ISA KHEL DAUR TA NAI – PART 6

عیسےا خیل دور تے نئی.بات سے بات نمبر1

انسان کا اللہ کی ذات کے سوا……اور کوئی مدد گار نہیں…… انسان ساری زندگی….
دائیں… بائیں سے جو تعلقات بناتا ھے…وہ ساری مفادات کی…….گیم ھوتی ھے…………..وقت کے ساتھ ھر تعلق………..پتلا….ھو جاتا ھے……..کئی تعلق دشمنیوں میں بدلتے دیکھتے……اولاد اور والدین…..کے درمیان بھی……….

….پوری انسانی تاریخ……….میں بڑے ھیبت ناک نتیجے نکلتے دیکھے……کئی باپ ……اپنے بیٹوں کے ھاتھوں…قتل ھوتے…..دیکھے.. ..کئی ماوں کو انکے……..بیٹوں نے پاگل خانوں
اور دارلا مان میں ……بے یارو مدد گار چھوڑا……..

ھر خونی رشتہ…………..کسی بھی موڑ پر…………انجان اور………دشمن رشتے میں بدل سکتا ھے……….

ماں ایک مقدس ھستی ھے………لیکن……….جب اسکے چار بچوں کے درمیان….مفادات
کا کھیل شروع ھوتا ھے………وہ اپنے کسی نہ کسی بچے….

کی ناراضگی…..کا باعث ضرور بنتی ھے…شکوک شبہات کے

ماحول میں……اسکی محبتیں ……بھی شک کا شکار ھو جاتی ھے…….نتیجے میں ھر شادی شدہ بیٹا…..کسی الگ……………..
کانر میں……اپنی بیوی ….کو اپنا آخری سہارہ سمجھ کر…
پناہ لیتا ھے….

اور بیٹیاں تو ویسے ھی……پرائے گھروں کی مخلوق ھوتی ھیں… …….

بہت خو ب صورت …..فوک شعر ھے…

پتر لے گیاں نوھاں…..تے دھیاں لے گئے جوائی
وے غافلا تئیں کیوں عمر گنوا ئی

تو نتیجہ اور کوئی نہیں …..اللہ تعلےا نے انسان کو قران پاک میں خبردار کیا…
کہ اولاد تمہارے لئے نعمت بھی ھے اور بعض اولادیں فتنہ بھی ھیں…
زندگی …..بہت پیچیدہ اور پر اسرار چیز ھے… انسان حقیقت میں بالکل اکیلا ھے……

دنیا میں ………..اکیلا ……اپنی قبر میں…………….اکیلا …

اولاد کا والدین کے سامنے تابع فرمان ھونا…..بہت بڑے نصیبوں اور بختوں کی بات ھے…..اور یہ اولادیں دنیا میں موجود ھیں…..بڑے بختوں والے ھوتے ھیں ایسے بیٹے…….اور اللہ راضی ھوتا ھے ان والدین ہر….جنکو ایسی اولاد نصیب ھوتی ھے…

آپکا کوئی بھی سچا اور کھرا تعلق……….خونی رشتوں کے ساتھ…….غیر خونی رشتوں کے ساتھ…ھے ….تو یہ………….اللہ تعالے ا کی بہت بڑی نعمت ………..اور مہربانی ھے….
اور آپکی بہت بڑی خوش نصیبی ھے…..بالکل یہ سچے رشتے بھی……. ایک بڑی حقیقت کے طور پر اسی دنیا میں موجود ھیں
لیکن آٹے میں نمک کے برابر……..یاد رھے آپکا ھر سچا تعلق ….آہکی سب سے بڑی دولت ھے……آپکی طاقت ھے

انسان اور اللہ کے درمیان تعلق….ایک بہت نازک …بہت…….سادہ ……بہت پیچیدہ…….سلسلہ ھے.اسکو سمجھنے کی بہت شدید ضرورت ھے…
میں کسی عالم دین کی حیثیئت سے نہیں بلکہ مزے دار بات ھی یہی ھے…
کہ میں بالکل اپنے ذاتی خیالات بیان کر رھا ھوں…اور

صاف ظاھر ھے….غلط بھی ھو سکتا ھوں

پورے انسانی سفر کو دیکھا جائے…….اور اپنے دور کے پورے انسانی واقعات کا جائزہ لیا جائے….

تو لگتا یہ ھے………کہ اللہ نے انسان کو دو چیزیں دے کر…………ھدائت کا راستہ…(پیغمبروں کے ذریعے اور محمد صلی اللہ علیہ و ا لہ وسلم کے ذریئے ) اور عقل …..

انسان کو……کہا …..شاباش …….گو. go
اور …..
پھر اسے اکیلا چھوڑ دیا…..

اسکے بعد……..اللہ تعالے ا نے اپنی مداخلت کو دو چیزوں پر رکھ دیا…..

نمبر 1 جب اللہ خو د چاھے….تو مداخلت کرتا ھے… جس کی بےشمار مثالیں ھیں…جیسا کہ جب حضرت ابراھیم علیہ السلام کو جب آگ میں پھینکا گیا….اللہ نے مداخلت کی اور .

………………………کن ……کہہ کر آگ کو پھولوں میں بدل دیا…..اور اور جب چھری حضرت اسماعیل کی گردن رکھی گئی……تو
اللہ نے مداخلت کی……اور چونکہ وہ مالک کل ھے وہ جب چاھے……اور جو چاھے…….کر سکتا ھے اسے کوئی روکنے والا نہیں.
نمبر.2 جب انسان انتہائی عجز و انکسار کے ساتھ…..اللہ پر کامل یقین کے ساتھ…..

دعا مانگتا ھے تو اس وقت بھی…….بعض اوقات …….اللہ پاک مداخلت کرتا ھے…
بعض اوقات اس لئے …….. کہ اس دعا کے پورا ھونے میں انسان کو کوئی ……
نقصان نہ پہنچ رھا ھو……….یاد رھے….کہ بندے اور اللہ کے درمیان……تعلق کا سب بڑا ثبوت……دعا ھے……جب بندہ اپنے رب سے دعا مانگتاھے…تو

وہ یہ ثابت کر رھا ھوتا ھے……اے اللہ تو ھی تو میرا رب ھے…..اے رب مجھے بتا میں تیرے سوا بھلا اور کس سے مانگوں….وھی بندہ خدا کے سامنے سب سے زیادہ عزت والا ھے……….جو ……
اپنے رب سے بار بار……..اور بیشمار مرتبہ مانگتا ھے. ….اور جب اللہ بندے کی کوئی مراد پوری کرتا ھے….

تو یہی اللہ کی مداخلت ھے…..حالات آپکے ……خلاف جا رھے
ھوتے ھیں …وہ مداخلت کرکے ان حالات کو….کسی اور ترتیب میں کر دیتا ھے. .
آپکے اور اللہ کے درمیان سب سے گہرا رشتہ …….دعا ھے

ان دوصورتوں کے علاوہ……اللہ انسانوں کے معاملوں میں 98 فیصد……..مداخلت نہیں کرتا…..

انسان پتھر کے دور سے شروع ھوا…اللہ تعالےا نے انسان کو حیرت انگیز ……….
نور………………..عقل ……….دی………..تھی…….اور پھر اللہ نے اس بات کو بہت بہتر سمجھا………..کہ انسان اپنا عقل استعمال کرتے ھوئے……………..بذات خود……….علم و آگہی کے نئے نئے چراغ جلائے.اور اپنا راستہ خود بنائے……

پتھر کے دور کے خوفناک مسائل سے انسان……..اللہ کی دی ھوئی عقل کو استعمال کرکے….. ………خود آگے بڑھا………

اس دور سے انسان خود ……ساری مصیبتیں جھیلتے ھوا آگے بڑھا……..پھر انسان بے شمار قبیلوں میں بٹ کر

اجتمائی زندگی…….کا دور دیکھنا شروع کیا…..پھر اختلاف اور بڑے بڑے جھگڑوں…………..اور بڑی بڑی جنگوں کا دور شروع ھوا………..لاکھوں زندگیاں……..
قتل وغارت …….
کے………………..لا متناھی….سلسلوں میں ……….بے قصور

ماری جاتی رھیں………..لیکن انسان خود یہ تمام ظلم و ستم سہتے ھوئے ………..اپنی عقل و خرد کے ساتھ آگے بڑھتا رھا…..
اللہ نے یہی بہتر سمجھا کہ انسان خود اکیلا ان مصیبتوں کا مقابلہ کرے..اور انکا حل بھی خود نکالے

پھر معاشروں کو……سرداروں اور بادشاھوں نے…………. اپنی اندھی خواھشات ……..

