈی-او میانوالی کی جیپ عیسےا خیل
ھائی سکول کے گرانڈ میں داخل ھوئی..
امیر عبداللہ خان………شیر عباس خان…..سپر ڈان…ڈرائیور….جیپ سے نیچے اترے
سپر ڈان میرا بی -ایڈ کا لاھور کا کلاس فیلو تھا..خوش اخلاقی سے ایک دوسرے کو ملے…
انکی آمد کی باقائیدہ…………..اطلاع تھی…… انٹرٹینمنٹ کا اھتمام تھا……

میں ھیڈماسٹر کی سیٹ پر…….. بیٹھا رھا..ڈی او صاحب کو کہا تو کہا نہیں……..آپ خود بیٹھیں…
ڈی او صاحب ……….ڈان …….شیر عباس …..میز کے ساتھ والی کرسیوں پر………بیٹھ گئے………
..
سب اساتذہ کو دفتر میں بلایا گیا..

تین بندوں نے تقریر کی……..
پہلے ڈی او صاحب نے………پھر سپر ڈان نے……پھر میں نے…………..
سپر ڈان نے کہا…….ھم سٹاف اور ھیڈ ماسٹر کی صلح کرانے کے لئے حاضر ھوئے ھیں…آپ تمام..اساتذہ ..اپنے سربراہ کی عزت کریں……اور ھیڈماسٹر صاحب سے بھی گزارش ھے……کہ اساتذہ کے ساتھ گزارہ کیا کریں……………..

میں نے تقریر میں کچھ بنیادی باتیں کرنے کے بعد ڈی او صاحب……….شیر عباس خان اور سپر ڈان کا شکریہ ادا کیا اور پھر کہا……کہ میرے محترم دوست……سپرڈان صاحب نے فرمایا ھے…..کہ میری اور سٹاف کی جو رنجش چل رھی تھی…….آپ اسی کو مٹانے اور ھم سب کو ایک کرنے کے لئے آئے ھیں…
مجھے اسکا علم نہیں ھے……سٹاف سارا بیٹھا ھے…..جو استاد مجھ سے ناراض ھے……وہ مجھے ابھی ھاتھ کھڑا کر کے بتا دے……تاکہ مجھے بھی تو پتہ چلے کہ مجھ سے کون کون ناراض ھے……اور مجھے اپنی غلطی بھی بتا دیں
کسی نے ھاتھ کھڑا نہیں کیا… جب کوئی کھڑا نہیں ھوا….تو گل حسین ترگ………نے صدر صاحب کی عزت بچانے کی کوشش کرتے ھوئے….اٹھ کر کہا میں ناراض ھوں
میں نے صدر صاحب کی طرف دیکھتے ھوئے کہا
جب آپ سامنے نہیں ھوتے…تو گلے لگا کر ملتا ھے…..اور جب آپ دیکھ رھے ھوں تو ڈر کی وجہ سے ھاتھ بھی نہیں ملاتا یہ کہتے ھوئے ……….ڈی او کے موجود …..ھونے کے باوجود
اسے دکھہ دے دیا…….وہ جس کرسی سے اٹھا تھا اسی پر جاگرا…………..قہقہہ لگ گیا.

میں نے سپر ڈان کی طرف دیکھا…..آپ کس سٹاف کی بات کر رھے تھے…….یہاں کسی کی لڑائی ….نا راضگی نہیں ھے
آپ کو غلط رپورٹیں ملتی ھیں……..
سپر ڈان……………………………….خاموش

نہ خالد کا ذکر ھوا نہ….وہ خود موجود تھا….. وہ
پہلے سے بات under stood تھی……کہ وہ سب اسی کے لئے آئے تھے
میٹنگ برخواست ھو گئی…
باقی اگلی قسط میں آپکا مخلص نا چیز عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی..وضاحتیں
دوستو…مہربانوں…
ماہ رمضان کا مقدس مہنہ …..28 مئی بروز اتوار شروع ھو رھا ھے…… رب کائینات….اپنی تمام مہربانئیاں ….اپنی نعمتیں…. اور بڑی بڑی……خطاوں کی معافیاں…. کرہ ارض پہ……انسانوں پہ…..نازل فرمانے والا ھے……. ماہ رمضان کی ان برکتوں …..سے پورا پورا…..استفادہ….اٹھا نے کے لئے… ……ھمیں بھی اپنے عام رویوں سے….عام عادتوں سے……ھٹنے کی کوشش کرنی چاھیئے… ……کائینات نئے رنگوں کے جلوے بکھیرنے……والی ھے….ھم بھی ….کوئی ایسا ……….سچ نہ بولیں جس سے کسی کا دل زخمی ھو سکتا ھو….
عیسےا خیل دور تے نئی…..میں….میری زندگی کی آپ بیتی ھے… اور یہ
قدرتی بات ھے……………کہ……..یہ آپ بیتی…..ھو بہو ھے…اور مزے دار ھے…….لیکن
عامر ھاشمی میرا ……شاگرد….بہت پڑھا لکھا …..بہت نفیس دوست ھے….اس نے بھی مجھے یہی درخواست کی ھے…میں خود بھی…..یہ وضاحت لکھنے والا …تھا….اوپر سے مجھے عامر ھاشمی کی سپورٹ بھی مل گئی..
اسلئے ………….ان دوستوں سے انتہائی معزرت کے ساتھ جو……..بڑی شدت کے ساتھ….ھر قسط . .کا انتظار کرتے…
……..ھیں…اور جو مجھے تھکنے نہیں دیتے…
اب انشاءاللہ ………..عید کے چوتھے دن سے…..یہ سلسلہ شروع ھو گا……..
فقط آپکا خیر اندیش…. ناچیز عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی. کچھ باتیں
زندگی بہت پر اسرار چیز ھے…بالکل اسی طرح جیسے ھم کہتے ھیں…کائینات میں لاکھوں…کہکشائیں ھیں… ھر کہکشاں کے اندر …لاکھوں سورج ھیں…….اور ان میں سے …….ایک کہکشاں ایسی ھے…..کہ اس میں بھی لاکھوں سورج ھیں ….اور اسکے اندر کسی ایک سورج کے گرد…آٹھ زمینیں اپنے اپنے………دائروں میں گھوم رھی ھیں ….اور ……سورج سے تیسرے دائرے میں جو زمین ھے اس پر …………….ھم انسان رھتے ھیں…
زندگی …..اگر تعلیم کے عمل سے نہ گزرے…. تو یہ بہت بڑے المئے …اور……..tragedy کو جنم دیتی ھے…..اس المئیے کو لفظوں میں بیان کرنا بالکل نہ ممکن ھے…. .. اور جب بندہ …….ایک بار اس ٹریجڈی کا شکار ھو جائے…..نہ اسکا علاج…
دولت کر سکتی ھے…….نہ شہرت…. نہ کوئی اور چیز…
ساری زندگی وہ بندہ….
ادھوری معلومات کے ساتھ. …غلط نظریات کے ساتھ……..کبھی ٹریک کے اوپر………کبھی آصل ٹریک سے

