NAURANGA -MY VILLAGE MY SWEET HEART

NAURANGA -MY VILLAGE MY SWEET HEART

 

I would feel hurt if I use “past tense i.e. was” while introducing my sweet village Nauranga; though it has apparently lost its physical identity due to continuous heavy erosion of River Indus and criminal negligence of our successive rulers, its name can never ever be deleted from the SMS of the evergreen “mobile hearts” of its residents. Nauranga is situated at the bank of River Indus in-between Jinnah Barrage and Chashma Barrage, Tehsil and District Mianwali, about 7 kilometers towards west from Tari Khel, a famous town situated on the western side of Kalabagh Road. After reading this article, the readers will come to know about the importance of this small and the most neglected part of the Punjab province (which got its place itself due to revolutionary education) and they will also realize that why I can’t dare to mention that it does not exist anymore. I am quite confident that one day, it will bring its “9th COLOUR” as per its name. Let us see and wait for that to happen!
Nauranga has lost its physical identity due to continuous heavy erosion of the River Indus. Its existence remained at stake for several years and now more than 99% of this village does not exist anymore. Thousands of hectares of fertile agricultural land (according to a rough estimate about 10,000 hectares) is under River Indus now. Unfortunately no proper action was taken by the District administration of Mianwali and the Government of Punjab to save the fertile agricultural land from more destruction.
The Name of Nauranga was initially indicated on the Web site of the Government of Punjab as a “Model Village” to be constructed, but later it disappeared due to unknown reasons. In fact, the construction of an embankment was the only way to save its identity. On the initiative of the Honorable Chief Minister Punjab, a feasibility report, prepared by the Irrigation department District Mianwali, was sent to the Government of Punjab for release of necessary funds, but no action was taken.
The people of the area have shifted to various places and they are living in a miserable condition. They have been waiting long time for an “angel” to come as a real “saviour”. The people in power usually close their eyes like “pigeons” on these occasions; the destruction of Nauranga, out sweet homeland, is the one of the examples of their criminal negligence in this respect.
Nauranga has been a very beautiful combination of different castes; Syeds (in a dominating position in terms of land ownership), Theems, Dharals (Awans/Maliks), local Pathans with different sub-castes, Wahgras, Cheehnas, Kaloos, Chhehloos, Sewras, Mahaeyas, Heers, etc. and also all other races on basis of professions; Qasias (butchers), Nais (barbers), Dhobis (washer men), Mochis (cobbler/shoe makers), Mohanas (boatmen), Tirkhans (Carpenters), Lohars (blacksmith), Sunars (Goldsmiths) etc.
It is worth mentioning that the religious harmony in this part of the world always remained extremely exemplary; no religious dispute at all. There used to be only one mosque (mosque of Allah) and between elders, it was decided that whoever gives “Azaan” (call for prayers) first, whether he is some Shia or Sunni, will be acceptable to everybody and there will be no second call for prayers at all. I have never seen this gesture elsewhere.
Once upon a time this village has been very famous throughout Mianwali District and Sargodha Division for the promotion of education. Thousands of students, who got their basic education with distinction until middle level from Nauranga, are very successfully working in various government departments, semi-government institutions, banks, armed forces and foreign missions.
The promotion of education goes to late Headmaster Syed Atta Muhammad Shah (May his soul live in eternal peace forever!) and to his entire team; highly honourable and respectable teachers (I am really in short of words to pay my respect and profound regards to all of them, because I have never found/seen their match), Syed Aulad Hussain Shah, Malik Muhammad Usman, Aalam Khan, Fateh Khan, Noor Muhammad Shah Qureshi, Saleh Muhammad Shah Qureshi, Muhammad Ibrahim, Ghulam Jilani Khan, Raza Muhammad FANI, Syed Muhammad Shah, Syed Gulzar Hussain Bukhari, Syed Ibqal Hussain Shah, Malik Muhammad Aslam, Syed Sher Bahadur Shah, Syed Nasim Hussain Shah, Atta ullah Theem etc…(my teachers and theirs students, please forgive me regarding protocol order if any, or if I forgot any name, their names can be added by the administrator of this site).
This whole team headed by Syed Atta Muhammad Shah, devoted their lives to teach the poor students of the area without any discrimination; they are indeed mentors of this area.None of them had materialistic approach.With due apologies to my all teachers, I would like to pay my highly profound regards especially and particularly to my uncle and my best matchless (BENAZIR) English teacher, Syed Aulad Hussain Shah (May Allah place his soul in eternal peace! AAMEEN). If the old students of Syed Aulad Hussain Shah open this site in Mianwali and read this article, they must salute his tomb and pay tribute to this great personality at the graveyard of Rokhri More (Mianwali) and pray for his soul to remain in eternal peace. We should be proud of all what he had taught to us and what he had achieved; it did not go in vain at all; his students are very successful everywhere in Pakistan and abroad due to his unique method of English teaching.
Here it would be injustice if I do not mention the name of my great and honourable uncle Syed Tasawur Hussain Shah (May Allah place his soul in eternal peace! AAMEEN), who has helped countless residents of Nuaranga (and even of whole Mianwali District) to get them recruited in different departments. We should all follow his path and that of our beloved and respectable elders and teachers to help the humanity.
I would also like to mention another uncle of mine, a very important person of this village, Syed Atta Hussain Shah (May Allah place his soul in eternal peace! AAMEEN). He remained very active on political front throughout his life. In fact, he is the man, who gave political identity to Nauranga. This village got a distinctive name in Mianwali District and the whole Sargodha Division, for education revolution due to its extremely devoted teachers, and at the same time, became famous on political scene because of Syed Atta Hussain Shah’s continuous untired efforts. They have all made a history regarding the introduction of this small piece of land (unfortunately loosing its identity now a days, as indicated above).
At the end I dedicate these few lines on Nauranga to all my teachers and request them to correct my mistakes like they used to do in the past. I would be highly obliged and feel honoured.