کی تکمیل کے لئے……..اپنے پیروں تلے …………….صدیوں تک

روندے…….رکھا………….. لیکن انسانی ذھن ………کا ارتقا ھو رھا تھا……. اللہ نے

مداخلت نہیں کی…………….انسان اہنی اسی go میں رھا

ظلم و استحصال کے ھیبت ناک……..اور شرمناک سلسلے چلتے رھے….. پھر
پیغمبروں کے دور شروع ھوئے……..ھدائت براہ راست اترنا شروع ھوئی… سیاسی و سماجی مفادات کے سلسلوں میں……..

ابھی خودکار ذھنی ارتقا …… بہت نیچے تھا………لہذا بے شمار پیغمبروں کو قتل کیاگیا….
پھر موسےا علیہ السلام آئے……اللہ نے مداخلت کی……ایک خواب وقت کے ظالم بادشاہ………….فرعون کے دماغ میں ڈالا……………..پھر اسے صحیح صحیح خواب کی تعبیر پیش کی گئی….
کہ ایک بچہ …….پیدا ھو گا جو آپکی بادشاھی….غرق کر دیگا…..
.فرعون نے کہا ……. …… میں اسے پیدا نہیں ھونے دونگا…
جب وہ بچہ پیدا ھوا تو اللہ نے مداخلت کی……بچے کو فرعون ……………ھی کے گھر بھیج دیا…….

چونکہ کہ یہ اللہ کی مداخلت تھی…….اس بچے کو کون روک سکتا تھا….بچہ بڑا ھوا..
اس نے فرعون کو غرق کر دیا..
پھر عیسےا علیہ السلام آیا… طاقت ور سرداروں اور حاکموں نے اسے اپنے لئے خطرہ سمجھا……اور منظر سے ھٹا دیا…..

اللہ نے مداخلت کی……………اور اسے اپنے پاس بلا لیا

باقی اگلی قسط میں……….یہی بات جاری رھے گی….

آپکا خیر اندیش . نا چیز عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی.بات سے بات نمبر 2
کائینات کے اندر …..جو بھی … عمل………………………..کام..
…..
……………کارنامہ……………حرکت ھو رھی ھے…اس کو اللہ …..نے یہ میکانزم عطا کیا ھے …….کہ وہ عمل….کام…کارنامہ…اور حرکت………اپنی تکمیل تک پہنچتی رھے…………….اور کائینات اپنے موجودہ روپ میں چلتی رھے……………..یعنی کائینات کے ………………………. ھر phenamenon کے پیچھے………………… …صرف اللہ ھے…

مثال کے طور پر…..اگر کشتی چل رھی ھے….تو جن

سائینسی اصولوں کے تحت……وہ کشتی چل رھی ھے….وہ

سائینسدانوں کے نہیں وہ اللہ کے اصول ھیں…………………………………………………………دنیا کی ھر

مشین……….ھر………..ایجاد…….ھر کارنامے کی تکمیل….میں

اللہ کا ھاتھ ھے…

سائینس دانوں نے….کچھ نہیں کیا…انہوں نے پہلے سے

موجود………اصولوں کو ……اللہ کی مدد کو…. صرف discover کیا….
آج جتنی بھی……ان گنت….ایجادات….ھمارے اردگرد پھیلی

ھوئی ھیں…. ……وہ اللہ رب العزت کے ان دیکھے سہاروں

سے…….چل رھی ھیں….چلتی کشتی پر اللہ تعالی ا نے

انسانوں کو خبر دار کیا……………………………………………..

انسان ایسے نہ تھے….کہ..

. کشتی کو قابو کر سکتے..

اس کا صرف ایک ھی مطلب ھے….

کہ کائینات کے اندر جو کچھ بھی ھو رھا ھے….وہ اللہ کے

ان دیکھے ھاتھوں سے ………..ھو رھا ھے………

لہذا اڑتے پرندوں کو دیکھیں….تو اللہ کی تعریف کریں..

سبحان اللہ……….سبحان اللہ

کیونکہ………پرندے……..کو اللہ ھی اڑا رھا ھے….اور یہ کوئی

مولویانہ………………..بیان نہیں ھے…یہ باضابطہ ……..

سائینسی ……اور …..واضع طور…..پر ثابت شدہ حقیقت ھے… ….
جب ھم کہتے ھیں….اللہ مداخلت نہیں کرتا …..تب بھی

زندگی کے ھر پہلو………………..اور………ھر کام میں……………….

اسی کاھاتھ ھوتا ھے…. ………..

اللہ مداخلت کرتا ھے…جب خود چاھتا ھے یا کوئی صدق دل سے…..

عجزو انکسار کے ساتھ دعا مانگتا ھے…. اگر ھم چاھتے

ھیں کہ اللہ ھمہ وقت….ھمارا حامی و ناصر رھے…..تو اللہ سے مانگنا ….

سیکھیں……اور بار بار مانگیں اور……ایسے مانگیں جس

طرح ایک بہت چھوٹا بچہ ….اپنی ماں اور باپ سے …… بلک بلک کے…..اور

رو رو کر مانگتا ھے… ……آپ ذرا اندازہ لگائیں….کہ جب اللہ

انسانوں کو تنہا چھوڑ دیتا ھے……..تب بھی انسانوں کے

تمام تر کاموں میں اسی کا ھاتھ ھوتا ھے…

اور جب ا پکی …..آپکے والدین کی دعاوں کی وجہ سے……اللہ آپ کو
تنہا نہیں چھوڑتا….. اور آپکی مدد کرتا ھے….تو صورت حال کتنی بدل جاتی ھے..اور

جب انسان …….لوگوں کے حقوق …..چھیننے…..رات دن

منافقت ……….جھوٹ …….حرام کی کمائی ……….

غنڈہ گردی ……..ظلم ………شراب…..شباب…..مستی….

لوگوں کو مارنا پیٹنا……… جیسے کام کر رھا ھوتا ھے

اور گناھوں میں لتھڑی ھوئی زندگی گزار رھا ھوتا ھے…. تو

اول تو دعا کے لئے اسکے ھاتھ ……. اٹھ نہیں سکتے…
اگر مصنوئی ادا کاری….کے طور پر اٹھ بھی جائیں.

تو قطعی طور پر وہ سرسری…………………….اور………………..جذبے ..و عاجزی

سے مکمل طور خالی ھوتے ھیں.

عاجزی سے دعا صرف وھی مانگ سکتا ھے….جو ھر روز اللہ کے سامنے ……
دن میں پانچ ملاقاتوں…………………نمازوں………..

…..ذکراذکار….. ………اور

مراقبے کے عمل سے گزرتا ھے…

جب آدمی کے اندر گناہ………….کی شدید کیفیئت transe

چل رھی ھوتی ھے……اس وقت اللہ جیسی پاک ھستی سےدعا میں ………..وہ……………… کس طرح ھم کلام ھو سکتا ھے…..؟؟
ھاں اگر گناھوں پر ندامت کے ساتھ……………..اللہ کے سامنے..

وہ ھاتھ اٹھائے تو ..

پھر عاجزی بھر پور طریقے سے ممکن ھے….

اسی موزوع پر بات جاری رھے گی….

