ISA KHEL DAUR TA NAI – PART 4

عیسےا خیل دور تے نئی..قسط-32

عطاءاللہ عیسےا خیل ایک .دو دن رہ کر چلا گیا….نہ میں اسے ملا .نہ وہ مجھ سے ملا…لیکن ایک خاموش……………پیغام اسے ضرور مل گیا….کہ قیوم نے تو …….میری خواھش کے مطابق سب کچھ……کر دیا ھے….اور اب تو اشتہار بھی لگ گئے ھیں…..اور ٹکٹ شو بھی………..میں نے خود ………تجویز….کیا تھا….اور پھر اسکا خرچ….بھی تو ھو رھا ھے…….اتنی ساری چیزیں……….کہنا…..آسان ھے……کرنا تو بہت مشکل……ھوتا ھے………………اب اگر میں یعنی عطاءاللہ…..نیا راگ…..الاپنا………شروع کروں ….کہ عطاللہ کو بھی پیسے دے دوقیوم خان یہ بات نہیں مانے گا….اسی لئے تو اس نے مجھے ……… لفٹ نہیں کرائی….

میرا نہ ملنا بہت…….میرے خیال میں بالکل….ٹھیک فیصلہ تھا……..اور اگر …..میں اسے ملتا…….تو شرطیہ اس نے پیسے مانگ لینے تھے……اور پیسے نہ دینے کی صورت…….میں……….وہ…..اڑ بھی سکتا تھا……….اس کے اندر ضد بھی…….پیدا ھو سکتی تھی….
ویسے بھی…..میں نے زندگی ….بھر ……یہ حقیقت ….محسوس کی ھے کہ ……رشتوں کو…..فاصلے…مضبوط بناتے ھیں…………..جہاں فاصلے مٹ گئے…..وھاں……رشتے بھی……پتلے ھو گئے…..سوائے ماں باپ ……کے
مجھے …..اب یہ واضع ھو چکا تھا…..کہ اب …..میرے ساتھ….کچھ بھی ھو سکتا…ھے……………….عطاءاللہ کا مجھے کچھ پتہ نہیں تھا…………..آئیگا….نہیں آئیگا…….. اور اگر نہ آیا تو……….کیا ھو گا……اگر…..ٹیکس والوں…….نے سب کچھ لپیٹ…..لیا تو پھر……مجھے کیا بچے گا………..اور
اگر عطاءاللہ نہ آیا…….تو سرپرست اعلی کے کھانے …..کا بنے گا……اگر میانوالی کی ساری بیوروکریسی….آگئی……اور عطاءاللہ نہ آیا……تو سرپرست صاحب ……اپنے آپ کو…………کہاں چھپائے گا…
میں نے…..کہا………چلو یہ سوچتے ہیں..کہ …..اسکا بدترین……..نتیجہ کیا ھو سکتا….ھے
مالی نقصان…….اور بدنامی…….پورے ضلع میں…….
لیکن میرا تو….صرف مالی…..نقصان…ھوگا….پروگرام….کا اونر owner تو کوئی اور ھے…..میرا تو…………..صرف فنکاروں میں……نام ھے….ا چھا تو صرف…..مالی نقصان…….کے لئے…….اتنی پریشانی…. ……یہ تو ٹھیک نہیں…..مجھے کافی……حوصلہ آگیا……….
پھر میں…نے مثبت…….لائین….پر مزید سوچنا شروع کیا………..
جو …………………ڈوز…..میں نے عطاءاللہ کو………پلائی ھے…..اس کو ………لفٹ…..نہ کرانے کی….ھو سکتا ھے…..یہ کام ………کر جائے…عطاءاللہ آجائے……….اور پھر…ایک اور بات بھی……میرے دماغ…..میں کلک…..ھو رھی تھی……کہ اگر عطاءاللہ….اپنے والد اور بھائی شنو….کے ساتھ مل گیا ھوتا…………..تو والد اور بھائی…..میرے خلاف …..پورے ضلع میں……….اتنی مشکل ….کمپین……کیوں چلاتے…بلکہ عین………فنکشن…..کے……موقع پر تماشہ…..دیکھتے…………
.پھر عطاءاللہ….کو اگر میں نہیں ملا…….تو وہ….تو مجھ……سے……….رابطہ کر کے……مجھے اپنے……..ارادے سے……آگاہ کر سکتا تھا…..
بہرحال ان تمام سوچوں ….کے با وجود…….ایک گہری…دھند تھی………………کچھ بھی ھو سکتا تھا….
دن گزرتے……گئے……اور صرف دو دن……رہ گئے تھے……میں.نے سوچا……ایک….دن پہلے……امتیازی….کو جھنگ….بھیج دونگا…….منصور ملنگی کو….تو لے آئیں……اگر….عطاءاللہ…نہ بھی…….آیا…تو کچھ……سکینڈل تو……….اس کے حصے میں بھی……. آئیں گے……


اس سارے کیس….میں انسانئیت…….کا کوئی…..وجود نہیں تھا……..عطاءاللہ ……ھی کے اسرار پر…….میں اتنے بڑے فنکشن…….اور اتنی……مہنگے……شو میں چلا گیا…………
اور جب عطاءاللہ نے بھائی اور والد کو ……ساری حقیقت بتا دی تھی….تو پھر اتنی نفرت……کس بات کی……کہ ٹکٹ نہیں بکنے دیں گے………اور سب کو….یہ بتائیں گے…..عطاءاللہ……….کو اس پروگرام کا کوئی علم نہیں…اور………وہ پروگرام پر نہیں………آئیگا…..اور پھر….
عطاءاللہ….بھی…..پروگرام……کو گول چکر میں رکھنا چاھتا تھا…..
امتیازی ……جھنگ روانہ ھو گیا……دوسرے دن …..پروگرام کا……ھنگامہ ھونا تھا………ٹکٹ مکمل…..طور پر جام تھے….
ا گر عطاءاللہ اور منصور ملنگی……وقت پر آگئے تو گھنٹے بھر کے…..اندر ساری کسر …….نکل….جائے گی….. ٹکٹوں کی مجھے کوئی…….ٹینشن…..نہیں تھی………ضیا نے تو آنا…………نہیں تھا……..مجھے کتھارسز…….دے سکتا….حوصلہ…..دے سکتا…….یار مجھے اتنا پتہ نہیں تھا….بندہ اتنا ظالم…………………ھو سکتا ھے…..پورے ضلع میں……اتنی بڑی……..talk چل رھی تھی…..عیسےا خیل…یہ سارا قصہ……. talk of the town…….بنا ھوا تھا….اور اس نے…..بغیر……کسی…وضاحت……کے…….مجھ سے ملنا ھی چھوڑ……دیا تھا……جب جگری دوستوں کا. …….یہ حشر تھا….تو عطاءاللہ اینڈ……کمپنی…..کا ..کیا قصور تھا
منور علی ملک……نے خوشی خوشی ……پروگرام کی میزبانی…..قبول کر لی……عطاءاللہ کے بہنوئی……رزاق خان نے ……….گلوکاروں………..افسروں….کے. ….. سیکشن…کی نگرانی……….اور انکا……خیال رکھنا تھا…… کالج کے ایک لائیبر ی کے انچارج نے……….. مقبول خان..ایم این اے کی حویلی کے گی