مرحوم گاؤں نورنگا -تحصیل و ضلع میانوالی م- دریائے سندھ کے کنارے

 

تحریر: سید محمد عقیل حسین شاہ نورنگا

 

یہ ہے منظر ہمارے مرحوم گاؤں نورنگا کا جو کہ تحصیل و ضلع میانوالی میں دریائے سندھ کے کنارے آباد تھا. یہ تصویر کسی خاص موقع کی نہیں بلکہ ہر سال گرمیوں کے موسم میں یہ منظر ہوتا تھا. سیلاب جون سے ستمبر تک رہتا تھا. مگر لوگ ہمت بالکل نہیں ہارتے تھے. زندگی کا پہیہ رواں دواں رہتا تھا.یہ گاؤں زندگی کی جملہ بنیادی ضروریات اور سہولیات سے محروم تھا. نہ سڑک، نہ گلیاں، نہ نالیاں، نہ بجلی، نہ گیس، نہ سیوریج، نہ لیٹرینیں، نہ ٹیلی-فون وغیرہ وغیرہ. لوگوں کا زیادہ تر ذریعہ معاش کھیتی باڑی تھا. ہل بیلوں کی جوڑی سے جوڑ کر چلاے جاتے تھے. ٹریکٹر اور تھریشر کا نام ونشان تک نہیں تھا. سارا کام جسمانی محنت و مشقت کا تھا اس لئے لوگوں کی عمومی صحت اچھی تھی. لوگ زیادہ تر گندم اگاتے تھے یا کچھ لوگ گنا بھی کاشت کر لیا کرتے تھے. یہاں گنے سے یاد آیا کہ کئ لوگوں نے گنے سے گڑ بنانے کیلئے بیلنے بھی رکھے ہوئے تھے جس سے گنے کا رس نکال کر بعد میں اس کو کڑاہے میں ڈال کر ایک خاص درجہ حرارت تک گرم کر کے گڑ بنایا جاتا تھا، بچے گڑ بننے کے عمل سے پہلے اس کی “پت” گنے پر لگا کر بہت مزے مزے سے کھایا کرتے تھے. یاد رہے کہ یہ پت گنے کے کھیت کے مالک کی خصوصی اجازت سے ملتی تھی. یہ “پت” صبح گرم گرم روٹی پر لگا کر ناشتے کیلئے بھی استعمال کی جاتی تھی. دوست محمد شاہ نے دیسی کھنڈ بنانے کی ایک مشین بھی رکھی ہوئی تھی جس سے کمادوں (گنے) کا جوس نکال کر اور “پت” بنانے کے عمل کے بعد ایک مخصوص طریقہ کار کو بروئے کار لاتے ہوئے دیسی کھنڈ بنائی جاتی تھی کیونکہ اس وقت ولایتی کھنڈ (چینی) کا دور دراز تک نام و نشان نہیں تھا. جب ولایتی کھنڈ کی گاؤں میں دریافت ہوئی تو خواتین مہمانوں کی آمد کے موقع پر ایک دوسرے سے یہ نایاب چینی مانگ کر چائے بناتی تھیں اور کہتی تھیں کہ اگر مہمانوں کو گڑ کی چائے پیش کی گئی تو اہل خانہ کی ناک کٹ جائے گی یوں چینی کہیں سے مل جانے کے بعد ناک بھی کٹنے سے بچ جاتی تھی یعنی عزت رہ جاتی تھی. یہ علیحدہ بات ہے کہ آج اتنے عرصے بعد پروفیسر ڈاکٹر حضرات بھی اصلی گڑ تلاش کرنے میں لگے ہوئے ہیں کیونکہ ان کے مطابق چینی کا استعمال در اصل نقصان دہ ہے. ہمارے گاؤں میں تقریباً ہر گھر نے اپنی ضرورت کے مطابق مرغیاں اور جانور گائے، بیل اور بھینسیں پال رکھی تھیں جن سے ان کا تازہ خالص دودھ، دہی اور مکھن کا گزارہ ہو جاتا تھا. جو اس سہولت سے محروم ہوتا اسے پڑوسی بغیر کسی معاوضہ کے یہ نعمتیں فراہم کر دیتے تھے کیونکہ وہ دودھ کو “نور پیر” کہتے تھے اور بیچنا گناہ سمجھتے تھے، میں اکثر سوچتا ہوں کہ ہم آج کہاں سے ایسے لوگ ڈھونڈیں گے. خلوص کا دور دورہ تھا. غریب اور امیر کا کوئی فرق نہیں تھا کیونکہ سب کے گھر ایک جیسے اور کچے تھے مگر دل انتہائی سچے تھے.