آپکا مخلص ناچیز عبدالقیوم خان

عیسےاخیل دور تے نئی .بات سے بات-3
دعا ایک بڑا عامل ضرور ھے…لیکن دنیا میں ………تہذیبی …. …سیاسی …سماجی………………اور……….معاشی…… تبدیلیاں….صرف اور صرف… انسانی سوچ بچار……….اور ……..مسلسل ……..کوشش…….کے ذریعے وقوع پذیر ھوئی ھیں…اور اللہ
کی منشا ء بھی یہی تھی… اللہ تعالےا کی مہربانیوں کا …..پہلا قدرتی پیکیج………….. ….. اتنا بڑا ھے..کہ دنیا کا کوئی….مسلمان….ھندو….عیسائی …یہودی….برھ مت…سکھ. زندگی کے جس شعبے میں محنت کرے…وہاللہ کو مانے……یا نہ مانے…اسے بطور انسان کامیابی ملے گی.
ماں دنیا میں جتنا خیال رکھ …..سکتی ھے….اللہ تعالےا کی
خودکار مہربانیوں کا. قدرتی پیکیج …………… اس سے 70 گنا بڑا ھے
کائینات کے اندر ایسی سینکڑوں چیزیں ھیں…جو ھمہ وقت

انسان کی …….خوشی……………اسکی نشونما…..اس کی ترقی………اور اسکی زندگی کی حفاظت کرتی ھیں..

دنیا کی ساری تہزیبی…ثقافتی ….اور سائینسی ترقی

اللہ تعالےا کی مہربانیوں کے پہلے پیکج کی وجہ سے ھوئی..

. اللہ کی طرف سے کائینات کی سینکڑوں چیزیں..

بلا تفریق رنگ و نسل………….اور……..مذھب………

انسان …..کو ……ھر لمحہ سپورٹ کر رھی ھیں…..

انسان اپنی سوچ…..اور…….مسلسل کوشش ….سے…….پتھر کے دور سے شروع ھو ا اور
ترقی کرتے کرتے… ……. پہیئے …. سائیکل…کار ….ھوائی جہاز…….ریڈیو ……ٹی وی….کمپیوٹر…..موبائیل…..
جدید آرکیٹیکچرل کئی منزلہ عمارات…
حتی ا کہ سورج …….چاند ستاروں……… اور میڈیکل سائینس کی دنیا میں………..جینز …….سٹیم سیل تھراپی …..اور ڈی این اے …….تک جا ہہنچا یہ صرف …..انسان کی…..

اپنی کوششوں سے نہیں …..ھوا….اگر اللہ تعالی نے کائینات کے اندر……..انسانوں کے لئے وہ پہلا سپورٹ سسٹم نہ رکھا ھوتا…
تو انسان آج بھی پتھر کے دور میں جی رھا ھوتا..

دعا کا مقام بے پناہ اھم ھے…اور یہ بندے اور اللہ کے درمیان

ایک بڑا بنیادی تعلق ھے…لیکن انسانی کامیابیوں کو… ……

اللہ تعالےا کی نعمتوں ……. کے پہلے پیکج کی

مدد سے حاصل کیا جاسکتا ھے

اگر ایسا نہ ھوتا تو ھندو….سکھ………عیسائی ……اور ھر

کافر کا کیا بنتا…..اسی لئے ھم کہتے ھیں

بسم اللہ الرحمن الرحیم…….کائینات کی سب سے خوبصورت

بات یہی ھے کہ…………

اللہ تعلی ا بہت مہربان…………اور نہایئت رحم والا ھے

انسان کی کامیابیاں…..اسکی پریشانیاں…اس کے گناہ…اور

اسکی اچھی یا بری ……………قسمت بالکل الگ topic ھے

اس پر پھر کبھی بات ھو گی…فی الحال اتنا ھی….. اپنا بہت سا خیال رکھیئے گا-اللہ حافظ……… مخلص…. نا چیز. قیوم نیازی

عیسےا خیل دور تے نئی.بات سے بات-4
جناب ڈاکٹر ظفر ھاشمی صاحب نے مجھے جو ٹاسک دیا ھے..تقدیر اور تدبیر….کیا ھیں…..ڈاکٹر صاحب یہ جو مذھبی گفتگو ھے……یہ بہت نازک…..تار ھے…اس تار پر ھاتھ نہ لگے تو بہتر ھے…میں نے تین پوسٹیں…..تو بہت آحتیاط کے ساتھ…..لکھ دی ھیں… لیکن اسلام کی پچھلے سینکڑوں سال سے…….تشریح….اور تفسیر تو پرائمری اور مڈل پاس ملا … ..لوگ کرتے آرھے ھیں ….اور …یہی تشریح اور تفسیر…………………….عوام الناس کے ذھنوں میں بیٹھی ھوئی ھے……
تقدیر ……اگر حقیقت ھے …..تب بھی ایک mismanagement ھے…….
ھمارے انتہائی ……..پیارے……..بھائی ….بیٹے…والدین….رشتے دار.. ….

………..کسی مجبوری ….یا روزگار…کی وجہ سے وطن سے دور ھوا کرتے تھے…اور
سالوں تک انکی کوئی خبر ھمیں نہیں مل سکتی تھی…تو اسے …….ھم…….
.
اپنا مقدر………….اپنی تقدیر سمجھ کر……برسوں تک صبر اور….حوصلے کے ساتھ…..اللہ کی طرف سے ایک چیز سمجھ کر برداشت کرتے تھے…..

ھم اپنے ان پیاروں سے نہیں مل سکتے تھے…اور کہتے کیا تھے……یہی نصیب میں لکھا ھوا تھا
انسانوں کا عقلی ارتقا……………….آگے بڑھتا رھا…اس میں اللہ کا خفیہ ھاتھ بھی کام کرتا رھا….جیسے پوسٹ .3 میں بیان ھو چکا ھے…
حتی ا کہ کمپوٹر….موبائیل اور ٹیلیفون آگئے…….
جب چاھیں اپنے پیاروں سے بات کر لیں ….انہیں دیکھ بھی لیں…….
ھزاروں کلو میٹر کی دوری پر اپنے پیاروں کو …….نہ مل سکنا….ایک بری تقدیر تھی…

اور اب وہ چاھے دنیا کے جس حصے میں ھوں ….جس وقت ….جتنی مرتبہ چاھیں مل سکتے ھیں …اب تقدیر

پکی…………….پکی…….اچھی ھو گئی ھے…..کیوں؟؟

پہلے وقتوں میں جب…..زیادہ ضرورت تھی ملاقاتو ں کی………………
…..
اللہ نے ……تقدیر میں…….نہ………..لکھ دی
اللہ اپنی…سنت نہیں بدلتا …..لیکن اب اللہ نے پکی پکی ھاں لکھ دی…..کیوں ؟؟
ایک زمانے میں لوگ ملیریا سے مر جاتے تھے….وہ تقدیر تھی

…………………….یا mis-management تھی……..انسانی ذھن ارتقاء کے عمل سے گزرا…
میڈیکل سائینس …..آگے چلی گئی….اب ملیریا سے کوئی نہیں مرتا……یہ اچھی تقدیر ھے……….یا معاملہ manage ھو گیا…
ایک ھی خاندان کے اندر بار بار شادیاں کرنے سے معذور بچے پیدا ھوتے ھیں…. …. یہ اللہ کی طرف سے ایک بری تقدیر ھے…….یا انسانوں کی جہالت………….

..ایک معذور بچہ ساری زندگی ذلت…..خواری….اور انتہائی تکلیف کی زندگی گزارتا ھے….تو کیا یہ سب کچھ اللہ نے کیا ھوتا ھے……………
پیدائیش………….موت………رزق……..بیماریاں…….ان میں انسانی ھاتھ نہیں ھو سکتا….صاف ظاھر ….کہ

یہ سب تقدیری فعل ھیں….کوئی بچہ کسی چپڑاسی کے گھر ……پیدا ھورھا ھے……..اور

کوئی صدر اور وزیر آعظم کے گھر………اس میں کوئی انسانی ھاتھ نہیں………
یہ تو صرف اللہ ھی نے لکھا تھا…کون کہاں پیدا ھو گا..

کسی طریقے سے manage نہیں ھو سکتا….کہ پتھے کو………..صدر کے گھر…….اور
گامے کو………کسی مزدور کے گھر پیدا کیا جائے…
دنیا کی ھر وہ چیز ………..جسکا……انسان کی اپنی عقل مندی یا

حماقت سے تعلق نہیں…..وہ تقدیر ھے

اور کسی بھی چیز کو manage کر لینے کا نام…………………….تدبیر ھے………
اگر فرض کیا کہ

انسان اپنی پیدائیش کے وقت سے ھی…..قوت برداشت سے محروم ھے……یا اسکے اندر بہت اچھی برداشت ھے
قوت فیصلہ سے محروم ھے…….حقیقت پسند فطرت سے محروم ھے…….یا اسکے بر عکس ھے
تخلیقی اور تعلیمی رحجان سے محروم…..ھے.یا اسکے برعکس ھے…………………………….. جب بچہ پیدا ھوا….تو اسکے ……..