……..اس بندے کو گزرنے دینا تھا….جس کی پاس ٹکٹ…..موجود ھو گا……
حویلی کی دیواروں میں چار سراخ ……..کئے گئے تھے……….حویلی کی اندر ….کی طرف…………سوراخ پر ٹکٹ والا بیٹھنا……تھا………اور حویلی کی باہر ولی سا ئیڈ پر ٹکٹ لینے……..والا………..اپنا ھاتھ گزار کر…….ٹکٹ وصول کریگا……..
اور پھر دوسرے دن 2.00 بجے کے قریب….طے شدہ پروگرام….کے مطابق………ایک ٹکٹ والی…..دکان پر امتیازی…..نے کہا کہ……..جی یہ میرے ساتھ ……منصور ملنگی.ھے…..اگر عیسےا خیل سے عبدالقیوم خان کا فون آئے……تو بتا دینا کہ…….منصور ملنگی….میانوالی تک پہنچ گیا ھے………………….
پھر کمرمشانی سے ایک دکان سے تصدیق ھوئی…..کہ..منصورملنگی یہاں سے گزر گیا ھے……..پھر ٹھیک پانچ بجکر ….پندرہ منٹ پر…………منصر ملنگی کی گاڑی……….میری بیٹھک کے….ائیریا…..میں داخل ھوئی……………..
.پندرہ منٹوں ………میں…..بڑا رش لگ گیا…………
لوگ منصور ملنگی کے گرد……….ابھی رش کئے ھوئے تھے…
.کہ پانچ بج کر تیس منٹوں میں عطا ءاللہ کی……خوبصورت….گاڑی میری بیٹھک کے ائیریا میں پہنچی
عیسے ا خیل دور تے نئی…قسط–33
دونوں بڑے فنکار…..جن پر پورے میوزک شو…..انحصار تھا….وہ اتنی سازشوں…..اور………رکاوٹوں کے بعد…میری آنکھوں … کے سامنے….میری اپنی بیٹھک میں …..موجود تھے…………بے یقینی….کی فضا …………..پورے ضلع میں بنا دینے پر ………..کچھ لوگوں نے بڑی محنت….کی تھی………….اور میں نے صرف……یہی سوچا کہ…..زیادہ سے
زیادہ…………مجھے مالی نقصان ھو گا…….نا…………..خیر ھے ھونے دو………بعض اوقات ھم……..حوصلہ کھو دینے… سے مصیبتوں…….کو اور بڑھا دیتے ھیں…….
جب تک…..آپ لو گوں کے اندر تک انکو…….نہیں جانتے…..اور جنرل انسانی …..نفسیات…..کو نہیں سمجھ ……….سکتے آپ کامیابیا ں……نہیں سمیٹ سکتے
……………………
میں سوچ رھا تھا کہ رھا تھا ان فنکاروں کی کچھ انٹرٹینمنٹ.. …کی جائے …کچھ انکو کھلایا پلایا جائے…….کہ اتنے میں عطاءاللہ نے کہا…………..
قیوم بھائی…..آئیں ذرا منصور کے ساتھ بازار کا چکر لگاتے ………ھیں. یہ آئیڈیا ………..بڑا اچھا تھا   -ھم عیسے ا خیل اڈے کی طرف سے بازار میں داخل ھوئے………عطاءاللہ….کی کار میں….فرنٹ پر منصور ملنگی بیٹھا تھا…….عطاءاللہ پہلے گئیر…..میں کار کو ڈرائیو…کر رھا تھا….پچھلی……سیٹوں پر …..میرے سمیت ……تین آدمی تھے…………. …..اللہ کی شان دیکھیں……اور یقین کریں………..کہ ھر دکاندار……دکان چھوڑ کر عطاءاللہ اور……..منصور ملنگی کو ملنے. …کے لئے…….کار کی طرف….آرھا تھا……ھر منٹ پر کار کو بریک لگ رھی تھی……اور 90 فیصد. . ..دکاندار……اپنی اپنی………….دکانوں ………میں سٹینڈنگ……پوزیشن میں کھڑے تھے…….
اس کام پر ھمارا گھنٹے سے زیادہ ٹائم لگ گیا…….بے یقینی کی فضا………مکلمل طور پر ختم ھو گئی……….بازار سے فارغ……..ھو کر عطاءاللہ نے کہا………………..قیوم بھائی……………….منصور ملنگی آج میرا مہمان ھو گا………وہ ……..اور منصور ملنگی…….مجھ سے….سائیڈ پر ھو گئے…….
سرپرست اعلی ا کے گھر…..پر بیوروکریسی…..کا اکٹھ تھا……..اور مصروفیئت……….کی وجہ سے وھاں میں نہیں………….جا سکتا تھا…….
اور میرے گھر میں تین گلوکار…..اپنی اہنی کوچ.. میں…8/9/10 …..بندوں کے ساتھ آرھے تھے……………گننے کے لحاظ سے………….بندے دونوں طرف …..بس برابر ھی تھے……میں نے سوچا…….میرے مہمانوں کے لئے…….آسان نسخہ.کیا ھے…………..میں نے ایک اپنے پرانے عقیدت مند……….میرا کندی…..کو بلایا…میں نے اسے کہا دنبہ…….ڈھونڈنا بھی ھے………زبح بھی کروانا ھے…پکوانا بھی ھے……..اور گھر روٹی پکانے والی…………..پیشہ ور خواتین……..کو بلایا……..ایک …..پارٹی….ایوب نیازی…..کی میرے سامنے آگئی……..تپاک سے ملے…………………ایوب نیازی سے میں نے کہا……..یہ تمہارا اپنا گھر ھے……….میرا کندی آپکو روٹی کھلاتا ھے….ایوب کے ساتھ 8/9بندے تھے…….بعد میں جو دوسرے فنکار آرھے ھیں…….انکو………تسلی دینا…….جب سب روٹی کھا لیں………تو اکٹھے مل کے آنا……..مقبول خان ایم این اے کی باھر والی حویلی میں پروگرام………ھو رھا ھے…..میں گیٹ کے اندر سے…………..خود آپکو اندر جانے کی مدد کرونگا……….ورنہ آپکو اندر کوئی نہیں. ………………….جانے دیگا………ایوب مطمعن ھو گیا……………….میں پروگرام والی سائیڈ پر چلا گیا………….میں نے سڑک پر پہنچ کر دیکھا…..بنوں روڈ میلوں تک بندوں سے……..پر تھی…….صرف انسانوں کے سر دیکھے جا سکتے تھے…….پروگرام والی جگہ تک جانا مشکل ھو رھا تھا……بڑی مشکل سے میں گیٹ کے اندر جا سکا تھا……..
ایک بہت بڑی کمزوری…………….جلد ھی میرےسامنے آگئی…….جسکا اب کوئی علاج نہیں ھو سکتا تھا………………………حویلی………کی دیواروں…..میں…………………
ٹکٹ لینے کے لئے………….سوراخ صرف چار تھے………جبکہ بندوں کا طوفان………بہت زیادہ تھا….کم ازکم……..بیس….سوراخوں کی ضرورت تھی…..شاید………یہ بھی کم ھوتے………7 بجے شام سے ٹکٹ شروع ھوئے……………اور دس بجے تک ھزاروں کا باھر موجود……………رھا
ادھر اندر سٹیج پر……………………….سے گزر کر ……..عطاءاللہ……………سارے مجمع کو سلام کرتے ھوئے……افسروں کے سیکشن…..میں…….پہنچ گیا… …..
جیسے ھی عطاءاللہ وھاں پہنچا…………………سرپرست اعلی اور ڈپٹی کمشنر کھڑے ھو کر اسے ملنے لگے..اور…پھر دیکھتے ھی دیکھتے……… ………..سب افسر ایس پی میانوالی اور اے.سی لکی…….اے.سی میانوالی………..اور اے.سی عیسےا خیل…………اور دوسرے محکموں…….کے سارے افسران عطاءاللہ کو اٹھ کر ملے………….. سرپست اعلی کا چہرہ خوشی سے ……………..دیکھنے والا تھا……….پھر عطا ءاللہ سٹیج کے اوپر……..سے…..ھو کر گلوکاروں کے کیبن. . . ……..میں چلا گیا………………………..منورعلی ملک……. ……پروگرام کے میزبان کے طور پر……………..سٹیج پر آگیا……..اس نے اپنی سوجھ بوجھ کے مطابق…………آنے والے مہمانوں کا………بیروکریسی کا بڑے پیارے انداز میں شکریہ ادا کیا…….عوام کے لئے چند جملے بولے…………..فنکاروں کا تعارف کروایا……………….اور ابھی ھزاروں کا مجمع حویلی کے باھر موجود تھا……………..


اور ھزاروں کا مجمع حویلی ……………..کے اندر بھی موجود تھا……………..کہ منور علی نے ایوب نیازی کو گانے کی .دعوت دے دی………………..اتنے بڑے مجمع میں …. .اپنا گیت شروع کیا………..سٹیج کا پہلا گانا شروع ھو گیا………………….حویلی سے باھر کے لوگ جو کمرمشانی…..لکی مروت………….کالاباغ……….میانوالی……. …..اور کراچی اور…دور دراز کے دھہا توں سے کئی کئی گروپوں میں آئے تھے………وہ محسوس کر نے لگے…..کہ…ان چار سوراخوں سے……تو……..تین دن تک ھمیں ٹکٹ نہیں مل سکتا….
ایوب نیازی……………..کامیابی سے دو گیت گا کر چلا… ..گیا……….. اور ھوٹنگ کا بڑا خطرہ تھا ……………لیکن وہ صاف بچ گیا……………..ادھر باھر والا ھزاروں کا مجمع….صبر……………اور حوصلے کے ساتھ چار سوراخوں پر ٹکٹ لینے کی کوشش کرتا رھا…………….
فرینڈز…………….لکھنے والا اردو کی-بورڈ کام کرنا چھوڑ گیا ھے…

-عیسےا خیل دور تے نئی..قسط-34
عطاءاللہ اور منصور ملنگی کو……..عوام نے….بیوروکریسی…نے.. دیکھ لیا….چھوٹے فنکاروں میں سے….ایوب نیازی کامیابی سے گا کر واپس…اپنے کیبن….پر چلا گیا……..میری طرف…..سے کئے گئے. تمام وعدے….پورے ھوئے……..البتہ…..سرپرست اعلی نے……ٹیکس…والوں پر اثر انداز………ھونے…..کے لئے…….ذرا بھی…..کوشش نہیں….کی…. .اور اب وہ تمام افسروں کے ….سامنے سینہ تان…….کے……..اس تاثر ….کے ساتھ …..بیٹھا تھا….کہ سارا خرچہ…..اور ساری…….کوشش….سرپرست صاحب نے خود کی……یہ سارا انتظام……اتنا بڑا سٹیج…..سب ان افسروں کے …….لئے…….ان کی خاطر کیا ھے………ادھر میں…..مکمل……ایمانداری کے…..ساتھ…..اپنی کمنٹمنٹ…..پوری کرتا رھا….. لیکن میرے ساتھ….عطاءاللہ کی سائیڈ سے…….بھی زیادتی……کرنے…..کی پوری پوری….کوشش….ھوئی………
مجھے معلوم تھا …….کسی بھی وقت ٹیکس والے آکر ٹکٹ اپنے قابو میں کر لیں گے…………یہ ایک…………..اعصابی جنگ تھی….جو میں لڑ رھا تھا…………..مجھے اپنے اندر سے…………یوں لگ رھا تھا………اگر میرے …..ساتھ مزید……کوئی زیادتی………..ھوئی……..تو میں بھی ……..یہی سلوک………………سب سے………. کرون گا……………یہ نہیں …….دیکھونگا…..کہ اس کی زد میں کون……..آرھا ھے……………..اور پھر………
ٹیکس والے…….آگئے……سارے ٹکٹ انہوں نے اپنے قبضے میں کر لئے……. ٹکٹوں کی کاونٹر فائیل انکے قبضے……….میں ….اور…..پیسے میں نے لے لئے……. …………..مجھے سرپرست …..کے خلاف..بہت سخت ردعمل…..اپنے ذھن میں محسوس ھوا…….دیکھو ……وہ کتنی……….شان…..سے بیٹھا enjoy کر رھا ھے………اور میرا….سب کچھ…….ٹیکس والے…..لے گئے…..اب مجھے ان کے سامنے……..میانوالی……پیشی…..دینی ھو گی……..ایک اچھا خاصہ….ڈسکاونٹ……..مجھے انکے حوالے کرنا پڑے گا……………….
ابھی تک ھزاروں لوگوں کو ٹکٹ…….نہیں مل سکا تھا…… یہ بھی……….ایک علیدہ ٹینشن…..تھی…………..


پھر منور علی نے……….سٹیج پر………دوسرے فنکار…….شفیع وتہ خیلوی……..کو سٹیج پر بلا لیا……………شفیع اپنے سازندوں کے ساتھ………….آکر سٹیج پر بیٹھ……..گیا…اس کے ساتھ………..ایک پندرہ سال کا لڑکا…………علی عمران …….جو کہ آج…………..خود مائع ناز لوک فنکار ھے…….اور عیسےا خیل میں………6 مارچ کو……میرے بیٹے منصور بلال کی شادی……پر گا کر گیا ھے…..وہ بھی……ایک………
بچے…….کی حیثیئت…سے اسکے ساتھ سٹیج پر آکر بیٹھ گیا..