میانوالی شہر جو گاؤں سے چوبیس کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے جانے کے لیے تقریباً دس کلومیٹر پیدل چلنا پڑتا تھا یا سائیکل پر وہ بھی جس کے نصیب میں ہوتا تھا. میانوالی جانے کے تین راستے تھے، روکھڑی براستہ چک دو سیری، تری خیل براستہ شیخاں والا اور موچھ براستہ شیخ آلی, سلطان والا یا محمد شریف والی. گاؤں میں کئی اوٹھی (اونٹوں کے مالک) بھی تھے جو دکانداروں کا سودا سلف لانے کے لئے صبح سویرے گاؤں سے میانوالی براستہ روکھڑی شہباز خیل سے جاتے اور شام سے پہلے واپس آ جاتے تھے. اونٹ کئی دفعہ خواتین کے لیئے زیادہ فاصلے کے لیے سواری کا کام بھی دیتے تھے. لیکن زیادہ تر خواتین اونٹ کے بیٹھنے اور اٹھنے کے مخصوص انداز سے بہت خوف کھاتی تھیں. چھوٹی عمر میں ایک دو دفعہ مجھے بھی اس خوفناک تجربے سے گزرنا پڑا. سواری سے یاد آیا کہ اس زمانے میں کچھ لوگوں نے اپنے شوق کے لیے اور سفری سہولیات کے لیے گھوڑیاں بھی پال رکھی تھیں ان میں سے مرید حسین شاہ اور برادران کی سفید رنگ کی اور دوست محمد شاہ کی لال رنگ کی گھوڑیاں پورے علاقے میں بہت مشہور تھیں. یہ بہت پلی ہوئ اور “اتھری” گھوڑیاں تھیں. کبھی کبھی لوگ ان سے ادھر ادھر جانے کے لئے یہ گھوڑیاں مانگ کر بھی لے جاتے تھے. بہت عرصے بعد غالباً 1984 میں اقبال حسین شاہ نے نورنگا میں پہلا موٹرسائیکل یاماہا خریدا تو سب لوگوں کو ایک اچھی سواری نصیب ہو گئ کیونکہ ان سے کافی لوگ یہ سواری مانگ کے لے جاتے تھے.