والدین میں سے کوئی…….ایک یا دونوں …… . . پیدائیش سے پہلے فوت ھو چکے تھے…..یا دونوں موجود تھے
بچہ پیدائیشی home oriented ھے…………یعنی فطرتی طور پر گھر رھتا ……….
گھر والوں ھی کو ترجیع دیتا ھے………..یا

ایک بچہ پیدائیشی طور پر .. …………out sider ھے…….

زیادہ تر گھر………………..سے باھر رھنے والا اور گھر سے باھر والوں کو ترجیع دینے والا ھے

یہ سب اللہ کی طرف سے اچھی اور بری تقدیریں ھو سکتی ھیں…….
اللہ کو یہ بات بہت پسند ھے…کہ انسان زندگی کی ھر

پسماندگی کو…….فاصلوں کو………بیماریوں کو…….محرومیوں کو…………..بلندیوں کو ………..خود اپنے ذھنی ارتقا ء سے حل کرے…اور ھر وقتی مشکل کے لئے

اللہ سے اپنے دعا کے رشتے سے ھمہ وقت مانگے……اور اگر کوئی مسلہ نہ بھی ھو تو………دعا

عبادت …………………توبہ …..معافی…….مغفرت……….نماز

ذکر اذکار…….اور مراقبے میں رھے…
لیکن ……………..میری ناقص اور غیر مولویانہ رائے میں…..

ھر وہ برا نتیجہ جس کے پیچھے انسان کی اپنی حماقت اور

جہالت کار فرما ھو …….اسے اللہ تعالی ا کی پاک اور مقدس

ذات کی طرف نہیں موڑنا چاھئیے ……تقدیر کہہ کر

اللہ حافظ ……مخلص نا چیز عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی.بات سے بات -5
کامیاب زندگی کا راز ایک بہت پیچیدہ سوال ھے………یہ کسی دوست کا مجھ سے سوال ھے………..بڑا عجیب سوال ھے …………….یار میں ……………بھی …..آپ ھی ……………………طرح ………کا ایک …..عام ادمی ھوں…………
مجھے کیا پتہ کہ کامیاب لوگ کون ھوتے ھیں
چلو میں کوشش کرتا ھوں…………..

زندگی کو ھم تین حصوں میں …..دیکھتے ھیں
پہلا حصہ….زندگی کے پہلے بیس …پچیس سال آپ لرننگ پیرئیڈ….میں سکول…کالج…یونیورسٹی….یا ان پڑھ رہ جانے کی صورت میں……….کسی ورک شاپ پر گزارتے ھیں..
اور اپنے آپ کو ……اپنے شعبے کے لحاظ سے مضبوط ترین آدمی بناتے ھیں…
زندگی کا یہ پہلا…….فیز آپکا کیسے گزرا …..اسی پر اگلی زندگی کا انحصار ھے…..
اگر خدانخواسطہ آپکا یہ دور آوارہ گردی میں…..منہ مارتے گزر گیا ھے….تو پھر آپکی خیر نہیں ھے…سوائے اسکے
کہ آپ کسی بڑے زمیندار …..بہت بڑے تاجر کے بیٹے ھیں

لیکن کسی بہت امیر باپ کا ان پڑھ بیٹا…..سارے خاندان کے لئے ………..ساری زندگی…………………………………ایک عذاب ھوتا ھے…….
پھر پریکٹیکل ….لائف کا ٹائم شروع ھوتا ھے ..

اگر آپکی لائین تعلیم والی تھی…آپ ڈاکٹر …انجینئیر …یا ..

گزیٹڈ آفیسر بن گئے ھیں ……آپ زندگی کی 75 فیصد ذلت سے بچ ……….گئیے ھیں…..

اگر تعلیم کی لائین تھی….لیکن عزائم اور ذھنی صلاحئیت

کمزور تھی….آپکو ھلکی پھلکی…..گیارھویں ….چودھویں …

سکیل کی نوکری مل گئی ھے…….آپکا خاندانی کوئی ….

.زمین………کوئی بزنس بالکل نہیں ھے………آپکی زندگی تو

مشکل گزرے گی………لیکن جیسے تیسے گزر جائیگی….کم

ذلت …….آپکے حصے میں ……..شاید آئیگی…….اچھی…بہت اچھی. …………اور کمزور سرکاری نوکرئ کا ایک ھی تحفظ ھے………..کہ
آپکو زندگی کی آخری سٹیج میں کم از کم پینشن تو ملے گی.

زندگی کا دوسرا فیز …….آپکی سوشل لائف ھے…

دنیا میں رھنے کے لئے سوشل سرکل بنانا بہت ضروری

ھے….اگر آپکے سرکل میں کل دس آدمی ھیں….ان سب کی افادئیت……اور صلاحیئت…جدا جدا ھوگی……..
ان کی وجہ سے آپ کسی حد تک اپنے اندر اعتماد محسوس
کر سکتے ھیں….

اور اگر زندگی کے پہلے فیز کی وجہ سے………آپ …………ایک بڑے آدمی ھیں……………ایک …گھونگلو .. …..نہیں ھیں …تو آپکا سوشل سرکل اتنا بڑا ھوگا….کہ آپ………..اس سرکل سے تنگ ھونگے…لوگ زبردستی .
آپ سے تعلق ……..بناتے نظر آئیں گے ………

ایک معاشرے میں رھتے ھوئے….زندگی میں………………..آپکو…………روزانہ …………….ھفتے میں………….مہینے………میں ……..بے شمار چھوٹے چھوٹے…..اور کچھ قدرے مشکل مسائیل ……کا سامنا ھو سکتا ھے…

معاشرے کا ھر فرد…..کسی نہ کسی صلاحئیت کا ….ایک …

قدرتی……….پیکج ھے……….آپ کے لئے …

آپکا کوئی کام……..پھنستا ھے….آپکا سوشل سرکل سینکڑوں بندوں …………..پر مشتمل ھے

ان میں سے کوئی دو ……..تین ……….کم یا زیادہ…بندے مفت ……………دوستی میں یا…

کمرشل بنیاد پر…..آپکو اس مسلے ء سے باھر نکال سکتے ھیں…اور یہ سب آپکی ایک موبائل کال پر ھوگا…

پھر یہ دیکھنا ضروری ھے کہ کیا آپکے سوشل سرکل میں کچھ ایسے آدمی بھی ھیں ….
جنکے ساتھ آہکی کیمسٹری بے حد ملتی ھے …اور آپکا ان دوستوں کے ساتھ ایک انجوائے منٹ کا سلسلہ ھے…اور اس انجوائے منٹ کو آپ وقفوں …….وقفوں سے celeberate کرتے ھیں …
یاد رھے کہ دوستوں کا ایسا سرکل بے حد ضروری ھے…………زندگی کے سارے مسائل ……….کو ……….ایک ……..سائیڈ پر رکھ کر …جب دوستوں کے ساتھ آپ ھنستے …….قہقہے لگاتے ……اور لطیفے سناتے ھیں تو آپکو اپنے زندہ ھونے کا احساس ھوتا ھے…………………………..در اصل یہی آپکی اصل زندگی ھے….

زندگی کا تیسرا فیز………دھرتی ……….معاشرے…………human fellows …………اور…………ملک جس میں اتنا عرصہ گزارا…..ان تمام سے جو تا حیات فائیدے اٹھائے …….اس قرض کی واپسی …..