شفیع وتہ خیلوی………نے میانوالی ملاقات کے ……..دوران……….
ایک ……….چیلنج…دیا تھا……………کہ اب پتہ چلے گا….عطاءاللہ خان کو…………..کہ اصل موسیقی کیا ھوتی ھے…….جب شفیع……………سٹیج پر گانے کے لئے بیٹھا……….
تو اس نے منفرد……….موسیقی……..کا …….. خاکہ بنایا. …..اس نے……..ایک راگ……..الاپنے کا……..آئیڈیا……سوچا……….. اور پھر …………راگ شروع…………..کر دیا………..ایک منٹ …….تک امن کے ساتھ گزرا…………..دوسرے ……منٹ میں………ایک…………..گنڈھیری………..فضا…..میں…….بلند……………..ھوئی………..اور پھر اس نے…………شفیع وتہ خیلوی کا رخ کر لیا………..اور سیدھی……آکے اسکے…………کندھے…..سے آکر……ٹکرائی………..اور نیچے آکے علی عمران………..کے ھاتھ کے قریب………..گری………….وہ ایک……….بچہ پارٹی تھا….اس نے………………اس نے اٹھا کر……. . ….منہ میں ڈال لی………..شفیع ……………..نے ایک منجھے ھوئے ………………فنکار کی طرح………………….اسے پی جانا تھا………….اور راگ…….مختصر……کر کے……..کوئی……کڑاکے دار………….گیت شروع کر نا چاھیئے تھا…………..کیونکہ گنڈیری……..کا علم تو ………صرف..مارنے والے کو………….شفیع……….کو ……اور اللہ کو تھا………باقی تو کسی کو علم نہیں تھا……………کہ فنکار کے ساتھ………..اتنی
بڑی واردات………ھو گئی ھے………..لیکن…….اس نے ایک ھی مطلب…………نکالا………………..ععوام نے مجھے رد کر دیا ھے…….اس کے ساتھ ھی……………..اس نے ھامونیئم بند کیا…..اور سازندوں سمیت……….اٹھ کر جانے لگا……..تو عوام نے………………..اسے ھارا ھوا فنکار سمجھ کر……….اس بات کو ……………..مزید enjoy کیا……………..اور بطور ھوٹنگ………………بہت پر جوش طریقے سے…………..تالی بجا دی………………جب وہ انتہائی شرمندہ ھو کر…………گلوکاروں کے کیبن ………..واپس ایا……….تو عطاءاللہ کے چہرے پر…..مسکراھٹ…….تھی……..وہ دل ھی دل میں…….سوچ رھا تھا…………………….نا……..نا اور کرو مقابلہ………….یہ لوگ…………صرف مجھے برداشت………کر سکتے ھیں…………….اتنے بڑے مجمع میں………راگ شروع کر دیا……
ابھی منصور ملنگی………………….کا بھی……….حشر دیکھنا…..

پھر منور علی ملک نے بڑے خوبصورت…………..انداز میں منصور ملنگی کو گانے کی دعوت دی……
اور پھر جیسے ھی منصور ملنگی کا پہلا گیت شروع ھوا…………………..حویلی کے باھر ………..کا سینکڑوں لوگوں………………….کا مجمع…………حویلی . کی. …اچھی……..خاصی دیوار پھلاندنے لگ گیا…………………حویلی…….کی اندر والی سائیڈ…. ……. پر……………………..پولیس…کے کل پندرہ…….بیس……سپاھی تھے……….انہوں نے ان پھلانگنے ……والوں کو بہت روکا………….لیکن…………مجال ھے……….کسی کو روک سکے ھوں………………………..
بس اسکے بعد…………………میں اس سارے پروگرام سے………………..مکمل طور پر باغی ھو چکا تھا………… میں نے سوچا…… ……..سب نے مجھے دھوکا دیا.. ……….میرا بھی…………………اگر بس چلا تو……………..سب کے ساتھ……..یہی کچھ کرونگا…………………
منصور ملنگی………..کے سٹیج پر آجانے کے بعد………عطاءاللہ…………………مکمل یقین کے ………..ساتھ اس انتظار میں تھا کہ شاید مشکل سے ایک گانا نکال لے………………..یا شاید…………دو گانے……………..اس کے بعد یہ سٹیج سے نہیں ھٹے گا………………..تو عوام ھوٹنگ کرکے اتاریں گے………………….اور پھر رات میری………اپنی ھو گی……………اور پھر نتیجہ………………..عطاءاللہ ……….ھیرو…….اور باقی سب………زیرو
منصور ملنگی………….نے ایک گانا گایا……………..بڑا ھٹ
دوسرا گانا……..گایا………..بڑا ھٹ………………..تیسرا گانا گایا……………بڑا ھٹ……… اس کے بعد اس نے دوھڑے ماھیئے….گانا شروع کئے………….بہت طویل………………اور بہت ھی ھٹ……. …………جب منصور ملنگی کو ……….ابھی آدھا گھنٹہ ھوا تھا………………. تو عطاءاللہ پر ھلکی …….سی….پریشانی…..تھی…..لیکن اس نے اہنے آپ کو حوصلہ دلایا……………..کہ شاید دس……منٹ اور چلے ……………..جب اسکو پچاس منٹ گزر گئے………………اور عوام…..کی داد……….اور…..واہ واہ پورے جوش میں رھی……………….تو وہ انتہائی………خوف میں چلا گیا……..
پھر ایک اور عجیب واقعہ ھو گیا………عطا ءاللہ کے انتہائی قریبی آدمی نے………………عطاءاللہ کو جا کر آگاہ کیا…………..کہ فلاں فلاں …….مخالف لوگ جن کے ساتھ تم نے ……..کبھی زیادتی…..کی تھی………..وہ ٹماٹروں…….اور انڈوں سمیت………………ھوٹنگ کے لئے سپیشل آئے ھوئے ھیں…………….. اور ملنگی کو بھی وھی ھٹ کرا رھے ھیں……….کیونکہ وہ تیس چالیس بندے ھیں……………..
عطاءاللہ نے دیکھا………….. کہ ملنگی…………کو جتنی داد مل رھی ھے………………اسے زندگی میں کبھی بھی نہیں ملی……………..ضرور اسکے پیچھے……………کوئی اور سچ ھے..
میں پروگرام کے سٹیج سے بہت دور…………..حویلی کے گیٹ کے پاس دور سے پروگرام کو……………..عدم دلچسپی کے ساتھ……………دیکھ رھا تھا…………….مجھے نا کسی ھیرو سے دلچسپی رھی تھی………..نا زیرو سے………………….. میں نے دیکھا کہ منصور ملنگی سٹیج سے جا رھا ھے………….اور منور علی ملک………….عطاءاللہ کو دعوت دے رھا ھے……………سٹیج. پر وہ نہ پہنچا……..تین منٹ گزر گئے……………..اور پھر دس منٹ…………….جب یہ بات سٹیج کے قریب یٹھے…..ھوئے………..لوگوں اور افسروں پر واضع ھو ئی کہ عطا ءاللہ…………….فنکاروں کے کیبن میں کہیں بھی نہیں ھے…..اور وہ شاید ……………. پورے پنڈال میں کہیں بھی………..نہیں ھے……………تو وہ پہلا شخص…….جو اپنی کرسی سے اٹھا…………….اللہ کی شان……………..وہ سرپرست اعلی صاحب تھا…………وہ تیزی سے گیٹ کی طرف………..لپکا………….باھر اپنی …………..گاڑی میں گھسا…………..اور سیدھا عطاءاللہ کے گھر…پنہچا………عطاءاللہ اتنا پاگل نہیں تھا………………..کہ…….وہ…. گھر جاتا…….
باقی اگلی قسط میں………….
آپکا مخلص نا چیز عبدالقیوم خان-