یہاں پر دکانداروں کے ذکر سے یاد آیا کہ اس زمانے میں سب سے مشہور دکان سید عطا حسین شاہ اور ان کے برادران سید مرید حسین شاہ اور الطاف حسین شاہ، ملک غلام محمد تھیم اور ملک غلام فرید ڈہرال کی تھیں. آخری والے صاحب بچوں میں ایک خاص وجہ سے کافی مشہور تھے. دادا نظر حسین شاہ کی پکوڑوں کی دکان بہت مشہور تھی. اس کے ساتھ نورنگا کی مشہور زمانہ آٹے کی چکی ہوا کرتی تھی. اسی چکی پر اس زمانے میں نورنگا کا پہلا قتل بھی ہوا تھا. ان دکانداروں کے کافی عرصہ بعد شیر بہادر شاہ، اقبال حسین شاہ، امان اللہ خان اور کئی اور لوگوں نے بھی دکانیں کھولی تھیں.

ان انتہائی نامساعد حالات کے باوجود یہ وہ علاقہ ہے جس نے تعلیم کے میدان میں پورے ضلع میانوالی، ڈویژن سرگودھا، صوبہ پنجاب اور پاکستان میں نام روشن کیا. اعلیٰ اور معیاری تعلیم کا سہرہ ہیڈماسٹر عطا محمد شاہ اور ان کی پوری ٹیم کو جاتا ہے انگریزی کے استاد سید اولاد حسین شاہ اپنے درس و تدریس کے طریقہ کار میں اپنی مثال آپ تھے. سب اساتذہ کرام نے غریب بچوں کے بہترین مستقبل کو سنوارنے کے لیے اپنی زندگیاں وقف کر دی تھیں. نورنگا سے ابتدائی تعلیم مڈل لیول تک حاصل کرنے کے بعد طلبہ کی اتنی مضبوط بنیاد بن جاتی تھی کہ انہیں سنٹرل ماڈل سکول میانوالی اور بعد ازاں جامع ہائ سکول میانوالی جیسے بہترین سکولوں میں آسانی سے داخلہ مل جاتا تھا. عطا محمد شاہ میانوالی جا کر باقاعدہ اپنے طالب علموں کی خبر لیا کرتے تھے. نورنگا کے تعلیم یافتہ ہزاروں کی تعداد میں لوگ مختلف اداروں میں بہت کامیابی کے ساتھ اپنے فرائض سرانجام دے چکے ہیں اور دے رہے ہیں.

سید عطا حسین شاہ نورنگا کا سیاسی تعارف بنے. نورنگا سیاسی لحاظ سے ان کے نام سے پہچانا جاتا تھا. سماجی لحاظ سے دادا شیر علی ڈہرال، استاد ملک محمد عثمان، سید امیر محمد شاہ اور ان کے بھائی سید عاشق حسین شاہ نمبر دار، ملک غلام محمد تھیم، ملک احمد چھیلو وغیرہ وغیرہ علاقے کی پہچان میں ایک نمایاں مقام رکھتے تھے. سید دوست محمد شاہ نے بھی کئی دفعہ کونسلر کا انتخاب جیت کر اہل علاقہ کی بہت خدمت کی اور لڑکیوں کا واحد پرائمری سکول ان کی کوششوں سے ہی بنا تھا.

اس کے علاوہ سادات خاندان میں بہت سی روحانی ہستیاں بھی موجود رہیں اور لوگ ان کی کرامات سے روحانی طور پر فیض یاب ہوتے رہے. یہ ہستیاں لوگوں کے جھگڑے، قتل، طلاقوں وغیرہ کے معاملات میں بھی صلح کرا دیتے تھے اور بات کبھی تھانے کچہری تک نہیں جاتی تھی. ایک میانہ خاندان سے بھی کئی لوگ روحانی طور پر فیض یاب ہوا کرتے تھے ان کے بزرگ روحانیت کے علاوہ علاج معالجے کے لیے بہت مشہور تھے.

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Scroll to Top