ھم کسی بھی طریقے سے…..دنیا کے کسی بھی انسانی حقوق کے چارٹر کے ……..ذریعے اسے ایک مناسب رویہ قرار نہیں دے سکتے. ……….کہ………….. آپ صرف دولت کمائیں…….عیش کریں…….قہقہے لگائیں…..اور اپنی ذات کی خوشیاں……..اپنا پیٹ……….اپنی اولاد…..
اور رات دن
ڈالر………. …..ڈالر ……ڈالر ……کھیلیں اور حتی ا کہ اپنی قبر میں جا پڑیں……
آپ نے لازمی طور پر…….دھرتی کے ………………نا دار ….محروم ………بیمار……مفلس……….لوگوں کے دکھ بانٹنے ھیں…..دکھی انسانئیت کے سلگتے ھوئے مسائیل کو دیکھنا ھے……..
انکی طرف فلاحی …..ھاتھ بڑھانا ھے….انہیں اپنی طاقت کے مطابق حل کرنا ھے…ان کے اندر

خوشیاں ………..اور آسانیاں بانٹنی ھیں….یہ آپ پر ایک قرض ھے………….جو آپ نے اتارنا ھے…….
صرف اپنے لئے جینا کوئی ……..جینا……. نہیں ھے…

اللہ حافظ …..مخلص ناچیز عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی.بات سے بات.6

کیا ایک عام آدمی…کی مالی پریشانیاں … ..تکلیفیں…اور مختلف مصیبتیں…. کسی ملک کی ….ریاستی ناکامی ھوتی ھے…..یا اسکا مقدر……اور تقدیر ھوتی ھیں..

یہ سوال میں نے اپنے سامنے بیٹھے ھوئے اسسٹنٹ کمشنر عیسےا خیل جناب سعید خان سے پوچھا ..

یہ لوگ ….جیسا کہ آپ جانتے ھیں کہ ….انتہائی ذھین فطین

ھوتے ھیں….تب ھی یہ ڈی ایم جی گروپ میں نوکریاں حاصل کرتے ھیں…….اے سی صاحب نے کہا…کہ

ترقی یافتہ ملکوں میں …..عام آدمی کی پریشانیاں تھرڈ ورلڈ کے ملکوں جیسی نہیں ھوتی…

لہذا صافئ ظا ھر ھے….عام آدمی کی تمام مصیبتیں زیادہ تر کسی ملک کی ریاستی کمزوری گنی جائینگی

2015 میں ……C 42 چینل پر میں نے ایک 54/55 سال کے ایک جولی نامی بندے کا انٹرویو خود دیکھا

دو بندے ….مسٹر جولی کے دائیں بائیں چلتے ھوئے ھاتھ میں

مائیک پکڑے …..ھوئے ….انٹرویو کر رھے تھے….

انٹرویو کے دوران پتہ چلا کہ جولی نامی بندہ …فیصل آباد

سے ……….اپنی جوانی کے وقت پاکستان سے ولایئت گیا

اور ساری زندگی واپس نہیں آ سکا ..

انٹرویو کے دوران ان دو بندوں نے مختلف چھوٹی چھوٹی

باتیں ….جولی سے پوچھیں ….پھر چلتے چلتے انہوں نے

جولی سے کہا …..
ادھر جرمنی میں تمہارے ساتھ کوئی خاص واقع …اگر پیش

ھوا ھو تو بتاو ….. ..جولی نے کہا

ایک دن میں جرمنی میں اپنے جاب سے واپس اہنے …. رھنے والے

کواٹر میں پہنچا تو وھاں………..مجھے……….اپنے کمرے کے دروازے پر پڑا

ھوا ایک لیٹر ………ملا …..میں نے اسے کھول کر پڑھا

تو خط کے اندر لکھا ھوا تھا …کہ میں فلاں جگہ پر ایک

ھسپتال سے رابطہ کروں
جولی کہتا ھے کہ میں بڑا حیران ھوا کہ ………..میں بالکل

خیریئت سے ھوں ………اور مجھے ھسپتال سے رابطہ کرنے

کا کیوں کہہ رھے ھیں… جولی نے کہا کہ چلو ھسپتال جا کر

دیکھتے ھیں کہ کیا ماجرہ ھے

جولی کہتا ھے کہ جب میں اس ھسپتال پہنچا تو انہوں

نے کہا کہ ……..مسٹر جولی تم مڈل ایسٹ سے کوئی

عجیب و غریب بیماری اپنے ساتھ لائے ھو….جس کے متعلق

یہ کہنا بہت مشکل ھے………کہ در اصل یہ بیماری ھے کیا

لیکن اب تم جرمنی کے شہری ھو…..یہ اس ملک کی ایک

ریاستی ذمہ داری ھے کہ اس بیماری کا پتہ چلایا جائے اور
تمہیں اس سے چھٹکارا دلایا جائے….اور تمہارا علاج کیا جائے

جولی نے کہا ….پھر انہوں نے کہا کہ ھسپتال کے اندر تمہارے

لئے کمرہ نمبر فلاں بک ھے…….ادھر تمہیں سال دو سال رھنا ھے..
جولی نے انٹر ویو میں کہا ……اس کمرے کے اندر نرسوں کی

نگرانی میں دوائی…….رھنا ….کھانا پینا ……..لانڈری…..ناشتہ وغیرہ بالکل فری……..مختلف وقفوں سے با قائیدہ ٹیسٹ ……
پورا سال ھوتے رھے……..جولی نے کہا میں وھا ں بہت تنگ

تھا……وہ مسلسل یہ تحقیق کرتے رھے کہ اس بیماری کو

ڈایگنوز …………….کر سکیں لیکن انہیں سمجھ نہ آئی

پھر انہوں نے ……….ایک کریٹیکل فیصلہ لیا…

جولی کہتا ھے ….مجھے اچا نک انہوں نے کہا کہ دو دن بعد

تمہارا آپریشن ھے….اور جرمنی کے بہت بڑے ڈاکٹر اس آپریشن کو آپریٹ کریں گے………….یہ دیکھنے کے لئے کہ

یہ بیماری .. دراصل ……..ھے…..کیا……

اپریشن کے دن مجھ سے کہا گیا …….کہ مسٹر جولی آپکے

بچنے کے چانس ……….صرف……….10 فیصد ھیں

آپ اپنے کسی ایسے دوست کو بلائیں …..جو تحریری طور

ایک فارم بھر دے…..اور……….وہ مرنے کے بعد آپکی ڈیڈ باڈی

وصول کر سکے..
جولی کہتا ھے……..میرا کوئی ایسا دوست نہیں تھا جو میری ڈیڈ باڈی وصول کر کے….

میں نے …..بس ایک معمولی جان پہچان والے آدمی کا فون نمبر انہیں دے دیا…ھسپتال کی انتظامیہ نے میرے اس جاننے والے کو ساری صورت حال بتائی…جولی کہتا ھے…..کہ میں حیران ھوا جب اس نے حامی بھر

لی……اور وہ ھسپتال سے بہت دور تھا لیکن وہ ایک ھی گھنٹے کے اندر

اس ھسپتال میں پہنچ گیا….اور ا س نے فار م fill کر دیا

ڈاکٹروں نے مجھے نشہ نہیں دیا……..کہ یہ بقول ڈاکٹرز کے

خطرناک ھو سکتا تھا…

جولی کہتا ھے………مجھے اپنے پچنے کی کوئی آس نہیں

تھی……….میں مرنے کے لئے ………………تیا ر تھا…..ٹھیک دس منٹ بعد مجھے ایک ڈاکٹر نے کہا…..
مسٹر جولی…..تم بچ گئے congratulation
جولی کہتا ھے کہ
خوشی کے مارے میرے آنسو چھلک رھے تھے….

آپریشن کی کامیابی کے بعد………….جولی کہتا ھے کہ انہوںنے مجھے کہا کہ……مسٹر جولی تمہیں ایک سال اور

ادھر رہ کر ابھی اور دوائی کھانی ھے……لیکن اب تمہا ری زندگی کو………
کوئی خطرہ نہیں ھے.
کچھ مہنے …………..میں اس کمرے میں رھا پھر اسی

دوست کی منت کی کہ آو ان کو تحریری گارنٹی دو کہ دوائی
تم مجھے باقائدگی سے کھلاو گے…….یار
مجھے یہاں سے نکالو
جولی نے جو آخری فقرہ کہا …………وہ یہ تھا
اگر میں پاکستان میں ھوتا تو مر چکا ھوتا

میرے معزز دوستو………..ٹھیک اسی وقت جب جولی کو لیٹر

ملا وہ اگر پاکستان میں ھوتا …………………تو کیا جولی کو خودکار طریقے سے……
بغیر پیسے کو involve کئیے یہ لیٹر …….یہ آگاھی کسی نے دینی تھی……
اگر بہت سا پیسہ …………………………جولی کے پاس پاکستان میں ………………..نہ ھوتا

تو ھم سب نے کیا کہنا تھا……..او بیچارہ غریب آدمی ….