عیسےاخیل دور تے نئی..قسط–35
دوستو…یہ سارا واقعہ 1978 کا ھے جب میری عمر …..29 سال تھی…..عطاءاللہ کو ملکی سطح کی مارکیٹ میں…….ایک انتہائی پاپولر……فنکار کی حیثیئت میں آئے ھوئے…..دو سال ھو رھے……تھے….میں اس وقت ھائی سکول عیسےاخیل میں بطور سائینس ٹیچر کام کر رھا تھا……اس وقت کے میرے بے شمار…..شاگرد….اور علاقائی لوگ اس پروگرام …….کے آنکھوں دیکھے………..گواہ ھیں……………
…………………جب عطا ءاللہ کو ڈھونڈنے ………کے لئے سرپرست اعلےا…….بڑی تیزی سے عطاءاللہ……کو ڈھونڈنے……..اور واپس……لانے کے لئے…… ….وھاں سے غایئب ھوا……تو اسکے فوری بعد……جس آدمی نے……اپنی کرسی…..چھوڑ کر…وھاں سے جلد از جلد………نکلنے کی ٹھانی…..وہ ڈپٹی کمشنر تھا……وہ بھانپ………گیا……کوئی بڑا……..فساد ھونے والا…….ھے……………یہاں سے نکلو……اس کے ساتھ…..سب افسروں…..نے باھر……کی طرف….منہ کیا اور منٹوں ….سیکنٹوں……..میں غائیب ھو گئے…………
……………………..میں فنکشن کی جگہ سے دور ٹکٹوں والے کارکنوں………..کے پاس…..یہی اندازے لگا رھا تھا……کہ پتہ نہیں عطاءاللہ…….کیوں اتنی دیر کر رھا ھے…………مجھے یہ بالکل……..پتہ نہیں…..تھا…….کہ ایک بہت بڑا ………اور …………اصلی مسلہ….پیدا ھو چکا ھے………….سٹیج کے بالکل قریب……بیٹھے ھوئے…..لوگوں…کو عطاءاللہ کے غائیب………ھو جانے کی …….جونہی…..خبر ھو ئی……ان میں سے دس پندرہ……….بندے………بڑی…..تیزی سے…..متحرک….ھوئے…………
…………………………….اور پھر میں نے حویلی کے گیٹ ……کے قریب……..بیٹھ…..کر اچانک…..دیکھا……کہ سٹیج…..کے اوپر…لائیٹوں والا……..سارا ٹینٹ ………بڑی تیزی سے…….نیچے….سٹیج کے ……اوپر گرا………اور پنڈال میں اندھیرا…………چھا گیا…………..
پہلے پانچ منٹوں……….میں کوئی…….چیز نظر نہیں آرھی تھی…………….میری حالت تو …………….پہلے ھی بہت……غیر تھی…………زندگی کے سارے فلسفے………ایک سائیڈ پر…..رہ گئے تھے…………دانش مندی…… حوصلے…..اور…….صبر کے……..سارے……سبق……….دبیز پردوں…………کے پیچھے……..چلے گئے………….دھوکہ……..فراڈ………..جھوٹ……….بکواس…….. …………………………………..
گھپ……اندھیرے………میں ………مجھے محسوس ھوا…….کہ کم از کم…………..سو…….دو سو……بندوں کے سر کا اوپر والا………….حصہ……..بہت بڑا…….نظر….آرھا …………. ھے
میں نے اپنے آپ سے خود کلامی……کی……..یا اللہ یہ مجھے …………….کیا ھو گیا…..ھے……….200 سے زیادہ بندوں…………..کے سر بہت بڑے……….ھو گئے ھیں……….یا اللہ………….. یہ نا ممکن ھے………..شاید میرے ذھن….پر بوجھ………….آگیا ھے……
میں نے اپنے دونوں ھاتھ……..اپنے سر پر……….رکھے…….اور اللہ سے ………..اپنے گناھوں کی معافی ………مانگنی شروع ……کی……..یا اللہ مجھے بچا لے………….
پھر میں نے دیکھا ……….ان میں سے کچھ بڑے سر ….دیواروں ………….کی طرف بھاگ رھے ھیں…….اور کچھ سیدھے……………میری طرف………بھاگ رھے ھیں…………………یا اللہ یہ اتنےبڑے بڑے…………سر…..میری طرف………….کیوں آرھے ھیں…………………میں گیٹ کے بالکل…..قریب کھڑا تھا………………..میں نے سوچا کہ اس سے……..پہلے کہ……..وہ بڑے سر ………مجھے پکڑ لیں.. ..اور پھر یہ بھی………….نہیں معلوم کہ…….یہ جن…….ھیں یا کوئی…………اور مخلوق…………..میں گیٹ میں سے نکل جاتا ھوں……………………لیکن میرے پاوں شل تھے………اور وہ…………میرے بالکل نزدیک……..پہنچ چکے تھے…………..اچانک مجھ سے…..قریبی…..فاصلے پر ایک بڑا سر زمین پر آگرا…………..اور ایک دری میرے قدموں………….میں آلگی……..وہ بڑا سر…………اپنی جگہ سے اٹھا………اس کا سر نارمل تھا…………………………اچھا یہ جن……….نہیں………انسان ھیں………….اور ان تمام انسانوں……..کے سروں پر دریاں………………ھیں………..ویری گڈ…………….یعنی میں بالکل……..ٹھیک ھوں………………..یعنی میں بچ گیا ھوں…………….وہ میرے قدموں سے دری اٹھا نے لگا………انسان قرار پانے ……….کے بعد…………..میں نے اسے کہا…………..اوئے…………..یہ کیا ڈرامہ ھے……….اس نے سرپرست اعلی کو…. ……گردان میں… ….صرف پینتیس گالیاں نکالیں…………………..اور دو تین عطاءاللہ کو……..اور کہا ھمارے ساتھ فراڈ…………..ھوا ھے……..
ھوا یہ تھا کہ جب عطاءاللہ ………………………پنڈال سے بھاگ گیا……………….اور اسکے سٹیج پر ……..آنے کی کوئی امید نہ رھی………………….تو انتقامی………کروائی کرتے ھوئے…..کچھ لوگوں نے…………….ٹینٹ کو رسیاں کاٹ کر نیچے گرایا…………….اور دریاں سر پر رکھ کر مختلف سمتوں……………..میں بھاگے………………..موسیقی……کا مقابلہ………………..ایک اور مقابلے…………میں بدل چکا تھا…………………کون کتنی…….دریاں اٹھا سکتا ھے….
…………………… میں یہ سب دیکھتا رھا………………اور
پھر………………..میں نے………اپنے…..اعصاب کو جمع کیا………
………………………………..میں نے سوچا.. یہ تو اب جنگل کا قانون……………….. بن چکا ھے…………….. تم بھی کوئی قانون…..اپنی طرف……………..سے لاگو کر دو…………..ان سب پر……میں نے خود سے دل ھی دل میں کہا……
پروگرام میرا ……………..سب…….. damage ھو چکا ھے……….میں سب کو………….اس پروگرام کو………………disown…………..کرتا ھوں…….میرا کسی سے کوئی تعلق نہیں ھے……………………….ٹکٹوں کے جو بھی پیسے………………مجھے ملنے تھے……………… مل چکے تھے.. ……………میرا اب یہاں… ………کچھ بھی نہیں ھے………..میں……….وھاں سے رفو چکر ھو گیا……… ……….میں بھی اپنے گھر نہیں گیا…………تین دن تک………………عطاءاللہ کی طرح……………….روپوش رھا…………….
عطاءاللہ کو اسکے والد نے کہا………………دن کی روشنی میں کم از کم….ایک سال تک…………..میانوالی……………میں…تمہاری کار کسی کو نظر نہ آئے……… …. ورنہ کچھ بھی ھو سکتا ھے……………..
منور علی نے تیسرے دن عطاءاللہ سے اسکے گھر میں گپ شپ کے دوران پوچھا……………….تم نے قیوم خان………کے ساتھ………………بہت برا کیا…………….عطاءاللہ نے…اداس منہ بنا کر کہا…………….میں زندگی میں کبھی بھی…… اسکا سامنا نہیں کر سکونگا…………………
شفیع وتہ خیلوی……………..نے میانوالی میں اچانک میرے..قریب…………….آکر بریک ماری……………….کار سے اترا……………کار کے بونٹ پر……………..ٹیک لگائی…….جیب سے…….ایک کیسٹ نکالی………اور کہا…….. اس میں صرف گالیاں…………….ھیں……………سرپرست کو اور عطاءاللہ کو……………میں نے کہا تم حق پر ھو………
کچھ عرصہ……..بعد…………..شاید ھفتہ بعد ضیا مل گیا…………….معمول کے مطابق……………..گپ شپ چلی…………
چھ ماہ بعد عطاءاللہ……………… میری بیٹھک کے سامنے سے گزرتے ھوئے……………کار کو اندر لے آیا………معمول کی گپ شپ رھی ……..کوئی گلہ شکوہ نہ ھوا…..
آپکا مخلص نا چیز عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی.قسط-36
معاشرے میں اگر 100 بندے move کر رھے ھوں تو کل چہرے 300/400 چہرے موجود رھتے ھیں…. ھر چہرے کے……….پیچھے چھپے ھوئے……..تین چار…..اور چہرے…………دوسرے لفظوں میں…..ھم ھمیشہ سے….ایک ……دوغلے معاشرے میں رھتے ……ھیں……..ھم جب بھی……..ایک دوسرے کے……سامنے آتے ھیں….بہت اچھا …بننے کی کوشش کرتے ھیں……..لیکن ھمارے کچھ……..میلے…..کچھ گندے….چہرے …..موجود رھتے ھیں………جو کسی بھی وقت فنکشنل.ھوسکتے..ھیں………………………اور…………………….یہ المیہ…….انسانوں……کے ساتھ صدیوں سے ھے…… …………رب کائنات نے اسے……صرف ایک چہرے میں بدلنے……..کے لئے….بے شمار ………پیغمبر ……زمین پر بھیجے……. اور ایک چہرے والی… …..ماں بھیجی………محمد صلی االلہ علیہ و آلہ وسلم ……جیسی خوبصورت….ما فوق الفطرت……اور ….پاکیزہ ھستی بھیجی……دین اسلام بھیجا. . ………. ایک چہرے کے پیچھے…….دو دو چہرے پھر بھی چلتے رھے…..اسلام اور اسلامی حکومتیں 22 لاکھ مربع میل تک پھیل گیئں….بندوں کے………میلے چہروں …..کا صفایا ھوتا رھا………….مولا امام حسین… نے….اپنے اجلے..چیہرے کو……قائم دائم رکھنے کے……..لئے اہنے پورے کنبے ……..کی زندگیاں قربان ..کر دیں…….
شیطان کا وعدہ ……تھا. …اے رب ….مجھے تیری عزت کی قسم…..میں قیامت تک تیرے …….بندوں کو راہ حق سے………..بھٹکاتا ……رھونگا……….وہ بندوں کے اندر ……..میلے چہرے …….اور میلی سوچ ……..مسلسل پیدا کرتا رھے گا……یہ المیہ…..بہت پرانا…..ھے…..
دو اور تین چہرے والے…..لوگ .. صاف ظاھر ھے….کہ منافق…..ھوتے ھیں……
ھر منافق اپنی زندگی کی کامیابیوں کے لئے. ….. …..اپنی پلاننگ………..اور…….ایک میلی…کہانی ڈیزائن کرتا ھے……اور ..اللہ ………ھر نیک اور بد انسان … ….کی…..زندگی کے ….ارد گرد اپنی کہانی ڈیزائین…..کرتا ھے….ھر منافق کی ……کہانی……بالآخر…..منہ کے بل گرتی ھے…….اور اللہ…..کی کہانی …….سزا بن کے…..اسکے گلے میں لٹک جاتی ھے…………..اور دنیا والے اسکا انجام دیکھتے ھیں………….
میری زندگی…..سکون کے ساتھ گزر رھی تھی…….میرے پیچھے…………..ایک بڑے زمیندار……باپ….کا تاثر بھی تھا…………….مجھے کیا ضرورت تھی…………..زیادہ…..چھلانگ….مادنے کی……….عقلمندی…..علم………اور سخت محنت… …..کسی بندے کو …..امیر بنا سکتی……تو باقی لوگوں کے لئے……یہ ..رستہ اتنا………مشکل تو نہیں تھا……
اللہ ……..کیوں کسی کو……..چھپر پھاڑ ……..کے دیتا ھے…. ..اور بڑے بڑے اللہ کے ولیوں ……کے گھروں میں کیوں فاقے……دیتا ھے……یہ اللہ کا راز ھے…….اسکی اپنی مرضی ھے………..ھزاروں….کی تعداد ………میں………لوگ بھی آئے…..فنکار بھی آئے……..بیرو کریسی بھی آئی………شاندار سٹیج بھی سجا…….سب کچھ موجود تھا………….پیسہ…..نہیں آیا
یہ ایک بڑا سبق تھا…. .میں کسی سے کیوں گلہ کرتا…..
سرپرست اعلی……..نے سوچا…..پیسہ…….تو اس بیوقوف……………..کا ھے……میں نے صرف…….بیرو کریسی………کو بلانا ھے……کھانا کھلانا ھے……اشتہار پر بھی…..ویسے ………ھی… صرف میرا نام ھے…….یہ سارا فنکشن بنا…….بنایا میرا ھے………ٹیکس والوں کے لئے میں نے کوئی کوشش……نہیں کرنی…..ٹیکس بھی………یہ پاگل خود بھرے گا………….
پھر سب کچھ سرپرست کی خواھش …..کے مطابق ھوا تھا……عطاءاللہ پوری بیوروکریسی……….کو خود آکے ملا……….سٹیج………..ھزاروں لوگ ……تمام فنکار.. . ….بیروکریسی…… سب کچھ تھا…………
لیکن آخری …….منظر میں وہ .. … .پاگلوں……کی طرح ان………سب افسروں کو اکیلا چھوڑ کر………..عطاءاللہ کے ہیچھے بھاگ رھا تھا………………………….عطاءاللہ نہ ملا………تو میری عزت……………چلی جائے گی………
نہ عطاءاللہ ملا……. ………………………..نہ عزت ملی….
بہت بڑا فنکار………بننے کی کوشش میں……..شفیع وتہ خیلوی کو گنڈیری لگی……………….
عطاءاللہ اینڈ کمپنی……………..نے سارے چہرے استعمال کئے…….پورے ضلع میں ٹکٹ بند کرائے……منصور ملنگی کو پورے بازار…………….میں پھرا کر……………….ایک بہت اچھا………اور عظیم انسان کا ………..روپ دکھایا……….اور
آخری منظر میں ………….وھی عطاءاللہ……….کالے رنگ………کی لوئی اوڑھ کر………..پچھلی……سائیڈ سے دیوار پھلانگ….کر……….دیوار کی دوسری جانب……………جا گرا….اور ھانپتا…………………ھوا اپنی کار میں جا گھسا……..اور ماسٹر وزیر کے گھر جا کر پناہ لی…………………….اتنی بڑی واردات کر کے…….اور سارے ضلع کی ……………..بھانت بھانت بولیوں کا شکار بنا………… . کوئی کیا کہتا تھا……….. کوئی کیا……………………………..
مجھ سے کالج کے ایک لیکچرر…….نے دوسرےدن کہا…….کہ ھمارا یہ اندازہ ھے…آپکو 80 ھزار روپیئے بچے ھونگے……….آپکا اندازہ بالکل ٹھیک ھے…….سکول کے ٹیچروں نے کہا ھمارا اندازہ………………ھے….آپکو 50 ھزار روپیئے بچے ھیں……………….. میں نے کہا آپکا اندازہ…….بالکل ٹھیک ھے……………….دل میں کہا……………..کاش !!
عیسےا خیل دور تے نئی.قسط–37
یہ 1986 کا زمانہ تھا……میں پچھلے چار….پانچ سال سے….کھلانوالہ ھائی سکول میں بطور سائینس ٹیچر…..کام کر رھا تھا…ضیا بھی اسی سکول میں……ٹیچر تھا…..ضیا کی وجی سے………زندگی….میں کچھ….انٹر ٹینمنٹ…..بھی تھی….کچھ مسائیل بھی تھے….کہ سکول بہت دور تھا …..آنے جانے میں…….کافی تکلیف کا سامنا رھتا تھا……
میرے بیٹے ……..کاشی کو……پچھلے ٹائیم …..محمد دین پڑھا نے آتا تھا………….ایک دن اس نے مجھے کہا کہ آپ کے گھر کے سامنے مڈل سکول میں ….ھیڈماسٹری…کی سیٹ خالی ھے……یہاں کیوں نہیں…………..آجاتے…
بات میرے دل کو لگی……….لکیر…….کے فقیر…..ھونے میں کیا مزہ ھے………………میں نے اسکے لئے………ٹرائی…….شروع کر دی……………..اور پھر….سیاسیوں …..نے معجزہ کر دکھایا…..
………………………..میرا تبادلہ مڈل سکول میں ھو گیا……..جہاں صرف میری…….مرضی……چلنی تھی………………..میں نے کرسی سنبھال لی…..میرا پہلا دن شروع ھو گیا…………….
محمد دین نے سکول کے معاملا ت پر ھلکی..پھلکی بریفنگ دی………کلاسوں کا visit کروایا……….
اچھا سب ملازموں کو بلوائیے …….میں انکی شکل تو دیکھ لوں………….محمد دین نے………تھوڑا پریشان ھو کر میری ………طرف دیکھا……… ….وہ جی دراصل……..مانو چپڑاسی ھے……….وہ دو تین مہینوں سے سکول نہیں آتا….. .دراصل وہ حمید خان AEO کی روٹی ناشتہ پکاتا ھے………….اور
گھانڑی موچی…………سکول نہیں آتا… …..وہ بڑا بد تمیز ھے…….اسے آپ رھنے دیں……آگے سے بد تمیزی کریگا …………….
گھاںڑی اس وقت کہاں ھے……… …..جی گھر میں ھے اور گھر سکول کے سامنے ھے…..
میں نے ایک نوکر کو……کہا………جاو گھانڑی کو کہو تمہیں ھیڈماسٹر …. . ……..بلا رھا ھے……
گھانڑی بیت ………..بہت غصے کی حالت…..میں…….پھوں پھوں…………کرتے دفتر میں داخل ھوا……. ھاں جی…….کیا مسلہ ھے……..؟…….بہت agressive tone میں اس نے مجھ سے ہوچھا
تم اس سکول میں کیا لگے ھوئے ھو………………میں نے اس سے سوال کیا……
جی میں چوکیدار ھوں………………
اور میں اس سکول میں کیا لگا ھوا ھوں…………
آپ ھیڈ ماسٹر ھیں……اور کیا ھیں ؟
اچھا یعنی تم ملازم ھو اور میں ھیڈماسٹر ھوں………….تنخواہ لینی ھے یا نہیں…اگر تنخواہ لینی ھے تو وہ سامنے بینچ پڑا ھے……..اس پر جا کر بیٹھ جاو……….چپ کرکے…..ورنہ محمد دین خان اسکی رپورٹ تیار کریں …اس کو فارغ کر کے …….. . .. بھیج دیں
اس………نے دونوں ھاتھ کمر پر رکھے………….مجھے گھورتے………………ھوئے اسی جگہ پر پھتر کا بت بن………………..کر………..کھڑا رھا…… پھر کہا ٹھیک……….ٹھیک …….واہ بھئی واہ..
………………………………….پھر مڑا اور سیدھا بینچ کی طرف جا کر بیٹھ گیا……
محمد دین خان مانو کو خط………..لکھو……..اگر وہ کل تک سکول نہ ھوا………….تو اسے اگلی تنخواہ نہیں ملے گی………رات کو 8 بجے میرے گھر کا دروازہ…………..کھڑکا…………میں اسکو نیں پہچان رھا تھا…….اس نے عاجزانہ انداز میں آگے بڑھ کر…………………کہا……..سر جی پچھلی خطا معاف کریں……میں آئیندہ سکول میں رھونگا……میرا حمید خان AEO سے کوئی تعلق نہیں ھے
پچھلی غلطیوں کو چھوڑو……..آئیندہ غیر حاضری نہ کرنا….