دائیں بائیں…. اپنی زندگی گزار دیتا ھے……..اور اپنی ساری زندگی….. فضول چیزوں کے. پیچھے بھاگتے بھاگتے…..

بالاخر اپنی قبروں میں جا پڑتے ھیں…..

ھزاروں ان پڑھ لوگ……امیر بنتے بھی دیکھے گئے ھیں…
اور بظاھر ….
کامیاب بھی……..لیکن انکی زندگی کا……قریب سے جا کر مطالعہ کیا جائے…………..تو انکی زندگی میں اس کھوکھلے پن کو… …………اس المیئے ……..اور…………..اس ٹریجڈی …..کو دریافت کیا جاسکتا ھے……..
لیکن اسکے مقابلے میں……. ایک مڈل کلاس معاشی حالت

والا انتہائی پڑھا لکھا بندہ….. بہت ھی اعلے آ vision کے

ساتھ……. کافی حد تک بہتر زندگی گزار یتا ھے………………………………………..
لیکن دین اسلام بعض اوقات ان دونوں آدمیوں کو reject کر دیتا ھے… اسلام انسانوں کو ایک دوسرے کے ساتھ ملکر ایک دوسرے کی باھمی بقا mutual survival کی زندگی

کا سبق دیتا ھے…… اور انسانوں کو کسی بھی لیول کے

دنیاوی greed. and gravity ………..لالچ…. گند… مادی

ملاوٹوں سے….. بالاتر…… زندگی کا سبق دے کر…………………………….. ھر قسم کی نفرتوں… سازشوں….

سے پاک…… بہت ھی اعلے آ آفاقی بصیرتیں… ( vision )

عطا کرتا ھے……. اور اسطرح انسان کو ھر مجبوری اور

کمزوری سے ماورا کر دیتا ھے…… اور پوری کائینات کو

ان انسانوں کے تابع کر دیتا ھے…. دولت اور مادی چیزیں

ان کے پیچھے بھاگتی رھیں…….. اور وہ ھمیشہ انکو

دوسروں میں بانٹتے رھے……. کیونکہ وہ ان سے بہت بالا تر

تھے….. وہ دریاوں کو حکم دیتے… تو دریا رک جاتے….. لیکن

آج مغربی اور یورپی فلسفہ…… مادے کی مکمل غلامی پر

انحصار کا سبق دیتا ھے…. اور تمام انسانی خوا ھشوں کا

کھلا چھوڑنے پر زور دیتا ھے….. اور اسے انسانی آزادیوں کا\

نام دیتا ھے……. بظاہر بہت پر سکون نظر. آنے والے یہ معاشرے دراصل

اندر سے. اصولی طور پر کتنے کھو کھلے ھونے چاھیئں

اور وہ یقینی طور پر کھو کھلے ھیں….. ھم میں سے کوئی بھی بندہ

جاکر….. اسکا گہرا مطالعہ کر سکتا ھے……

ؤھاں جاکر آپ کسی لڑکی سے…. اگر اسکی بھی مرضی ھو

تو شادی کے بغیر…. کئی برسوں تک اکٹھے رہ سکتے ھیں…

قانون آپکا کچھ نہیں کرسکتا……

بلکہ وھاں کی انسانی آزادیاں آپکو کسی بھی مرد. سے بھی

شادی کرنے کی اجازت دیتی ھیں…. تاکہ انسانی خواھشات

کو کسی رکاوٹوں کا سامنا نہ کرنا پڑے…. نا نا…… یہ زیادتی

وہ ھر گز برداشت نہیں کر سکتے…..

باقی اگلی قسط میں……. اپنا بہت سا خیال رکھیئے گا

اللہ حافظ……… مخلص. ناچیز. قیوم نیازی

.

 

Your words for Mianwali and Mianwalians