چاپائی پر پڑا ھے……….بس جی…………..اسکانصیب …..مقدر

اس بیچارے کی قسمت میں یہی لکا تھا
اللہ کی مرضی……….جی

کوئی کیا کر سکتا ھے…. لیکن اگلے گھنٹے اگر وہ اسی غربت کی حالت میں
جرمنی……….پہنچا دیا جائے …….عیسائیوں کے ملک میں
وھاں
جولی کو لیٹر…………………آگاھی بھی خود بخود ملے گی.

علاج بھی فری بلکہ by force ھو گا ……………….اور وہ

بری تقدیر جو خود اللہ پاک نے…………جولی کی لکھنی تھی….وہ
اسے ایک عیسائی ملک میں………….ملتوی کر دیگا

لہذا اللہ کی تقدیریں ضرور ھیں….. لیکن کچھ گناہ ھمارے

حکمرانوں ……………….کے اور کچھ روئیے ھمارے…………… بطور قوم بھی ھیں
ریاست کو ………..ماں کا درجہ نہ دے سکنے کا قصور

ھمارے ان حکمرانوں کا ھے…..جو عوام کی خیر نہیں مانگتے

اپنے وسائیل ……….اپنا پیٹ ……اپنے قبضے.. …….. ..اپنی جائیدادوں……………..اور اپنا مال بڑھانے سے دلچسپی رکھتے ھیں.

اگر دنیا بھر کے ترقی یافتہ ملکوں…………..اور قوموں نے

سچے دل سے اپنی ریاستوں کو ماں جیسا بنا لیا ھے جہاں

تھرڈ ورلڈ کے پسماندہ علاقوں کے بد حال لوگوں کی بری تقدیریں………..
مٹ جاتی ھیں.
تو وہ ملک اور اسکے افراد ……………اور اسکے حکمران ریاست کو ماں جیسا
کیوں نہیں سکتے……….جہاں یہ ایک اسلامی جمہوری ریاست ھے….جہا ں کلمہ گو……….اور امت مسلمہ رھتی ھے
لہذا اللہ کی تقدیریں برحق…………..لیکن

کسی عام بندے کے دکھ…………..مالی پریشانیاں ……….اور مصیبتیں در اصل ریاستو ں کی کمزوری ھوتی ھے

اللہ حافظ مخلص نا چیز عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی..بات سے بات.7

ٹیچنگ لائین میں…یہ مشا ہدات ھوتے تھے..اگر بطور استاد آپ طلبا کے سامنے کھڑے ھو کر لگاتار بول رھے ھیں…تو طلبا پیچھے بیٹھ کر …….کوئی اور کام کر رھے ھوتے تھے…پھر

وقت نے سکھایا….تمام لرننگ…..concept making …..دماغ میں بٹھانے ……اور سب کچھ لکھ کر دینے میں 80 فیصد طلبا کی مصروفئیت ….اور 20 فیصد ٹیچر کی……تو طلبا ھر نئے سبق میں انتہائی active رھتے تھے…اور وہ
وقت کے ساتھ ساتھ قابلیئت کی طرف بڑھتے رھتے تھے…

جن قوموں نے سچ کو…..اپنی ذاتی کوشش سے جانتے ھوئے

پچاس سال………سو سال لگا ئے……انہوں نے اپنے پیروں پر

چل کر………سچ کو جا ڈھونڈا……………..اور اسلام کے بالکل

نزدیک آگئے….کیونکہ ھر سچائی عین اسلام…..اور عین حق ھے….ھم جیسی جن قوموں کو سچ مولوی….نے بتایا………ابا جاننے بتایا….نانی جان نے بتایا…….استاد صاحب نے …..پندو نصیحت کی…..وہ اسلام سے پرے کھڑے رہ گئے…..حج ….نمازیں……جمعے ……….اور میلادیں انکا کچھ نہ بگاڑ سکیں….

اس سچ کو دریافت کرنے میں…..جب تک ھمیں عملی زندگی میںدکھے اور چوٹیں نہ لگیں …..ھم سیانے نہیں بنتے اسلام دنیا کا سب سے بڑا فطری….حقیقی …….دین ھے

انسانی فطرت کے بالکل قریب……

جب امریکہ…..برطانیہ جاتے ھیں تو وھاں پورا پورا اسلام نظر آتا ھے…..
اور مسلمان ایک نظر نہیں آتا…. اور جب اپنے ملک واپس

آتے ھیں تو…..ھر طرف مسلمان ھی مسلمان نظر آتے ھیں اسلام کہیں نظر نہیں آتا. جیسے ھی ماہ رمضان آتا ھے….چیزیں بہت مہنگی ھو جاتی ھیں ……اور اسلام غائیب ھو جاتا ھے…..اور وہ سارے شیاطین جو کہ کہیں باندھ دئے جاتے ھیں…..وہیں سے بیٹھ کر تالی بجاتے ھیں….. وہ دیکھو …..مسلمانوں نے مسمانوں کو تکلیف پہنچانے کے لئیے کس طرح کام خود ھی کردیا ….جبکہ ھم تو یہا ں بندھے ھوئے ھیں…
ستر سال گزر گئے ایک آزاد ملک میں رھتے ھوئے…..اسلام

ھمارے لیکچر کا حصہ ضرور ھے……………ھمارے character کا حصہ نہیں بن سکا……….کردار کے لحاظ سے ھم دنیا کی بد ترین قوم ھیں……. زندگی کے سارے indicator اس بات کی گواھی دیتے ھیں….. کہ ھم دنیا کی قوموں کی صف میں کسی آخری قطار میں کھڑ ے ھیں…جھوٹ……منافقت……….فراڈ. ……دھوکہ دیہی …..سٹریٹ کرائم……اغوا برائے تاوان.غنڈہ گردی.ڈاکہ زنی…………………….. .ملاوٹ کی بنیاد پر بڑے بڑے کارخانے………….دھوکی دیہی پر مبنی………………پیری فقیری ……اور سینکڑوں کے حساب سے دو نمبر

دوائیاں……………….جعلی دوائی لکھنے والے ھزاروں کی تعداد میں ڈاکٹر حضرات…………..کچھ بہت اچھے ڈاکٹروں سے معذرت کے ساتھ…….
الغرض ………پاکستان میں ستر سال کے بعد بھی…….ھم آج ایک
زوال پزیر …… .معاشرے میں. ………سانس لے رھے ھیں تیس سال تک جمہورئیت کے نام پر ………..پاکستان میں حکومت کرنے والے ایک حکمران کی اولاد کھربوں روپیوں کی جائیدادیں ……..اور پیسہ منی لانڈرنگ کے………….ذریعے باھر لے جانے پر ایک جوائینٹ انویسٹنگ کمیٹی کے سامنے سات سات گھنٹوں کی پیشی بھگت رھے ھیں…..اور بہنچوں پر بیٹھے نظرآتے ھیں….ھندو…..حقیقی طور پر ایک تنگ نظر………اور متعصب قوم ھے قائدآعظم محمد علی جناح کا یہ آحسان عظیم ھے……کہ ان

ظالم ھندووں سے ھمیں نجات دلا کر…………….خود قبر میں چلا گیا…….
حالانکہ انگریز ھمیں ھندووں کے حوالے کرنے کا پورا ارادہ
کر چکا تھا.

ورنہ آج ھمارا بھی وھی حشر ھو رھا ھوتا…..جو بھارت میں

رہ جانے والے مسلمانوں کا ھو رھا ھے…لیکن کھری اور سچی

بات یہی ھے کہ ھم نے………. اس آزاد ملک کی

اور آزادی کی قدر نہیں کی….

ھماری حالت اس شرابی…….کوابی ……..لوفر لفنگے…………

ان پڑھ بیٹے کی طرح ھے…….جسے اپنے مرحوم باپ کی

کروڑوں روپئیے کی جائیداد اور اربوں کی دولت مفت میں

بیٹھے………..بٹھائے ھاتھ آگئی ھو…………اور وہ ھر قسم کی

کمینگی کر رھا ھو……..