سکول کے تمام ملازم سکول میں حاضر ……….ھو گئے…..چوتھے دن گھانڑی میرے والد کو سکول میں لے آیا……………..بابا نے مجھے کہا…….صرف اسی غریب پر بس چلتا ھے
نہیں بابا …………….اسے سمجھائیں کہ کم ازکم حاضری تو دے………کل کوئی افسر……چھاپہ مارے تور اسکی تو نوکری ھی چلی جائیگی…………بابا نے اسے کہا اوئے بےغیرت……..تو گھر بیٹھ کر تنخواہ لینا چاھتا ھے….الو دا پٹھا……
عیسےاخیل دور تے نئی.قسط–38
اکھڑے ھو ئے فرش…….پر بیٹھے ھو ئے بچے….انتہائی……تکلیف دہ منظر پیش کر رھے تھے……اساتزہ …..لکڑی کی انتہائی بوسیدہ……کرسیوں پر بئٹھے تھے……..ھیذ ماسٹر … …..کے ..دفتر کی بری حالت تھی…….
میں نے محمد دین سے پوچھا……………آپ انچارج تھے…….آپ نے اس مسلے کو حل کیوں نہیں کیا…………….سر اسکا کیا حل ھو سکتا تھا.. …. ….ھمارے سکول کے فنڈز میں تو اتنی.. ….جان نہیں……پھر اسکا کیا حل ھو سکتا تھا. ……….
حل اسکا میں نکالوں گا….میں نے کہا
وہ کیسے…؟ بس آپ دیکھتے جائیں…..میں نے جواب دیا
میں نے چار بندوں کی……کمیٹی بنائی…..جس میں محمد دین بھی ممبر تھا……………میں نے کہا دو دن کےاندر شہر کے مخیئر حضرات….کی لسٹ بنائیں ……
میں ایک استاد …..کے ساتھ عیسےاخیل ٹاون کمیٹی کے چئیرمین …….کے پاس چلا گیا …..اس کے سامنے سکول کی حالت زار پیش کی…….اور اسے کہا کہ ھم ایک فنکشن کرتے ھیں……..جس میں اسسٹنٹ کمشنر بھی ھو گا…..آپ ھمارے مہمانان گرامی کی سیٹ پر ھونگے……ادھر اس فنڈ کا اعلان کریں…………..جتنا بھی مناسب سمجھیں……..چئیرمین عبداللہ شاہ نے کہا میں پانچ ھزار کا اعلان کرونگا…..
پھر ھم ………پیر بھور شریف کے پاس……….چلے گئے…….انہیں کہا آپ فنکشن کے خاص مہمان ھونگے……..آپ کی تقریر بھی ھو گی…..
اسسٹنٹ کمشنر……………….عیےاخیل……… کو سکول کی حالت بتائی……..آپ فنکشن میں آئیں……آپ کی وجہ سے بہت فنڈ اکھٹے ھو نگے…….اور آپ مہمان جصوصی بھی ھونگے.. ………………………………..وہ مان گیا….
دوسرے دن مخیئر خضرات …کی بہترین لسٹ تیار تھی…. …سب دعوتیں چلی گئیں.. اے- سی عیسےاے خیل کا نام…..پڑھ کر سب کے سب آگئے ………. …..جیسے ھی چئیرمین ٹاون کمیٹی نے……..پانچ ھزار کا اعلان کیا…….مخیئر حضرات میں………..race لگ گئی……روپیہ پینتالیس ھزار اکٹھا ھوا………فنکشن میں بڑی سیاسی و سماجی شخصیات آئیں…….محمددین اور تمام اساتزہ حیران تھے………کہ سب کیا ھو رھا ھے.. …فنکشن میں عیسےاخیل کا ھر اھم آدمی موجود تھا… . .ببلی خان سمیت. .
ھفتےبھر میں……..فرش زبردست……قالین نما …..موٹی دریاں.. .اساتذہ کے بہتریں کرسیاں……..اور ھیڈماسٹر کا دفتر. . . …….انسانوں کے بیٹھنے کے قابل… …….سکول ……..کافی حد تک سکول لگنے لگا
عیسےاے خیل دور تے نئی…قسط-39
ھیڈماسٹر کی کرسی کی back پر ایک کھڑکی کھلتی تھی…….جس میں سارے کمرے مکمل نظر آتے تھے…درمیان میں ایک میدان تھا …….میدان میں ایک بہت بڑے درخت………………..کے نیچے چھاوں پر استاد بیٹھتے تھے………..ایک میز کے گرد………………..میدان کے آخر میں…..سب کمروں کی قطاریں تھیں….کمروں کے…..سامنے ایک برآمدہ بھی موجود تھا……..اگر آپ چیکنگ پہ نکلتے ھیں…..تو میدان میں اساتذہ کے………سر پر سے ھوتے ھوئے………برآمدے میں پہنچیں گے………
وھاں سب کمرے لائین میں ھیں………آپ دیکھ سکتے ھیں ………کہ کونسا استاد پیرئڈ……پر نہیں ھے…………کون..سی کلاس خالی ھے
میں کبھی کبھار کسی بھی نوکر …..کو کہتا کہ جاو برآمدے میں ……..وھاں کوئی کلاس خالی تو نہیں………..
کبھی کبھار میں اپنے سامنے……میز پر…..لکھا ھوا ٹائیم ٹیبل……..
دیکھتا……مثال کے طور پر …….چوتھا پیرئڈ کس کس استاد کا لگا ھوا ھے…………..پیچھی لگی کھڑ کی کو کھولتا….اگر وہ استاد………..میدان میں گپیں.. ..لگاتا ھوا …..نظر آتا….تو میں سیدھا اسکی کلاس میں…………پہنچ جاتا……..وہ استاد شوٹ کرکے…………پیرئیڈ پر پہنچتا…….گندا منہ بنا کر…….اس سے کوئی تلخ کلامی…….نہیں کرنی پرتی تھی…….ٹیچنگ سٹاف میں ….کل تین ٹیچر کام کے تھے……..آحسن خان……..اور محمد دین……….اور نزیر ھاشمی.. …باقی ٹائم پاس سکیم ……….والے تھے…….اور وہ سارے پچاس سے اوپر کی عمر کے……….تھے………انکے…نٹ….پیچ…..غراریاں……..مکمل طور پر جام تھیں……. انہیں کسی……گریس……آئیل…..ریگ مال سے…………..تیز نہیں کیا جا سکتا تھا……وہ زندہ لاشوں کی ماند تھے……..وہ صرف رزق کی تلاش میں سکول آتے تھے………
.اور قا بل رحم حالت میں تھے…..وہ کلاسوں میں…….جائیں……نہ جائیں…….بچوں کی حالت میں کوئی تبدیلی…………….نہیں لا سکتے تھے…….پیچھے سے ھائی سکول کھگلانوالہ………….اور ھائی سکول عیسےا خیل کا منظر نامہ..بھی…….اس سے مختلف نہیں تھا…………….
بلکہ سچی بات ھے………..جب تک چیک…..اینڈ بیلنس…..درست نہیں ھوا تھا……….استاد وں کی اکثر یئت ……ذھنی طور……..پر…….بالکل آزاد تھی……………….بس روٹین……پوری کی جاتی تھی…وہ بھی صرف اس وقت…….جب ھیڈ ماسٹر……سر پھرا ھو………
اور میں یہ اپنے کچھ بہت پڑھے لکھے……دوستوں کے لئے ………….لکھ رھا ھوں…….کہ میں نے اپنی 35 سالہ سروس کے…….دوران…………سکول کے اندر دو ٹیچروں .کو….کسی علمی بحث……………میں ملوث نہیں پایا………….اور اب بھی حالت زیادہ بہتر نہیں ھے
مڈل سکول عیسےا خیل..میں…………. جتنی تعلیمی سرگرمی……..ھو سکتی تھی………..اساتڈہ کی برداشت کے اندر………..وہ میں نے ابھاری……ھر نتیجے کے دن……..علاقے کے معزیزین…….اسسٹنٹ کمشنر عیسےخیل……سمیت……ھر مرتبہ ایک بڑا فنکشن کرایا……. ٹھیٹھی استاد تفریح……یعنی…………break time میں اکثر غائیب ھوتا تھا………..دوسرے دن قسمیں قرانیں……….اٹھا کر…….معاف ھو جاتا………………..ھفتے بعد پھر قسم قران… …….اللہ کی قسم صرف 15 منٹ کے لئے نکلا……آگے ایک بے غیرت نے زبردستی………..ھوٹل پر بٹھا لیا……………..ایک ترگ سے ٹیچر……….غفار آتا تھا……………وہ ھر ھفتے میں تین مرتبہ پتہ چلتا وہ چوتھے پیرئیڈ پر غائیب……..ھے
محمد دین کو بلاو………..جی سر حکم………..وہ آتے ھی مجھ سے پوچھتا…….
یار ایسا کرو غفار بعض نہیں آتا……..اسکی غیرحاضری رپورٹ بنا کر………….ڈپٹی ڈی ای او…….کو بھیج دو……..بالکل ٹھیک ھے…………..کسی کی رپورٹ بھیجنے پر محمد دین…………بہت خوش ھوتا……….چونکہ رپورٹ وہ خود بناتا تھا…………وہ اپنے آپکو all in all سمجھتا تھا…………ھیڈماسٹر کا right hand تھا……
دوسرے دن غفار سیدھا محمد دین کے گوڈے…….گٹے پکڑ لیتا …………………..آپ مائی باپ ھیں……….میری نوکری آپ کے ھاتھ میں ھے….
محمد دین غمگین …….چہرہ بنا کر سیدھا میرے پاس..آتا……………….ھیڈماسٹر صاحب……..بچہ بہت پریشان ھے………….بیچارہ…………اب سوال ھی پیدا نہیں ھوتا کہ اب اس غلطی کو دہرائے…………… مہربانی فرمائیں……….
اچھا اگر تمہیں یقین ھے تو……….لکھو جو لکھنا چاھتے ھیں…………ڈپٹی ڈی ای او کو………..سر وہ مجھ پر چھوڑ دیں…………..اختر خان لنڈوخیل …….سکول ویلفئیر کے لئے……کام کا آدمی تھا…….پی.ٹی غلام رسول فنکار آدمی تھا……..زبانی جمع خرچ……..کرنے کا ماھر…..پھر ……………ایک دن نیا انکشاف ھوا……………….صبح سویرے پہلی ملاقات میں……….محمد دین کا رویہ بالکل…………سرد مہری والا تھا……………..مجھے اس پر سخت تعجب ھو رھا تھا تھا……………. دیکھو اب یہ مجھے بھی……..ر… …کوئی اھمیئت………نہیں دے رھا……اچھا اسکا دماغ اتنا خراب ھوگیا ھے…………….ھیڈ ماسٹر کو ھیڈ ماسٹر نہیں سمجھتا…میں نے ذرا سخت لہجے میں کہا ……..تمہارہ مسلہ کیا ھے……….
اس نے سرگوشی کے عالم میں سخت لہجے …..سے ………..ایک ٹیچر کے متعلق……..برا بھلا………..کہا-میں نے کہا کیوں……………وجہ ؟ اس نے پھر ھونٹوں کے اندر ایک نامنا سب سی …بات کی…………بےغیرت انسان……….میری زندگی……………..اف……………ایک اور گالی……..نما بات. .اسکے منہ سے نکل گئی……………..شکر ھے دفتر میں کوئی نہیں تھا………ورنہ دفتر کا تقدس……………توپا ش پاش ھو جانا تھا…….وہ بزرگ اور قابل احترام بندہ تھا……میں اسے کچھ کہہ بھی……نہیں سکتا تھا…..بہرحال وہ بہت پریشان تھا.
عیسےاخیل دور تے نئی..قسط–40
میں نے جب تحقیق کی….تو پتہ چلا کہ ایک نامی گرامی……ٹیچر نے……..اپنی ھی بیوی….کے متعلق سیکس کا پورا episode مزے لے لے کر چلایا…………اور انکے سیکس کے جزبات کو ابھارنے کے لئے …..کچھ فرضی….ائیٹم ………بھی ڈال دئے………
اس میں ایک ھومیو پیتھک کا ایک کیپسول کا ذکر……بھی
کردیا……….گولڈن سٹروک………
محمد دین نے مجھ سے ڈسکس کئے بغیر اس کیپسول کو دماغ میں بٹھا لیا………….اور پچھلے…..ٹائم بازار جاکر…..شنو پنسار……..کی دکان سے خرید لیا……..آگے کیا ھوا اللہ ……..بہتر جانتا ھے……رات کو زیادہ جاگنا پڑ گیا….
خالی پیرئیڈ والے جو ٹیچر وھاں موجود تھے… وہ سارے .کے . .سارے ……………………. …..ٹیچر امن امان……سے تھے….
ھو سکتا ھے..انہوں نے اسے کوئی اھمیئت ھی نہ دی ھو….
وہ ٹیچر یہ سمجھتا ھو گا….کہ وہ ٹیچروں کو بیوقوف بنا رھا ھے………………………اور……..ٹیچر یہ سمجھتے تھے….کہ دیکھو یہ کتنا بیوقوف ھے….
محمد دیں جیسے انتہائی…..علمی…..منجھے ھوئے…..اور ..ذہین بندے……….سے یہ توقع نہیں کر سکتا تھا…………کہ سیکس…….جو زندگی……کا لازمی….اور خاموش…….حصہ ھے…… اور مشرقی اور اسلامی…..روایات اسے………اچھالنے سے منع کرتی ھیں…..
محمد دین.خان…..پہلے تم نے اس ٹیچر….کی مجلس کو انجائے …کیا……..پھر تم خود اپنے پیروں سے چل کر …بازار …..اس کیپسول کو …….خریدنے گئے…….
پھر تم نے سیکس کو لازمی طور پر انجائے بھی کیا…….
اور اب تم………….. اس ٹیچر کو قصور وار ٹھہرا رھے ھو……….حالا نکہ….کہ محمددین ..خان….کی کوئی غلطی نہیں تھی…سوائے اسکے…….اس کو کسی سے ڈسکس….نہ کرے……..بس !روزانہ دفتروں میں لاکھوں انسان رات کو سیکس کر کے……………..آئے ھوئے ھوتے ھیں……لیکن…….مکمل طور پر خاموش………پر سکون……………….اور………..چپ.!! سیکس مشرق میں مکمل………..طور پر ایک خاموش اور خفیہ سرگرمی ھے………………………جو قدرت کی طرف………..سے……زندگی کا ایک لازمی………….جزو ھے…..اور یہ بھی نہیں…………کہ آپ ایک ماھر شکاری ھوں……….اور جو بھی ھاتھ لگ جائے………
آپ اسی سے سیکس کریں……..اور یہ کہیں کہ میں ھفتے…………….میں
ھر مرتبہ تین نئے بندوں سے سیکس کرتا ھوں ……………اور بالکل……………….چپ…..ھوں زندگی معمول کے مطابق……..گزر رھی تھی……..سکول لائف………گھر………کچھ موسیقی……..کچھ تھوڑی سی سوشل لائف…………اور ایک کتاب پر بھی کام ھو رھا تھا………ایک فنکشن کے دوران…..ایک نیا ڈپٹی ڈی ای او عیسےا خیل لگ کے……….پہلی مرتبہ مڈل سکول میں داخل ھوا………اور سٹیج کی سامنے والی ایک کرسی پر بیٹھ گیا….فنکشن ختم ھونے پر مجھے……..کسی نے بتایا……یہ نئے ڈپٹی آئے ھیں……….میں انہیں ملا……..پھر میں فنکشن کے دوسرے بہت سارے اھم بندوں………کو الوداع……کرنے لگ گیا……..200/300بندوں کو ملتے…….ملتے…….بہت دیر ھو گئی…………………اور ڈپٹی صاحب ناراض ھو کر چلا گیا….اور ھمیشہ……..ناراض ھی رھا ……..اس نے یہ نہیں دیکھا کہ سکول کی ویلفئیر……..کے لئے……کتنا بڑا فنکشن کروایا گیا…
شرابت خان ڈہٹی ………کو قابلئیت……محنت…….میرٹ ……..سے کوئی دلچسپی نہیں تھی………….اس نے سکول کے تین چار ٹیچروں کو اپنے ساتھ ملایا……….ایک دو نوکروں کو…………………..اور کبھی کبھار انکی شام کو اسکے دفتر میں…………بیٹھک ھوتی تھی………اور انکو میری کمزوریوں……کو تلاش کرنے کا ٹاسک دیا ھوا تھا……………..اسے …..سکول کی ھر update کا پتہ ھوتا تھا… وہ دو سال تک لگا رھا………پھر میری زندگی میں ایک نیا موڑ ایا…..
عیسےا خیل میں ایک…….نیا اے- سی آیا…….امان اللہ خان…………….پھر ایک پرچیز کمیٹی بنی…..جس میں اسسٹنٹ کمشنر…….چئیرمین………….. Aeo حمید خان سیکریٹر ی…………….میں بطور ھیڈماسٹر…….ممبر تھا……….
پرچیز کمیٹی کی شاید تین میٹگوں کے بعد…………..حمید خان…….. اے سی کے زیر عتاب آگیا……..پکا پکا……..ایک دن شام کے وقت اے سی کا بندہ میرے گھر آیا……آپکو اے سی صاحب بلا رھا ھے-مجھے کوئی سمجھ نہیں لگی……اس وقت وہ مجھے کیوں بلا رھا ھے
میں وھاں گیا……..گیٹ پر بندے کو بتایا…….اے سی کو بتائیں……..قیوم خان آیا ھے…………اس نے کہا اندر آ جائیں………اے سی نے کہا تشریف رکھیں……
جی حکم………….؟
نہیں………….بس ایسے ھی………………..آ جایا کریں
اسسٹنٹ کمشنر…………….اتنا پڑھا لکھا بندہ………… اسکی ھر روز کی………….کمپنی……میں باکل حیران…………جی ضرور….میں نے جواب دیا
عیسےا خیل دور تے نئی..چند وضاحتیں
میرے پیارے دوستو….میری تحریروں کے سلسلے میں……مجھے آپکی چاھتوں….محبتوں…..اور بے پناہ احترام…….سے واسطہ پڑا… ..اور مجھے اپنے ھونے.. .کا احساس….ھوا…. ویسے تو آپکا ایک like بھی…..میرے لئے بہت انمول ھے……لیکن کچھ دوستوں…..نے…..بڑے لمبے لمبے کمنٹس……..ھر مرتبہ کئے……………………………..کمنٹس کرنے والے بڑے کمال کے لوگ ھوتے ھیں……….وہ ھر قسط پر آپکے ساتھ برابر………… لمحہ بہ لمحہ…….ساتھ رھتے ھیں……آپ سے ………..باتیں کرتے ھیں….آپ کو تنہائی……………….کا احساس نہیں ھونے دیتے…………اور یہ پیغام بھی دیتے رھتے ھیں….کہ ھر چیز…………………..ٹھیک جارھی ھے………………مثال کے طور پر……ڈاکٹر ظفر کمال….ایم ایس تحصیل ھیڈ کواٹر ھسپتال عیسےا خیل….شاھد اشرف کلیار… ……………ملک.رفیع اللہ جمیل…..عبدالرزاق………
مظہر اقبال ملک……………عاقل ملک……خان بہادر خیل ریٹائیرڈ .میجر ظہور……..محمد نواز ملک……حفیظ ارشد ھاشمی….علی عمران اعوان..معروف……لوک فنکار……………..پروفیسر.ملک منور علی……ڈاکٹر ظفر ھاشمی………ڈاکٹر احمد حسن نیازی….آجکل یہ بڑا آدمی بن گیا ھے…..ھماری پہنچ سے بہت دور……دولت…….. …..نے اسکے گھر……کا راستہ دیکھ لیا ھے…….اب وہ …..کسی کو نہیں پہچانتا…
اسداللہ خان کیمر مشانی…آصف اقبال خان….خالد محمود ھاشمی …..ارشد میڈیکل سٹور میانوالی……………..جمال نزیر ھاشمی….جاوید حسن خان ھیڈماسٹر ھائی سکول ترگ……محمد ریاض خان Aeo کمرمشانی…جناب ارزانش ھاشمی….ضیا ملک….محمد رمضان ندیم…………محمد شعیب….محمد ھمایوں علوی…. راجہ شہادت علی ترک…ھمایوں گل شاد…….ساعد رسول Deo سیکنڈری بکھر….صابر آرٹسٹ….زکا ملک…..کریم خان پولیس آفیسر …….عارف خان….ایمل خان………ملک اسلم سابق Edo میانوالی……بکھر ….راجن پور….یوسف صابری…..ملک حنیف گھنجیرہ…..ملک وقاس جرنلسٹ………حبیب خان…..رانا فدا صاحب.اوکاڑہ…ایڈوکیٹ….الکمال گروپ پاکستان……سینئیر صحافی جناب آعظم اصغر خان…..محمد کلیم صاحب……سابق پرنسپل گورنمنٹ ڈگری کالج عیسےا خیل……فراز خان نیازی…حبیب الرحمن خان نیازی…قاسر خان میانوالی…..مجتبی خان…..عامر ھاشمی….مسعود احمد خان….ھارث احمد خان….اشاق احمد…..عصمت اللہ خان نیازی…..سید غظنفر…….رانا محی الدین.سابق Deo کا لجز میانوالی……نوید اقبال…..ذیشان خان….حسن خان…..ساگ رنگ…..فضل خان……حمید خان پاک میڈیکل عیسےا خیل…………..صفدر ھاشمی…..زکا الرحمن زکی……فراز احمد خان……….اور مجھے یہ اعزاز بھی حاصل ھے…کہ…..اسسٹنٹ کمشنر عیسےاخیل جناب .سعید خان….. جیسا…..مصروف ترین….آفیسر بھی میری……..پوسٹوں کا ….قاری رھا ھے….میں انکا بے حد مشکور ھوں