دوستو…….یہ ملک اور یہ آزادی بہت بڑی دولت ھے….ھم اگر

آج بھی اپنے دل سے یہ عہد کر لیں ھم میں سے ھر ایک

سچ……..حق….اور دیانت داری سے اپنا فرض نبھائے گا اور ھم

کبھی سیدھی لائین سے نہیں ھٹیں گے…….تو جو نقصان ھو چکا ھے …………….وہ

پورا ھو سکتا ھے….

اللہ حافظ………..مخلص ناچیز عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی.بات سے بات.9

میں نے چھ بڑے ضلعی افسروں کو لیٹر پوسٹ کر دیئے …..

اللہ کی آس پر…..حالانکہ پامسٹری …….اور علم الا عداد پر مجھے اسقدر کمانڈ نہیں تھی….جتنی اب ھے ….بس محدود اندازے لگانے والی بات تھی…2011 میں میرا کوک چینل.. ٹی وی اسلام آباد سے جب پروگرام ….علم الا عداد 34 منٹ کا ریلیز ھوا…..اس وقت بھی میں اچھا خاصہ آگے بڑھ چکا تھا لیکن مجھے……………….. میچورٹی ……اس پروگرام کے بھی بعد میں آئی….میرا وہ ٹی وی پروگرام …….یو ٹیوب پر Qayyum khan Show کے نام سے موجود ھے ……………..کوئی بھی دیکھ سکتا ھے 2002 میں جب میں…..کلور شریف میں ھیڈماسٹر تھا اس وقت میں پامسٹری اور ھندسوں کے علم میں ……بہت بنیادی سٹیج سے بھی نیچے تھا… البتہ کسی کو باتوں میں engageرکھنے کا فن ……ضرور رکھتا تھا………لیکن اب تو میرا واسطہ ……بیورو کریسی سے تھا  جن کے ساتھ …..کم از کم چالیس ….منٹ یا ایک گھنٹہ تکے مار کے……. فرضی …..مصنوعی ….کہانیاں سنا کے انہیں قائل کر لینا………بالکل نا ممکن تھا….بلکہ بہت ….خطرناک تھا….پھر میں نے……تیسرے دن جو فون کرنا تھا ….کیا وہ میرا فون …………….اٹینڈ کر لیں گے…مجھے تو یقین ھر گز نہیں تھا…. …………پھر وہ تیسرا دن آگیا … میں نے دھڑکتے دل کے ساتھ پی ٹی سی ایل پر ای ڈی او ریونیو کے آفس نمبر پر لائین ملا دی…گھنٹی کی آواز بجنے لگی….سو وسوے میرے دل میں آ رھے تھے…..ادھر سے ………….کسی نے ھیلو کہا…جی اسلام علیکم…میں ھیڈماسٹر ھائی سکول کلور بول رھا.ھوں ….مجھے ای ڈی او ریونیو صاحب سے بات کرنی ھے…میں نے ایک ھی سانس میں بات …….مکمل کردیمیں ای ڈی او ریونیو بول رھا ھوں…جواب ملا سر میں نے اپنی ایک ریسرچ بک مکمل کرنے کے لیئے آپکو پامسٹری اور تاریخ پیدائیش کے حوا لے سے ایک لیٹر لکھا تھا.. وہ لیٹر  آپکو ملا تھا ؟ ھاں ملا تھا…..لیکن مجھے اسکی سمجھ نہیں آئی…وہ کیا مسلہ ھے…کیا اس کتاب میں میرا نام بھی آئیگا ….. نہیں …..اگر آپ نہیں چاھیں گے تو ھر گز آپکا نام کتاب میں نہیں آئیگا…..اور سر یہ اپکی شخصئیت پر ایک بہت دلچسپ تجزیہ analysis ھو گا ….آپ اسے بہت انجا ئے کریں گے یہ صرف کتاب کی تکمیل کے لئے ھے…….میں نے آپ سے کچھ نہیں لینا….اپ جو ٹائم رکھیں گے…..میں عیسےا خیل سے آپکے پاس آجاونگا اچھا….. تو ایسا ھے کہ………..پھر کل شام کو میرے پاس آجائیں…ای ڈی او ریونیو نے اپنے سرکاری گھر کا ایڈریس بتایا فون …. …. پر بات کرتے کرتے …..میرا confidence اپنی جگہ پر پہنچ چکا تھا ……میں عام طور پر کہتا رھتا تھا کہ بڑے افسر بھی بالکل ھمارے جیسے ھوتے ھیں …ان کے ساتھ کھل کے بات کیا کریں………………………………………….شام ……….کے بس یہی چھ بجے میں ای ڈی او ریونیو کے گھر میں اسکے سامنے بیٹھا تھا….اسکے پاس ایک کلرک ضروری ڈاک پر ………….سائین کروا رھا تھا…اپنی گفتگو کے حساب سے…………جو وہ کلرک کے ساتھ کر رھا تھا……وہ قدرے سخت افسر لگ رھا تھا..

میں نے اس ساری situation کی بدترین حالت پر غور کیا زیادہ سے زیادہ وہ………….یہی ھو سکتی تھی……کہ اگر میں اسکے سامنے فیل ھو گیا تو وہ…..یہی ………..کہے گا آپ چلے جائیں یہا ں سے….بس اتنی سی بات ھے کچھ میرا حوصلہ کچھ اور بھی بحال ھو گیا….کلرک سے فارغ ھو کے………وہ مجھے کسی کمرے میں لے گیا ھم دونوں بیٹھ گیئے …….اس نے ملازم سے کہا …ھمارا مہمان ھے اسے کوئی……….ڈرنک پلائیں……پھر وہ میری طرف متوجہ ھوا……….ھاں جی ھیڈماسٹر صاحب سر آپ کو میانوالی کیسا لگا……..اب تو سارا نظام ضلع ناظم کے انڈر آگیا ھے……کیا آپ ناظم کے ساتھ ایڈجسٹ کر گیئے ھیں…………………
اصل ……….مقابلے میں ……..جانے سے پہلے میں نے اسے کسی اور ٹاپک میں الجھایا….
ضلع ناظم حمیر خان بہت بڑھا لکھا آدمی ھے ….اس کے ساتھ مجھے کبھی کوئی الجھن نہیں ھوئی…..بلکہ کبھی کبھار جب ناظم کے گرد لوگ گھیرا بہت تنگ کر لیتے ھیں اور وہ بہت تھک جاتے ھیں تو وہ مجھے فون کرتے ھیں

ای ڈی او صاحب would you like to rescue me
تو میں انہیں کہتا ھوں سر why not …i am just coming
اور جب میری گاڑی انکے گھر میں داخل ھوتی ھے.

تو وہ لوگوں سے کہتے ھیں…..دیکھو ای ڈی او صاحب آگئے ھیں………………میں بس آدھے گھنٹے میں آجاونگا یہاں سے ہلنا نہیں……………..اور پھر وہ میری گاڑی میں بیٹھ کے وھا ں سے غائیب ھو جاتے ھیں…..اور پھر واپس نہیں جاتے
تیس منٹ تک یہ ٹاپک چل گیا……..اور مجھے محسوس ھوا

ھم دونوں…….کافی حد تک برابر ھو چکے بیں چلو جی بسم اللہ کریں………
میں نے اس سے تاریخ پیدائییش پوچھی ……دو جنوری 1946
پھر میں نے ان کو کہا ذرا ھاتھ دکھائیں…..انہوں نے اپنی ہتھیلی …………….کھول کے میرے سامنے رکھ دی….
مجھے اس موقع پر پٹواری بہت یاد آیا …………..میں نے ای ڈی او……….کی زندگی کا پہلا سچ بہت احتیاط کے ساتھ بولنا تھا.. … کیونکہ میری پہلی غلطی …………….آخری غلطی ثابت ھونی تھی……………میں نے اسے کہا …………..آپ اگر کسی مسلہ پر اڑ جائیں تو دنیا کی کوئی طاقت آپ سے بات نہیں منوا سکتی بڑا جگرا ھے ان لوگوں کا جو آپکے ساتھ رھتے ھیں اور آپکو face کرتے ھیں اس نے اپنی ضد پر مجھے ایک پوری کہانی سنا ڈالی…
اس نے کہا اس ضد کی وجہ سے مجھے بڑے نقصان پہنچے میں نے دل ھی دل . میں پٹواری کو ٹکا کے ………….اپنے کلچر اور باپ دادا کی تربیئت کے عین مطابق ………ایک ستھری سی…… …….گالی نکالی….کی پیڈ نہیں چل رھا مجبوری ھے………باقی اگلی پوسٹ مین