فرینڈز…………..اگر یہ سارے لوگ……….گھڑی گھڑی کی سنگت………..اور ساتھ مجھے نہ دیتے تو……میری تحریروں……..میں……..دم نہ رھتا……میرے لئے یہ لوگ ……… بہت انمول ھیں…
مجھے یقین ھے میرا اور آپکا یہ پل پل کا ساتھ قائم رھے گا ……..اللہ پاک اسے تا دم زندگی قائم دائم رکھے ….آمین-

عیسےاخیل دور تے نئی..قسط–41
اے سی امان اللہ خان…سانولے رنگ کا …سمارٹ جسم ….انتہائی شارپ دماغ…. ….کھیلوں میں عملی دلچسپی…… رکھنے والا بندہ تھا……اس نے عیسےا خیل کے لڑکوں کے ساتھ ……کرکٹ کی ایک ٹیم بنا رکھی تھی……..میڈیکل سائینس کے لحاظ سے…..ایک پورا ڈاکٹر…………………………..اور……….آپکی بالکل اندرونی….ڈائیری رکھنے والا …..خطرناک آدمی تھا……..
میں نے شام کو انکے گھر……کی روٹین….بنا تو لی…لیکن میرا دل مطمعن……نہیں تھا……….کہاں….ایک اے سی اور کہاں….ایک استاد…… …..یہ تعلق کیسے بن سکتا ھے………اس وقت اے سی کے اختیارات بھی بہت……..زیادہ تھے……
پھر مجھ میں… یہ….ایک مسلہ……بھی…. ھے…..کہ …میں کسی… …………بھی ……..افسر کو …….خوامخواہ ………………. دماغ پر سوار نہیں……کر سکتا… ….ھائے یہ افسر ھے…..مجھے…کھا جائے گا…………..وہ میرے سکول کا visit بھی کر سکتا تھا……اور ذہانت کے……اعتبار …..وہ………..میرے لیئے ………….. بہت خطرناک …….بھی…….ثابت ھو سکتا تھا…لیکن ………..ھر خوف سے آزاد ھو……..کر ……….میں…… اسے ملتا رھا…..پھر اسکے اور میرے درمیان……..ایک اور موڑ آیا……….ایک دن اس نے میرے سکول میں اہنی لال رنگ کی…..جیپ بھیجی………………………اس وقت اسکے پاس یہی جیپ ……ھوتی تھی…..بعد میں کار آگئی……………….ڈرائیور نے مجھے……کہا ….جی صاحب نے یاد کیا ھے………مجھے اسکا پورا علم تھا……کہ اسکا…..میرے ساتھ ……..کوئی خاص کام نہیں ھے…..تعلقات میں یہ ایک نیا ………………..ابھار آیا تھا………….پھر دوسرے…….تیسرے مہینے تک……..ایک اور touch آیا ………مزاح کی حس…..
اور مزاحیہ فقرے شروع ھوئے……..جو میری طرف سے استعمال نہیں ھوتے تھے…..وہ خود کرتا تھا…………
پھر میں بھی……تھوڑا آگے…….آگیا…….میں بھی یہ فقرے استعمال کرنے لگا…………..اور وہ انکو انجائے کرنے لگا…………………پھر معاملہ بہت آگے بڑھ گیا……میں اکثر وقت………..اسکی گاڑی میں نظر آنے لگا……اڈے پر…..بازار میں……..جدھر بھی……..وہ جا رھا ھے…..میں اس کے ساتھ نتھی………
اس اثنا میں……… دوپہر کو اسکے دفتر میں…..بیٹھے ھوئے……اے سی ہر یہ انکشاف ھوا کہ یہاں ایک آدمی…….خوانین میں سے ایسا ھے……جس نے انجمن بہبود مریضاں…….20 سال سے بنا رکھی ھے….. وہ خود ھی کاغذوں میں………..فرضی الیکشن کرا دیتا ھے……خود اسکا صدر بن جاتا ھے…..جو سرکاری فنڈ اسے…..کبھی کبھا ر ملتے…..ھیں…خود استعمال کر لیتا ھے……..
اے سی صاحب نے مجھے کہا……….اگر الیکشن لڑ سکتے ھو………………تو……..ایک application دو……..میں اس کو بلا کر ………..re-election کا فیصلہ کرکے…..الیکشن کی ڈیٹ رکھ دیتا ھوں……….اگر وہ خان جیت گیا تو وہ اس انجمن ……کا حقیقی صدر ھو گا……
میں نے اپنے سکول میں ….. .ایک پینل…..بنایا…….جس میں…..محمد دین خان نائیب صدر……سلیم خان لنگر خیل….سیکریٹری فنانس…….اور…..میں خود اسکا صدر……اور دو اور بندے…….اختر خان لنڈوخیل نے کہا………….آپ مجھے ڈاٹسن کرکے دیں گے……………………………..آپکو…..الیکشن جتانا میرا کام ھے…….الیکشن کی ڈیٹ………اے سی صاحب نے رکھ دی…….گورنمنٹ ڈگری کالج بوائیز میں……..اکٹھ ھوا……الیکشن کا ٹائم شروع ھو گیا…….اختر استاد نے ڈاٹسن پر چار پھیرے لگائے…….بہت سے بندے میری طرف سے آگئے.. ………..وہ خان گھر سے نہیں نکلا…..اس نے حصہ نہیں لیا…..بشیر نواز خان ……..اللہ جنت بخشے……….اس نے سٹیج پر جا کر اعلان کیا کہ………….قیوم خان پینل بلا مقابلہ جیت گیا ھے……..اسے مبارک ھو…….قیوم خان سٹیج پر آکر اپنے خیالات کا اظہار کرے……….میں نے اپنے ووٹروں کا…….اے سی صاحب کا……….کالج کی انتظامیہ کا شکر ادا کیا……………اور مختصر بات کرتے ھوئے…….کہا کہ …………اب ھر غریب بندے کا علاج ھوگا………..انشاءاللہ…پھر جیتنے والے پورے پینل کے نام اور عہدے پڑھ کر سنائے……..
ھمارا ھسپتال میں ایک کمرہ مقرر ھو گیا………سوشل ویلفئیر عیسےاخیل کے دوبندے وھاں بٹھا دئے گئے……….مریض کو میں سکول بیٹھ کر اپنے دستخط سے ھسپتال بھیجتا……….. ….سوشل ویلفئیر والے اسے ایک پروفارمے کے ساتھ ڈاکٹروں کے پاس بیجھتے تھے…………..ڈاکٹر کی پرچی پر……. . .الحمزہ میڈیکل سٹور سے مریض کو دوائی مل جاتی تھی…….مہینے کے بعد الحمزہ میڈیکل سٹور کو پیسے مل جاتے تھے………
مڈل سکول کی ھیڈ ماسٹری سے جمپ ………لگا کر میں اور محمد دین خان اپنے تین اور استادوں کے ساتھ…………سیدھا ھسپتال میں گھس گئے تھے…………..اور میں سیدھا اے سی کی کار میں……………………………………اور ھر روز………….رات کو……..اے سی کے ساتھ……………..اے سی کی کار میں…………………………….آوارہ..گردی  رتا…………………………………..میں اور محمد دین ………….بہت سیاسی ھو چکے تھے…………………اور ھمارے مزاچ سطح سمندر ……….سے …….کافی……..بلند ھو…….چکے ……..تھے……..