آپکا مخلص ناچیز عبدالقیوم خان

عیسےا خیل دور تے نئی.بات سے بات.10

کسی کی شخصیئت کا تجزیہ کرنے کے لیئے …میرا طریقہ تین مرحلوں پر مشتمل تھا…
پہلے تاریخ پیدائیش……پھر ھتیلی کا مطالعہ …اور آخر میں
کچھ سوال جواب…..
تیسرا مرحلہ در اصل سوشل interaction تھا……یہ وہ مرحلہ تھا….ھر آفیسر میرا گہرا دوست بن جاتا تھا…اور اسکے
کچھ راز بھی لیک ھونے کا اندیشہ رھتا تھا…

مثال کے طور پر …..
کیا بغیر مطلب کے دوستی ……ممکن ھے …

محبت کیا چیز ھے…اسکو کیسے define کریں گے

آپ کی زندگی کا کوئی سبق آموز واقعہ آپکی زندگی میں…….کوئی guilty feeling موجود ھے …ایک طرف اتنا پیسہ موجود ھو جتنا آپکے تصور میں آسکتا ھے…اور دوسری طرف ایک اتنی خوبصورت خاتون موجود ھو…جتنا آپکے تصور میں آسکتی ھے…آپکو کہا جائے ان میں سے ایک چیز لو ……اور جاو تو آپ کس کا انتخاب کریں گے..
ایک مفلس….جاھل….. بے سہارہ آدمی درخواست لیکر آپکے دفتر میں آتا ھے….تو اپکے دل میں اس بندے کے متعلق پہلا تاثر کیا ابھرتا ھے…..نفرت ……یا……ھمدردی آپکی زندگی کا کوئی ایسا لمحہ ……..جس میں آپ نے اپنے آپکو بالکل بے بس محسوس کیا ھو…آپکی زندگی کا کوئی ایسا واقعہ جس میں آپ نے اللہ تعالی کی عظمت کو محسوس کیا ھو….وغیرہ وغیرہ ای ڈی او ریونیو بڑا باتونی اور ادیب بندہ تھا ..اس نے میرے سوالوں پر بڑے مزے لے لے کر …….بڑے ادیبانہ انداز میں واقعات کو describe کرنا شروع کیا….اور اسکی ایک طرح سے روحانی تسکین ھو رھی تھی…
ایک سوال کے جواب میں اسے اپنے بیمار بیٹے کو لنڈن ……لے کر جانا پڑ گیا اور وھاں اس کے پاس پیسے ختم ھو گیئے اور ایک عام سے آدمی نے کیسے ………..کیسے اسکی مدد کی اور یہ قصہ بہت لمبا ھو گیا ….اور اب حالات یہ ھو چکے تھے….اگر کوئی اوپر سے اجنبی بندہ کمرے میں داخل ھوتا تو وہ قطعی طور یہ نہیں بتا سکتا تھا..ان دو بندوں میں سے ای ڈی او کون ھے….بلکہ زیادہ وضاحتیں کرتے ھویئے یہ لگ رھا تھا….کہ میں ای ڈی او ھوں اور وہ……..بیچارہ صفائیاں پیش کر رھا ھے…
اور خود میرے دل میں بھی تاثر آ رھا تھا….یہ کوئی میرا پرانا کلاس فیلو ھے….کافی عرصے کے بعد ملاقات ھوئی ھے…………………………میں نے کہا ….کہ جی میں چلتا ھوں اگر دیر ھوگئی تو مجھے عیسےا خیل کی کوئی گاڑی نہیں ملے گی…اور میں اٹھ کھڑا ھوا…..اور میں حیران ھو گیا ….وہ بھی آٹھ کھڑا ھوا…….اور کہا …میں نے یہ بات تو ختم ھر حال میں کرنی ھے…
وہ میرے ساتھ کمرے سے نکلا …..بہت بڑے ایئریا میں واقعے اپنی کوٹھی کے گیٹ کی طرف میرے ساتھ چلنا شروع کیا اور اپنی بات کو بھی جاری رکھا……وہ گیٹ سے باھر میرے ساتھ نکل گیا اور ھم دونوں فٹ پاتھ پر آگیئے ….تھوڑی دیر کے لیئے اس نے ایک نئی بات شروع کی….اس نے کہا
ویسے تو میں ایک نالائق سا بندہ ھوں لیکن آجکل میں سابقہ ڈپٹی کمشنروں کے کھاتوں کا آڈٹ کر رھا ھوں وہ میرے دائیں کندھے کی طرف چل رھا تھا… بالکل لاشعوری طور پر میں نے اس کے کندھے پر ھاتھ رکھ کے اسے فٹ پاتھ سے نیچے دکھہ دے دیا……..اور وہ فٹ پاتھ سے نیچے اتر گیا اسے دھکہ دیتے ھوئے میرے منہ سے جو الفاظ نکلے وہ یہ تھے
اچھا…..ابھی آپ نالائق ھیں…..یعنی…
بالکل فطری رد عمل د یا اس نے…….وہ فٹ پاتھ کے اوپر چڑھ آیا
کوٹھی کے دوسرے گیٹ پر میں نے اسے کہا سر آپ واپس جائیں اب ………وھاں پانج منٹوں تک اس نے اپنی بات کو wind up کیا ……..اور واپس چلا گیا پٹواری جائے جہنم میں …….اتنا اچھا دوست میرے ھاتھ لگ گیا…کمال کی………………. اسکی description تھی….بڑا فنی….دلچسپ …….. لبرل……راجہ گل نواز………بیسویں سکیل کا ایک نڈر…..ضدی …….بہت خوبصورت دل والا …………….خوشاب کے نزدیک ……..کٹھہ سگرال کا بہت بڑا زمیندار میں نے اسے کہا ٹھیک تیسرے دن میری observation تحریری حالت میں آپکو مل جائے گی.. علم الا عداد اور پامسٹری کا فن تو مجھے آتا نہیں تھا…
البتہ میرے خط میں …… ………….اتنی موسیقی تھی کہ اسے پڑھ کے میرا رونے کو دل کرتا تھا اسکے اندر کی ساری خوبصورتیاں …….میں نے نچوڑ لی تھیں ………..خط پوسٹ ھو گیا
میں نے نہ ای ڈی او……………نہ جناب. .. ………..نہ راجہ
نہ گزارش ھے…………میں نے لکھا ……………………………ڈئیر گل !
……………..اور آخری فقرہ یہ تھا ….ان تعلقات میں اللہ وہ دن کبھی نہ لائے کہ میں آ پکے پاس کوئی کام لاوں.

گرمیوں کی رات دس بجے میرے گھر میں ptcl فون کی گھنٹی بجی…..میں باھر چارپائی سے اتر کر کمرے میں آیا فون اٹھایا…………………….میں گل بول رھا ھوں جی …سنائیں کیا حال ھے……..میرا خط مل گیا ھے قیوم صاحب آہکا خط د وپہر کو دفتر میں مل گیا تھا
وھاں تین چار مرتبہ میں نے اسے پڑھا اور
گھر آکر پھر دوتین مرتبہ پڑھا……….اس وقت بھی خط میرے ھاتھ میں ھے………………… قیوم صاحب آپکا خط پڑھ کر میں اپنے آپ کو بہت چھوٹا آدمی محسوس کر رھا ھوں آج میں میانوالی میں ھوں………اور کل کسی اور جگہ بھی ھو سکتا ھوں لکین زندگی میں جب بھی کبھی آپکو میری ضرورت پڑی…….تو گل ھمیشہ آپکا غلام رھے گا… …………………… ………………میں واپس چاپائی پر آکر لیٹ گیا……….چادر اوپر ڈالی اور اسی چادر سے دیر تک اپنے آنسو پونچھتا رھا .

مخلص …………. . نا چیز …. ….. عبدالقیوم خان

Your words for Mianwali and Mianwalians