عیسےا خیل دور تے نئی.قسط–42
دو بندے کرہ ارض پر ایسے اتارے گئے ھیں…..جو اپنی اپنی جگہ پر…….بالکل……..پیغمبر……نما…..ھیں……….ایک استاد جو انسان کی ذھنی…….اور روحانی…….growth کا … سبب بنتا ھے…….دوسرا ڈاکٹر……جو …..انسانوں کو……صحت …توانائی ……زندگی کی حرارتوں……….اور خوشیوں ……کو قائم رکھنے ….کا سبب بنتا ھے…. .یہ دونوں انسانئیت….کے…..مسیحا ھیں……..اگر اتنے بڑے رتبے کے لوگوں……………اور ھستئیوں کے دماغ میں دو نمبر سوچ بھری ھو………….تو ….اللہ کے غیظ وغضب سے……اس بستی کو……کون بچا سکتا ھے………..
استادوں کے درمیان مجھے……چالیس سال رھنے کا موقع….ملا……..میں انکے درمیان رھا…..بطور استاد بھی….بطور ھیڈ بھی……….مجھے غیر معمولی…..علمی شخصئیت…….غیر معمولی ….محنت……اور طلبا سے غیر معمولی……لگن….کمٹمنٹ…….کبھی دیکھنے کو نہیں ملی………میں اپنے آپ سے ..اور………استادوں سے کبھی خوش نہیں رھا………البتہ اچھے استاد بھی پاکستان….میں موجود ھیں……….لیکن میں نے…….کبھی کسی استاد کو……………اس لیول تک…..گرتے ھوئے ….بھی……نہیں دیکھا….کہ سکول سے لمبی…….چھٹی…..لے کر اسی علاقے….میں کریانے …….کی دکان کھول کر بیٹھ جائے….اس کی کلاس چھ مہینے سال تک بھٹکتی رھے………اور وہ دکان سے مال کماتا رھے…… …………………لیکن استادوں کی طرح ڈاکٹروں میں…بھی. …….بہت خر ابیاں ھیں……لیکن کیا یہ بھی……………….ممکن ھے…….کہ ایک ڈاکٹر اپنے ھسپتال سے لمبی………..چھٹی لے کر…….8/7 کلومیٹر…..کے فاصلے پر اپنا کلینک…………..کھول کر نوٹ چھاپے………….اور ھزاروں مریض………..اس ھسپتال سے ………ھر روز……دکھے…….اور ذلت اٹھا کر واپس…..گھر ..مڑ جائیں ……….اور کوئی اس ڈاکٹر کا کچھ نہ بگاڑ سکے………کیا تحصیل اور ضلعی انتظامیہ…………………..بلکل بے بس ھے………کیا یہ کسی علاقہ غیر میں………ھو رھا ھے…..جہاں حکومت کی کوئی رٹ………نہیں ھے…..معزرت…ھم کسی اور طرف نکل گئے…………..
اے سی امان اللہ خان……. ……..کو بڑی خفیہ ڈائیریاں……کہاں…….سے ملتی……تھیں….میں حیران رھتا تھا……..وہ بندہ کون تھا….جو ھر ڈائیری….اے سی صاحب کو دے رھا تھا……….بلد یاتی الیکشن…..ھو رھے تھے………….شفا ھرایا اور فضل الرحن خان بھی…….منمبری پر اٹھے ھوئے تھے……….فضل الرحن خان شام کو کلب میں کھیلنے جاتا تھا……..وھاں سے……..وہ اے سی کی نگاہ میں آیا……اور شفا ھرایا …….بھی کسی سائیڈ …سے…….اس دائیرے……کے اندر آگیا…………
اے سی صاحب فضل الرحمن خان کو جتا کر………..حتی ا کہ اسے چئیرمین بنانے کا خواھش مند تھا………….اسکے مقابلے میں…….ایک جت…….کھڑا تھا………. ایک دن شفا…..فضل الرحمن خان…….میں ……اور اے سی صاحب.. …..رات….کو کار کے اندر……..نو بجے اڈے پر گئے…وھاں…بھیمہ کے ھوٹل سے تھوڑا سے آگے کرکے ………کار کو ٹھہرایا. . ……..اپنی اپنی سیٹوں پر بیٹھ کر……………….الیکشن کے متعلق ………..اور فضل الرحمن کو جتانے سے متعلق………..مختلف تجاویز پر غور کرتے رھے……….وھاں سامنے شفا کا ھوٹل بھی تھا…………ھر گھنٹے کے بعد……….شفا چائے بنا کر لے آتا. …….چائے چلتی رھی……………………اور گپ شپ بھی……….11 بج گئے………..پھر 1 بج گیا……….پھر چائے آگئی……….پھر 3 بج گئے……….ایک کار……….ایک سامنے والا کھمبا………..ایک ریڑھی…………………….ااور چار……..پاگل………5 بجے……مرغوں کی اذانوں………پر اے سی صاحب نے گھڑی کی طرف……………. دیکھا………اور کہا………..پھر چلیں…..؟
……….کوئی صبح 5 بجے ھم اپنے اپنے گھروں میں پہنچے……یہ ایڈوینچر کرکے ……..بے ھوشی کے عالم میں ……اپنی چاپایوں پر…………جا گرے……………………..اور پھر……..نتیجہ وھی….یعنی اللہ کے فضل وکرم سے…….
…………. فضل الرحمن خان……………..ھار گیا………….جت جیت گیا…………..ھم نے کار …..کے اندر رہ کر……….ساری رات جو محنت……………کی تھی…. ….9 بجے سے لیکر ……………..صبح 5 بجے تک…………اسکا اور کیا نتیجہ آسکتا تھا… ……اے سی صاحب کیوں اسے جتانا چاھتا تھا………..اسکا………….اگلا پلان……..بھی…. …..ادھورا…….رہ گیا…..لیکن وہ پلان ھم کبھی نہ جان سکے…..
ایک دن شام کو کار……….نکالی……میں اور فضل الرحمن….کار میں بیٹھ گئے………….جب بھی ان سے پوچھتے کہ کہاں جارھے ھیں…………..جواب ملتا ………….ڈرامہ نہ کرو……… ……….نہ تمہا را مسلہ کیا ھے…….
…………………. .کار چلتی رھی…………میانوالی………..پھر تلہ گنگ…………………پھر راولپنڈی…………وھاں بریک جا کر بریک لگی………کچھ بھی پتہ نہ چل سکا………………….کہ یہاں آئے کیوں تھے………..یہ ایک پر.اسرار دورہ تھا….اے سی صاحب نے یہ راز لیک نہیں ھونے دیا……..بڑا پراسرار دورہ ….. تھا … . ……. …..ھمیں…………چائینیز کھانا ھے…………..بل تمہارا ھو گا……………………اس نے فضل الرحمن…کی طرف ……دیکھتے ھوئے ….کہا…….چائنیز کھا کر بڑا مزا آیا…………………بل فضل الرحمن نے دیا………….بس تھوڑا سا اور گھومے…………..اور واپس چل پڑے…………پھر پانچ بجے واپسی ھوئی………………صبح ناشتے کے وقت…. …… .ھم میاں بیوی .. …لڑ ……..رھے تھے………..کہ ….آخر میں…………رات بھر تھا کہاں ؟؟؟
اے سی کے فلیٹ میں جو فرج رکھی ھوئی تھی…………اسے میں…………شفا …….اور فضل الرحمن …….سنبھالتے رھتےتھے……..بہت کچھ ھاتھ لگ جاتا تھا
ایک دن …اے سی صاحب………………………مجھے ساتھ لیکر………….اڈےسے ھو کر بازار کے اندر کار لے گیا…………بازار والی ٹانچی کے بالکل قریب لڑکیوں کا کالج تھا……………..وھاں ٹینکی کے ائیریا میں ایک خاتون کھڑی تھی……………اسکے ساتھ کار کھڑی کر کے…… ..کار کے اندر سے……………………… امان اللہ خان مخاطب ھوا………..پھر کار واپس مڑ…….آئی…..میں نے مزاق کے طور پر کہا……………….کہ بڑے jesture تھے.. ………خاتون کے. ……………دفتر پہنچے……تو اے سی صاحب نے کہا………….وہ………….میں تم سے ایک بات شئیر کرنا چاھتا ھوں……. …………..ضرور کریں………میں نے کہا…
…آپکا مخلص نا چیز عبدالقیوم خان–

Your words for Mianwali and Mianwalians